ہر اک اجنبی سے پوچھیں جو پتہ تھا اپنے گھر کا

امی بتاتی ہیں کہ بچپن سے مجھے باہر گھومنے کا بہت شوق تھا۔ ہم شیخوپورہ میں واقع ایک فیکٹری کی کالونی میں رہا کرتے تھے۔ ایک چار دیواری میں وہاں کام کرنے والوں کے گھر تھے۔ ویک اینڈ پر لاہور جایا کرتے تھے۔ چڑیا گھر جاتے تھے۔ کون آئس کریم کھاتے تھے۔ جب رات گئے…

Read more

میرا رول ماڈل ”لہوڑی ڑنگباز“ شانی ہے

میری سہیلی مہوش اس بلاگ سے شاید ناخوش ہو۔ اسے یہ ذکر پسند نہیں۔ ویسے تو دعا یے کہ پڑھے ہی نہ۔ لیکن اگر پڑھ لیا تو ایک تنبیہی میسج ضرور کرے گی۔ اس کو شانی کا ذکر نہیں پسند۔ یا شاید میرا اس کے ساتھ اپنا تقابل کرنا نہیں پسند۔ کہتے ہیں کہ ہر…

Read more

سوشل میڈیا پر ایک اور کتاب کا واویلا

ہمارے ہاں کتاب پڑھنے کا رجحان ختم ہوتا جا رہا ہے۔ کسی اور کو تو کیا کہیں ہم خود بھی کتب بینی کے زیادہ قریب نہیں۔ حالانکہ ایک زمانہ وہ بھی تھا کہ چھپ چھپ کر امی کے ڈائجسٹ پڑھا کرتے تھے۔ جیسے ہی وہ سوتی تھیں دبے پاؤں ان کے کمرے میں داخل ہوئے،…

Read more

عورت کے چپ رہنے کی ریت

ہم ریتوں رواجوں کی پاسداری والے لوگ ہیں۔ یہاں کئی قسم کی رہتلیں آباد ہیں۔ لوگ نہیں کیونکہ کئی اقسام کے لوگ یا تو ہم نے مار گرائے یا مار بھگائے۔ الحمداللہ اب سب ایک ہی جیسے ہیں۔ ریت رواج بھی بس دیکھنے میں مختلف ہیں۔ اندر سے وہ بھی ایک ہی ہیں۔ خیر جس…

Read more

محبت کی زبان ممتاز ہے ساری زبانوں سے

 یہ اپنی نوعیت کا پہلا بلاگ نہیں ہے۔ نہ ہی آخری ہے۔ پہلا اس لئے نہیں کہ اس بات کی شروع دن سے فکر کی جا رہی ہے۔ آخری اس لئے نہیں کہ کون سا یہ مسئلہ حل ہو جانا ہے۔ بڑھنے کا قوی امکان ہے۔ گھٹنے کا۔۔۔ چلئے جانے دیجئے۔ پھر ہم ہی پر…

Read more

یوم تکبیر اور تھرل کی چاہ

میرا بچپن آزاد کشمیر کے برطانوی شہر میرپور میں گزرا ہے۔ اب کا پتہ نہیں لیکن آج سے قریب بیس برس پہلے حالات بڑے اچھے تھے۔ برطانوی اس لئے کہا کہ میرپور کے ہر گھر کا کوئی نہ کوئی فرد ولایت میں مقیم ہے۔ بعض گھروں کی تو پوری پوری نسلیں وہاں ہیں۔ ہر گھر…

Read more

اسلام کو امن کا دین رہنے دیجئے

آج کا بلاگ لکھتے ہوئے بہت ڈر لگ رہا ہے۔ پرسوں سے سوچ رہی ہوں کہ لکھوں یا نہیں۔ ہمیں پڑھنے والے اس بات سے بخوبی آشنا ہیں کہ ہم زیادہ سوچنے سمجھنے کے قائل ہیں نہیں۔ لیکن کیا کیجئے کہ جان چیز ہی ایسی ہے۔ باوجود اس کے کہ دنیا دل لگانے کی جگہ…

Read more

بیرون ملک کاروبار کرنا ناجائز ہے

سوچا تھا رمضان کا مہینہ ہے۔ عبادات اور اذکار میں دھیان بٹائیں۔ لکھنے پڑھنے جیسے لغو شوق سے دور ہی رہیں۔ لیکن چور چوری سے جا سکتا ہے۔ ہیرا پھیری سے نہیں۔ ہم سے بھی رہا نہیں گیا۔ آ گئے ہیں واپس آپ کی مجلس میں اپنی حاضری لگانے۔ اچھا لگے یا برا ہماری بلا…

Read more

ایک لفافہ بلاگر کی دکھ بیتی!

پتہ نہیں ان مذمتی بلاگوں کی آمد سے میری جان اور پڑھنے سے آپ کی جان کب چھٹے گی۔ اہل کرم کا تماشا نہیں مکنا اور نہ ہمارے لوح و قلم کی پرورش۔ بہت سوچا تھا کہ آج کچھ پکوڑوں کے فوائد پر لکھیں گے کہ روزوں کے ساتھ وہ بھی تو فرض کئے گئے…

Read more

ہیری میاں کا ولیمہ اور ٹیکس کا جنازہ

شادی کا کھانا تمام پاکستانیوں کا پسندیدہ کھانا ہے اور ”روٹی کھل گئی“ ہمارا قومی نعرہ جو ایسا ولولہ بیدار کرتا ہے جو شاید  مادام نور جہاں کی آواز میں پینسٹھ کی جنگ کے ترانے بھی نہ کر پائیں۔ ہر مرد و زن، بچہ بوڑھا اس للکار پر لبیک کہتے ہوئے ایک دوسرے پر سبقت لے…

Read more