انتون چیخوف کا افسانہ: “دکھ”

پہاڑوں سے گھرے اس گاؤں سے جہاں باکو رہتا تھا بڑے شہر کا فاصلہ پچاس کلو میٹر تھا۔ باکو ایک ترکھان تھا، خراد کی مشین اس کی زندگی کا محور تھی، اسے اپنی خراد اور اپنے ہنر پر بڑا فخر تھا۔ وہ اس خراد پر لکڑی کی خوبصورت چیزیں ایسی مہارت سے بناتا کہ دور…

Read more

بدیسی ادب: ماچس والی لڑکی

بلا کی سردی تھی۔ برف تھی کہ تھمنے کا نام ہی نہیں لے رہی تھی۔ شام اندھیری ہونی شروع ہو گ ئی تھی۔ بالآخر رات پڑ گیٔ۔ سال کی آخری رات۔ ایک چھوٹی سی غریب بچی، ننگے سر، ننگے پاؤں گلیوں میں پھر رہی تھی۔ جب وہ گھر سے نکلی تھی تو اس کے پاؤں…

Read more

عدالتوں پر مقدمات کا بھاری بوجھ اور تنازعات کا متبادل حل

پاکستان میں نیا عدالتی سال حال ہی میں شروع ہوا ہے۔ لاء اینڈ جسٹس کمیشن کے اعداد و شمار کے مطابق اس وقت ملک کی عدالتوں میں تقریباً بیس لاکھ کیسز زیر التوا ہیں۔ ان کیسز کے حل نہ ہونے کی بہت سی وجوہات ہیں۔ کرپشن، بد انتظامی اور نا اہلی تو اظہر من الشمس…

Read more

بدیسی ادب: چیخوف کا وانکا

بیچارہ وانکا صرف نو سال کا تھا جب وہ یتیم ہو گیا تھا۔ ماں باپ کے مرنے پر اس کے دادا نے کچھ عرصہ تو اسے اپنے ساتھ رکھا لیکن بعد میں اس کو ماسکو بھیج دیا جہاں وہ ایک موچی کے پاس شاگردی کر رہا تھا۔ اگرچہ پیسے تونہیں ملتے تھے لیکن موچی اور…

Read more

بدیسی ادب: کیٹ شوپن کا معصوم

دن خوشگوار تھا۔ مادام نے کوچوان کو بگھی تیار کرنے کا حکم دیا تاکہ وہ روشیل سے مل لیں مادام یہ سوچ کر مسکرا رہی تھیں کہ روشیل جو کل تک خود ایک ننھی سی بچی تھی آج ایک بیٹے کی ماں ہے۔ مادام کو وہ دن یاد آیا جب صاحب کی بگھی حویلی میں…

Read more

ڈاکیہ: انتون چیخوف کی کہانی

رات بہت بیت چکی تھی۔ تین بج رہے تھے۔ ڈاکیہ اپنی علی الصبح ڈیوٹی پر جانے کی تیاری تقریباٌ مکمل کر چکا تھا۔ اپنی وردی کے اوپر گرم اوور کوٹ چڑھایا ہوا تھا۔ سر پر ڈاکخانے کی مہر لگی ٹوپی پہنےوہ منتظر تھا کہ ڈرائیور ڈاک کے سب تھیلے تین گھوڑوں والی گاڑی میں لاد…

Read more

کانٹے والا

چارلس ڈکنز 7 فروری 1812ء کو لینڈ پورٹ برطانیہ میں پیدا ہوا۔ بچپن میں نامساعد حالات سے گزرا۔ جس کی جھلک اس کے ناول اولیور ٹوسٹ اور ڈیوڈ کاپر فیلڈ میں ملتی ہے۔ عملی زندگی کا آغاز ایک وکیل کے منشی کی حیثیت سے کیا۔ بعد ازاں شارٹ ہینڈ سیکھ لی اور ایک اخبار کا…

Read more

پاکستان میں خواتین کی جنسی ہراسانی کا خاتمہ۔  خواب یا حقیقت؟

کیا پاکستان سےخواتین کی جنسی ہراسانی ختم ہو سکتی ہے؟ ایک لفظ میں اس کا جواب ہے ”نہیں“۔ یہ ایک لفظ کا جواب اس لئے کہ پاکستان ہی میں نہیں دنیا کے کسی بھی ملک میں، ہہت سنجیدہ کوششوں کے باجود، جنسی ہراسانی کا مکمل سد باب نہیں ہو سکا۔ اس کی ایک سیدھی سادھی…

Read more

کیا اردگان پاکستان کے لیے ماڈل بن سکتے ہیں؟

ترکی کے حالیہ انتخابات میں رجب طیب اردگان کی غیر متوقعہ اکثریت سے کامیابی پر پاکستان کے بہہت سے سیاسی، مذہبی اور صحافتی حلقوں میں خوشی کے شادیانے بج رہے ہیں۔ ان کی فتح کو عالم اسلام اور جمہوریت کی فتح قرارا دیا جا رہا ہے۔ اور ان کی شخصیت کو ایک مثالی مسلمان حکمران…

Read more

ملانیہ ٹرمپ کو کسی کی پروا نہیں، آخر کیوں؟

پاکستان کے کسی بھی ٹیلیوژن چینل کے سیاسی پروگرام کو دیکھیں تو پینلز کے ممبران میں، جن کو اگر عقل کل ہونے کا دعوی نہ بھی ہو غلط فہمی ضرور ہوتی ہے، بہت کم اتفاق رائے دیکھنے یا سننے میں آتا ہے۔ لیکن ایک فقرہ جس کے بغیر کوئی پروگرام مکمل نہیں ہوتا اور جسے…

Read more