آدھے درجن ملک مل کر بھی قطر کو کیوں نہیں جھکا پائے؟

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

قطر، سعودی عرب

Getty Images

ایک طاقتور ہمسایہ ملک سعودی عرب کی قطر کو جزیرہ بنا دینے کی دھمکی، پوری طرح سے معاشی ناکہ بندی کے ساتھ ساتھ فضائی حدود پر بھی مکمل پابندی کے باوجود قطر کمزور کیوں نہیں پڑا؟ اور سعودی عرب کی کوئی بھی حکمت عملی قطر کو جھکا کیوں نہیں پائی؟

اس دوران قطر نے نہ صرف اس دباؤ کا مقابلہ کیا بلکہ اس نے اپنا انسانی حقوق کا ریکارڈ بھی بہتر کیا۔ 25 لاکھ کی آبادی والے اس چھوٹے سے ملک نے تیل پیدا کرنے والے ممالک کی تنظیم اوپیک سے نکلنے کا اعلان کر کے سعودی عرب کو بیک فُٹ پر کھڑا کر دیا ہے۔

قطر کے خلاف سعودی عرب کی سربراہی میں آدھے درجن ملک ہیں پھر بھی یہ اتحاد قطر کو جھکانے میں ناکام رہا۔ فوربز کے مطابق قطر کے زر مبادلہ کے ذخائر 2.9 ارب ڈالر سے 17 ارب ڈالر تک پہنچ گئے ہیں۔

قطر ایک چھوٹا سا ملک ہے جس کی 25 لاکھ آبادی میں سے نوے فیصد تارکین وطن ہیں۔

یہ وہ ملک ہے جس پر اس کے ہمسایہ اور طاقتور ملک سعودی عرب اور اس کے اتحادی ممالک نے، جن میں بحرین، مصر اور متحدہ عرب امارات شامل ہیں، اقتصادی اور سفارتی پابندیاں لگا رکھی ہیں۔

18 ماہ گزر جانے کے بعد بھی فی الحال کسی حل کی کوئی امید نظر نہیں آ رہی۔

پیر کو قطر نے اوپیک سے الگ ہونے کا اعلان کیا تھا اور اب کہا جا رہا ہے کہ شاید وہ خلیجی ممالک میں تعاون کی تنظیم گلف کوآپریشن کونسل (جی سی سی) سے بھی الگ ہو سکتا ہے۔

خلیجی ممالک پر نظر رکھنے والے تجزیہ کاروں کے مطابق قطر اگر ایسا کرتا ہے تو اس کو قابو کرنے کی تمام کوششوں میں لگے سعودی عرب کو نہ صرف الجھن ہوگی بلکہ اس سے وہ خاصا پریشان بھی ہوگا۔

یہ بھی پڑھیے

بات چیت کے لیے انھیں پابندیاں ہٹانی ہوں گی: قطر

سعودی عرب نہر کھود کر قطر کو جزیرہ بنا دے گا

14 ہزار گائیں قطر کا ہوائی سفر کریں گی

تامیم بن حماد الثانی

Getty Images
2013 میں تامیم بن حماد الثانی نے اقتدار سنبھالا

جی سی سی ممالک میں قطر پر اقتصادی پابندیاں لگانے والے دو ممالک، سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات بڑے پلیئر ہیں۔

جی سی سی اب تک قطر کے مسئلے کو حل کرنے میں ناکام رہی ہے۔

سعودی قطر تعلقات کیوں ٹوٹے؟

کئی مبصرین کا خیال ہے کہ 2017 میں سعودی عرب سمیت چھ ممالک کے ساتھ، جن میں مصر، بحرین، یمن، لیبیا اور متحدہ عرب امارات شامل ہیں، قطر کے سفارتی تعلقات ٹوٹنے کے پیچھے علاقائی اور تاریخی وجوہات تھیں۔

دراصل قطر 55 سال تک برطانوی حکمرانی کے بعد 1971 میں آزاد ملک کے طور پر سامنے آیا۔ اس سے پہلے وہ متحدہ عرب امارات کا حصہ بننے سے انکار کر چکا تھا۔

اس کے بعد سے ہی قطر پر سخت گیر گروہوں کی حمایت کے الزامات لگتے رہے جن سے وہ انکار کرتا رہا۔

یہاں 19 ویں صدی سے ہی الثانی خاندان کی حکمرانی ہے۔ امیر شیخ تمیم بن حماد الثانی نے 2013 میں اپنے والد شیخ حماد بن خلیفہ الثانی کے عہدہ چھوڑنے کے بعد اقتدار سنبھالا تھا۔

خلیجی ممالک کے ساتھ کشیدگی

محمد مرسی

AFP
حماس رہنما خالد مشال کے ساتھ محمد مرسی

قطر اور دیگر خلیجی ممالک کے درمیان کشیدگی کا آغاز تب ہوا جب مصر میں صدر محمد مرسی کو فوج نے 2013 میں عہدے سے ہٹا دیا تھا۔

سعودی سرکاری میڈیا میں کئی بار مصر کے اخوان المسلمین کے لیے قطر کی مبینہ حمایت کے بارے میں تشویش کی خبریں آتی رہی ہیں۔

محمد مرسی حزب اللہ کے رکن تھے جسے کئی ممالک انتہا پسند تنظیم تصور کرتے ہیں۔ مارچ 2014 میں سعودی عرب، بحرین اور متحدہ عرب امارات نے قطر پر ان کے اندرونی معاملات میں دخل اندازی کا الزام لگاتے ہوئے اپنی سفیر واپس بلا لیے تھے۔

مصر نے اس سے پہلے الجزیرہ پر انتہا پسندی کو فروغ دینے اور جعلی خبریں بنانے کا الزام لگایا تھا۔

قطر: تیل، گیس کی طاقت

الثانی خاندان

Getty Images
الثانی خاندان پچھلے 150 سال سے قطر پر حکومت کر رہا ہے

ایران اور روس کے بعد قطر قدرتی گیس پیدا کرنے والا دنیا کا تیسرا بڑا ملک ہے۔ اس کے ساتھ ہی اس کے پاس پیٹرولیم کے بھی وسیع ذخائر ہیں۔

بےشک سعودی عرب نے قطر پر اقتصادی اور سفارتی پابندیاں لگا رکھی ہیں لیکن اس کے باوجود عرب ممالک میں اس کی طاقت بےشمار ہے۔

تیل اور گیس سے ملنے والی بیشمار رقم سے قطر دنیا بھر میں سرمایہ کاری کرتا ہے۔ نیو یارک کی ایمپائر سٹیٹ بلڈنگ، لندن کے سب سے اونچے ٹاور دی شارڈ، اوبر اور لندن کے ڈیپارٹمنٹ سٹور ہیرڈس میں قطر کے سلطان کی بڑی حصہ داری ہے۔

اس کے علاوہ دنیا کی کئی بڑی کمپنیوں میں قطر کی حصہ داری ہے۔

سفارتی مضبوطی

اگر بین الاقوامی سطح پر قطر کی سفارتی طاقت کی بات کی جائے تو سوڈان کے دارفور میں ہونے والی امن کی کوششوں میں اس نے ثالث کا کردار ادا کیا تھا اور فلسطینی گروہوں کے درمیان بیچ بچاؤ بھی کرتا رہا ہے۔

افغان حکام اور طالبان کے درمیان امن مزاکرات میں بھی قطر ثالث کے طور پر شامل رہا ہے۔

الجزیرہ بھی قطر کا ہی ٹی وی نیٹورک ہے جس نے عرب دنیا میں خبریں پہنچانے کے طریقے کو کافی تبدیل کیا۔ اس کی وجہ سے دنیا بھر میں اس نے اپنی ایک جگہ بنائی۔

قطر ائیرویز

AFP

قطر ائیر ویز کو آج دنیا کی بہترین ائیر لائنز میں شمار کیا جاتا ہے اور 2022 کا فٹبال عالمی کپ قطر میں ہی منعقد ہوگا۔

وہ عرب دنیا کا ایسا پہلا ملک ہے جو اس ٹورنامنٹ کی میزبانی کر رہا ہے۔ حالانکہ اس کی تیاری میں غیر ملکی مزدوروں کے ساتھ ہونے والے نامناسب سلوک کی خبریں بھی میڈیا پر آتی رہتی ہیں۔

اقتصادی مضبوطی

قطر

Reuters

سعودی عرب کی پابندیوں کے ایک ماہ بعد قطر کے وزیر خزانہ علی شریف ال ایمادی نے کہا تھا کہ ان کے ملک کی خوشحالی اور دولت پڑوسیوں کو راس نہیں آتی۔

قطر کی خوش حالی کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ ورلڈ بینک کے مطابق قطر فی شخص جی ڈی پی کے لحاظ سے دنیا میں پہلے نمبر پر ہے۔ کئی ماہرین کا کہنا ہے کہ قطر ان پابندیوں کی وجہ سے اور مضبوط ہوا ہے، کیونکہ اس نے اپنی پوری توجہ بین الاقوامی سرمایہ کاری پر لگائی ہے۔

سعودی عرب کو امریکہ کی حمایت

دوسری جانب استنبول میں مقیم سعودی قونصل خانے میں 2 اکتوبر کو صحافی جمال خاشقجی کے قتل کے بعد سعودی عرب پر نہ صرف بین الاقوامی سطح پر تنقید کی جا رہی ہے بلکہ ہر پلیٹ فارم پر اس کا ساتھ دینے والی ٹرمپ انتظامیہ پر بھی اندرونی دباؤ بڑھتا جا رہا ہے۔

حالانکہ اس سب کے باوجود صدر ٹرمپ نے اپنے بیان میں ایران کے خلاف امریکی لڑائی میں سعودی عرب کو اہم اتحادی مانا ہے۔ اس کی وجہ سعودی عرب میں دنیا کے مجموعی تیل کے ذخائر کا 18 فیصد موجود ہونا، امریکہ میں بڑی سرمایہ کاری اور اس کا امریکہ ہتھیاروں کا بڑا خریدار ہونا ہے۔

سعودی عرب مشرق وسطیٰ کے کسی بھی ملک سے زیادہ ہتھیار خریدتا ہے۔ وہ دنیا میں فروخت ہونے والے کل ہتھیاروں کے تقریباً دسویں حصے کا خریدار ہے۔

خاشقجی کے قتل کے بعد سے پچھلے کچھ دنوں میں امریکی صدر ٹرمپ پر ولی عہد محمد بن سلمان سے دوریاں پیدا کرنے کا دباؤ ضرور ہے لیکن یہ واضح ہے کہ ان کا سعودی عرب سے پیار سعودی کے کروڑوں ڈالر کی سرمایہ کاری کی وجہ سے ہے۔

ٹرمپ انتظانیہ کا ردعمل اس صورت حال کو مزید بگاڑ سکتا ہے۔ مبصرین کو خدشہ ہے کہ کہیں قطر-سعودی کشیدگی قطر- امریکہ کشیدگی میں تبدیل نہ ہو جائے۔

اگر ایسا ہوتا ہے تو قطر میں 10 ہزار امریکی فوجیوں والی فوجی بیس کا کیا ہوگا؟

اتنا ہی نہیں امریکہ کے کہنے پر جن اسلامی گروہوں کے ساتھ قطر ثالثی کرتا رہا ہے ان کا کیا ہوگا؟ ساتھ ہی اس خطے کے دیگر ممالک کو بھی اس سے یہ پیغام ملے گا کہ اگر سعودی عرب کا مقابلہ کیا تو ان کے ساتھ قطر جیسا سلوک ہوگا۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 7569 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp