‘میں نے وزیرستان میں کیا دیکھا’

رفعت اللہ اورکزئئ - بی بی سی اردو ڈاٹ کام، میرانشاہ

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

وزیرستان

BBC

پاکستان کے صوبے خیبر پختونخوا کے قبائلی ضلع شمالی وزیرستان میں فوجی کارروائیوں کے بعد معاملات زندگی کافی حد تک بحال ہوچکی ہے لیکن علاقے میں حالیہ دنوں میں ہدف بناکر قتل کے واقعات میں اضافے نے پھر سے وزیرستانیوں کو تشویش میں مبتلا کر دیا ہے۔

گذشتہ روز بی بی سی کی ایک ٹیم کے ہمراہ جب بنوں سے وزیرستان کے لیے روانہ ہوئے تو سب سے پہلے ہم سیدگئی چیک پوسٹ پہنچے جہاں سے شمالی وزیرستان کی حدود کا آغاز ہوتا ہے۔

یہ وہ مقام ہے جہاں کبھی وزیرستان جانے کے لیے قبائل کو گھنٹوں انتظار کرنا پڑتا تھا اور مقامی افراد یہاں فرائض سرانجام دینے والے سکیورٹی اہلکاوں کے رویے سے بھی کافی نالاں ہوا کرتے تھے۔

چارسال بعد شمالی وزیرستان جانے کی اجازت

’فیلڈ میں کارروائی کر کے دل کو اطمینان ہوتا ہے‘

کیا وزیرستان ایک بار پھر شدت پسندی کی راہ پر؟

اس چیک پوسٹ پر پہلے طریقہ کار یہ ہوتا تھا کہ یہاں باقاعدہ اجازت نامہ جاری کیا جاتا تھا یا بعض اوقات یہ بھی ہوتا تھا کہ ناموں کے اندراج کے بعد وزیرستان جانے والے افراد کو اس دن واپس کرکے دوسرے دن آنے کا کہا جاتا تھا۔

وزیرستان

BBC

سیدگئی چیک پوسٹ سے صرف وہ افراد گزر سکتے تھے جن کا پہلے سے اندراج ہوچکا ہوتا یا جن کا تعلق وزیرستان سے ہوا کرتا تھا، اس کے علاوہ پاکستان کے کسی شہری کو یہاں سے آگے جانے کی اجازت حاصل نہیں تھی۔

اس طرح شدت پسندی اور جنگ کے مارے ہوئے وزیرستانیوں کو اس قسم کے مسائل سے بار بار گزرنا پڑتا تھا جبکہ ان پابندیوں کی وجہ سے وزیرستان تقریباً چار سالوں تک ملک کے دیگر حصوں سے بھی کٹا رہا۔

لیکن چیک پوسٹوں پر نرمی کے حالیہ اعلان کے بعد آج یہاں صورتحال بالکل مختلف نظر آئی۔ چیک پوسٹ پر موجود اہلکاروں نے ہم سے قومی شناختی کارڈ مانگا اور ناموں کے اندراج کے بعد ہمیں ایک پرچی تھما دی گئی جس میں ہماری گاڑی کا نمبر اور اس میں سوار تمام افراد کے کوائف درج تھے۔

وزیرستان

BBC

چیک پوسٹ سے ذرا آگے ایک اور سکیورٹی اہلکار نظر آئے جس نے ہم سے وہ پرچی لے کر ہمیں آگے جانے کا اشارہ کیا اور اس طرح ہم وزیرستان کی حدود میں داخل ہونے کے بعد صدر مقام میرانشاہ کی جانب روانہ ہوئے۔

وزیرستان

BBC

سیدگئی سے میرانشاہ تقریباً 50 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے لیکن پکی اور کشادہ سڑکوں کی وجہ سے ہم بغیر کسی روکاوٹ کے باآسانی وہاں پہنچ گئے۔ راستے میں میرانشاہ تک ہم تقریباً پانچ یا چھ چیک پوسٹوں سے گزرے ہوں گے جس میں سکیورٹی فورسز کی چیک پوسٹیں بھی تھیں اور ضلعی انتظامیہ کے ناکے بھی، لیکن ہم ہر چیک پوسٹ کے قریب پہنچ کر گاڑی کی رفتار کم کر دیتے کہ شاید ہماری تلاشی لی جائے گی لیکن روکنے سے پہلے ہی ہمیں آگے جانے کا اشارہ کیا جاتا اور اس طرح بغیر روکاٹ کے ہمارا سفر میرانشاہ پہنچ کر تمام ہوا۔

آپریشن ضرب عضب کے بعد مجھے شمالی وزیرستان جانے کا دو مرتبہ اتفاق ہوا لیکن دونوں بار ہم سکیورٹی فورسز کے ہمراہ گئے جس سے یہ اندازہ کرنا مشکل تھا کہ وہاں لوگ کس قسم کے مسائل سے دوچار ہیں۔

وزیرستان

BBC

لیکن آج پہلی مرتبہ ہم ایسی حالت میں وزیرستان جارہے تھے جب ہمیں کسی سرکاری اہلکار کی مدد حاصل تھی اور نہ کوئی خوف کی کیفیت تھی۔

شمالی وزیرستان کے سب سے بڑے تجارتی مرکز میرانشاہ جب پہنچے تو وہاں ہر جانب بازاروں میں رونق اور گہما گہمی نظر آئی۔ میرانشاہ میں آپریشن ضرب عضب کے دوران ہزاروں دوکانیں تباہ ہوئیں جبکہ بمباری کی وجہ سے بنیادی ڈھانچہ بھی بری طرح متاثر ہوا۔ لیکن اب علاقے میں تباہ شدہ مقامات پر نئی مارکیٹیں تعمیر کی گئیں ہیں جہاں کاروبار تو ہو رہا ہے لیکن سرمایہ نہ ہونے کی وجہ سے تجارتی سرگرمیاں مندی کا شکار نظر آتی ہے۔

وہاں نو تعمیر شدہ دکانوں کی ملکیت بھی کچھ عرصے سے ایک بڑا مسئلہ بنا ہوا ہے جہاں کئی افراد نے اس کی شکایت بھی کی۔

شمالی وزیرستان کے ایک سینیئر صحافی احسان داوڑ کا کہنا ہے کہ آپریشنز اور نقل مکانی کی وجہ سے بیشتر بڑے تاجروں نے اپنا سرمایہ بڑے شہروں میں منتقل کردیا تھا اور نامساعد حالات کے باعث وہ یہاں واپس آنے کے لیے تیار نہیں۔ تاہم انھوں نے کہا کہ چیک پوسٹوں پر نرمیوں کے اعلان کے بعد اب توقع کی جا رہی ہے کہ علاقے میں پھر سے تجارتی سرگرمیاں بحال ہونے کا امکان ہے۔

انھوں نے کہا کہ علاقے میں ایک مثالی امن تو قائم ہے لیکن دوسری طرف بنیادی ڈھانچہ اور بنیادی ضرویات تباہ حالی کا شکار ہیں۔

وزیرستان

BBC

میرانشاہ پریس کلب میں موجود ایک اور سینیئر صحافی حاجی مجتبیٰ نے کہا کہ جب 24 گھنٹوں میں صرف دو گھنٹے بجلی دستیاب ہو تو ایسے میں اپنے علاقوں کو واپس آنے والے افراد کیسے یہاں رہ سکیں گے اور ایسی صورتحال دیگر بنیادی ضروریات کی بھی ہے۔

وزیرستان میں آپریشن ضرب عضب کے بعد امن و امان کی صورتحال کافی حد تک بہتر ہوگئی تھی۔ تاہم حالیہ کچھ مہینوں میں وہاں ٹارگٹ کلنگ کے واقعات میں ایک مرتبہ پھر سے اضافہ ہورہا تھا جس میں اب کسی حد تک پھر سے کمی تو آگئی ہے لیکن مقامی باشندوں کے مطابق یہ واقعات مکمل طور پر ختم نہیں ہوسکے ہیں جس سے وزیرستانی پھر سے تشویش کا شکار نظر آتے ہیں۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 7562 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp