ایران میں سیلاب: امریکی معاشی پابندیوں کے باعث امدادی کارروائیاں متاثر

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

ایران

AFP
ایرانی حکومت نے وعدہ کیا ہے کہ متاثرہ لوگوں خاص طور پر کسانوں کے نقصان کی تلافی کی جائے گی

سنیچر کو مزید بارشوں کی پیشن گوئی کے مدِنظر سیلاب سے متاثرہ ایران میں مزید قصبوں اور دیہاتوں سے آبادی کے انخلا کا عمل جاری ہے۔

جنوب مغربی صوبوں میں شدید بارشیں متوقع ہیں اور حکام گنجائش تک بھر جانے والے اہم ڈیموں سے پانی کے اخراج کا منصوبہ بنا رہے ہیں۔

خواتین اور بچوں کو محفوظ مقامات تک پہنچایا جانے کا عمل جاری ہے جبکہ مرد حضرات کو متاثرہ علاقوں میں رکنے اور امدادی کارروائیوں میں مدد کرنے کا کہا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

سیلاب کی تباہ کاریوں کے بعد مگرمچھوں اور سانپوں کا خطرہ

برازیل: کیچڑ کےسیلاب میں سینکڑوں افراد لاپتہ، تصاویر

’سوچا نہ تھا کہ یوں چھت سے محروم ہو جائیں گے‘

حالیہ ہفتوں میں ملک کے زیادہ تر حصے زیرِ آب آ گئے ہیں اور ہلاکتوں کی تعداد 70 تک پہنچ گئی ہے۔

ایران

Getty Images
امدادی تنظیمیں بڑے پیمانے پر پیدا ہونے والے بحران سے نمٹنے کی کوششوں میں مصروف ہیں

50 ہزار آبادی والا قصبے جیسا کہ سوسنگرڈ، خطرے میں ہیں۔ اس سے آبادی کا انخلا سنیچر کو متوقع ہے جبکہ اسی طرح خوزیستان صوبے کی پانچ اور آبادیوں کو بھی خالی کروایا جائے گا۔

گذشتہ ہفتے کے دوران اس صوبے کے 70 دیہاتوں میں آبادی کا انخلا عمل میں آیا تھا۔

تیل کے ذخائر سے بھرپور ان علاقوں میں انرجی کمپنیاں امدادی کارروائیوں میں مدد کر رہی ہیں اور پمپس کے ذریعے پانی کا اخراج کیا جا رہا ہے۔

ایران

Getty Images
سیلاب کے باعث اس وقت 86 ہزار افراد ہنگامی پناہ گاہوں میں مقیم ہیں

19 مارچ سے شدید بارشیں شروع ہوئیں تھیں جن کی وجہ سے 1900 شہر، قصبے اور دیہات متاثر ہوئے تھے۔ ہزاروں سٹرکیں، پل اور عمارتیں اس کے باعث تباہ ہوئیں ہیں۔

اس وقت 86 ہزار افراد ہنگامی پناہ گاہوں میں مقیم ہیں۔ تقریباً ایک ہزار افراد کو متاثرہ علاقوں سے ہیلی کاپٹرز کے ذریعے نکال کر محفوظ مقامات تک پہنچایا گیا ہے۔

امدادی تنظیمیں بڑے پیمانے پر پیدا ہونے والے بحران سے نمٹنے کی کوششوں میں مصروف ہیں جبکہ دوسری جانب ایران کی معاشی صورتحال امریکہ کی جانب سے توانائی اور بینکاری پر لگائی جانے والی پابندیوں کے باعث درگوں ہے۔

ایران

AFP
ایرانی صدر سیلاب سے متاثرہ علاقوں کا فضائی جائزہ لے رہے ہیں

ایرانی وزیرِ خارجہ جواد ظریف کا کہنا ہے کہ پابندیوں کی وجہ سے امدادی کارروائیاں رکاوٹوں کا شکار ہیں اور امدادی ہیلی کاپٹرز کی کمی کا بھی سامنا ہے۔

یکم اپریل کو کی جانے والی اپنی ایک ٹویٹ میں جواد ظریف کا کہنا تھا کہ ’یہ صرف معاشی جنگ نہیں بلکہ معاشی دہشت گردی ہے۔‘

ایرانی حکومت نے وعدہ کیا ہے کہ متاثرہ لوگوں خاص طور پر کسانوں کے نقصان کی تلافی کی جائے گی۔

ایران میں پاسدارانِ انقلاب کے سربراہ کا کہنا ہے کہ مسلح افواج ’اپنی تمام تک قوت‘ نقصان کو کم کرنے میں صرف کر رہی ہیں۔

کیا سیلاب جنگلات کی کٹائی کی وجہ سے ہیں؟

بی بی سی رئیلیٹی چیک کے مطابق ماحولیاتی ماہرین کا ماننا ہے کہ جنگلات کی کٹائی حالیہ برسوں میں ملک میں آنے والے سیلابوں کی ایک بڑی وجہ ہے۔

ایران کے نیچرل ریسورسیز اینڈ فورسٹری آرگنائزیشن کے مطابق بہت زیادہ اور غیر منظم جنگلات کی کٹائی نے ایران کے نصف کے قریب شمالی جنگلات کو تباہ کر دیا ہے اور یہ وہی علاقے ہیں جہاں بڑے پیمانے پر سیلاب آیا ہے۔

ان کے مطابق گذشتہ چار دہائیوں میں شمالی جنگلات پر مشتمل علاقے 3.6 ملین ہیکٹر سے کم ہو کر 1.8 ملین ہیکٹر رہ گئے ہیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 10738 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp