سندھ میں بورڈ امتحانات: ’نقل مافیا ایک سرطان ہے جو کسی کے بس میں نہیں‘

ثنا بتول - صحافی

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

پاکستان

BBC

حال ہی میں کراچی اور اندرون سندھ میں انٹرمیڈیٹ کے پیپرز سوشل میڈیا پر لیک ہونے کا معاملہ والدین، اساتذہ اور میڈیا کے درمیان زیر بحث رہا ہے۔

والدین کہتے ہیں کہ اعلیٰ تعلیمی بورڈ کے امتحانات میں نقل مافیا کی بڑھتی ہوئی بدعنوانی خطرے کی گھنٹی ہے جو اس جانب بھی توجہ دلاتی ہے کہ سندھ میں تعلیمی اور تدریسی نظام شدید بگاڑ کا شکار ہے۔

دوسری جانب سٹوڈنٹس کا کہنا ہے کہ فیس بک پہ مختلف چیٹنگ گروپس میں لیکڈ پیپرز شیئر کیے جارہے ہیں۔ انھوں نے یہ بھی بتایا کہ ایسے واٹس ایپ گروپس بھی اس وقت حرکت میں ہیں جو خاص طور پر نقل اور لیکڈ پیپرز کے لیے بنائے گئے ہیں۔

نقل مافیا ایک سرطان؟

کراچی ساؤتھ میں موجود ایک نجی کالج میں اردو کی پروفیسر کا کہنا ہے کہ نقل مافیا پاکستان کے تعلیمی نظام کے لیے ایک ایسا سرطان بن چکا ہے جس کا علاج نہ تو سندھ حکومت کے پاس ہے اور نہ ہی یہ معاملہ اعلیٰ تعلیمی بورڈز کی دسترس میں ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ اس کرپشن میں بورڈ کے اہلکار و اعلیٰ افسران، سیاسی پارٹیاں، کوچنگ سنٹرز اور پرائیوٹ سکولوں کے اساتذہ و انتظامیہ شامل ہیں۔

کراچی میں کورنگی کے علاقے میں موجود کالج میں لیکچررشپ کے فرائض انجام دینے والی ایک خاتون نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ معاملات اب کسی کے ہاتھ میں نہیں۔ ’سوشل میڈیا اور موبائل کے دور میں جہاں کسی بھی نوعیت کی خبر صیغہ راز میں رکھنے پر بڑے سے بڑے شعبوں کا اختیار نہیں، چیٹنگ مافیا سے نمٹنا ناممکن ہوگیا ہے۔‘

یہ بھی پڑھیے

الجزائر میں نقل روکنے کے لیے انٹرنیٹ سروس بند

بہار: امتحانات میں جوتوں، جرابوں پر پابندی کیوں؟

طالب علم کی جگہ خود امتحان دینے پر استاد گرفتار

پاکستان

BBC

انٹرمیڈیٹ بورڈ کے امتحانات کے شروع کے پرچے لیک ہونے کے بعد سندھ کے وزیر تعلیم سردار علی شاہ نے سندھ میں تعلیمی نظام میں بڑھتی ہوئی بدعنوانی کا نوٹس لینے کی یقین دہانی کرائی۔

اس سلسلے میں ترجمان صوبائی وزیر تعلیم سعید میمن نے بی بی سی سے بات کرتے ہوے کہا کہ سندھ بھر میں کاپی اور چیٹنگ میں ملوث 140 سے زائد افراد کو عہدوں سے معطل کردیا گیا ہے جن میں ناظم امتحانات، ہیڈ ماسٹر اور کنٹرولر شامل ہیں۔

ان کا کہنا تھا کے ان تمام افراد کی تنخواہیں روک لی گئی ہیں اور انہیں کسی بھی صورت بحال نہیں کیا جائے گا۔ انہوں نے یہ بھی کہا ہے انکوائری کمیشن کے مطابق چھ ٹیمیں تشکیل دی گئیں جنہوں نے تمام اضلاع میں نگرانی کے فرائض انجام دیے۔ کچھ علاقوں میں طلبہ موبائل فون کے ذریعے چیٹنگ کرتے ہوے پکڑے گئے جس کے نتیجے میں اس امتحانی مرکز کے تمام ٹیچرز اور نگران کو معطل کردیا گیا۔

’ہم سندھ میں 2020 تک بہتر نظام تعلیم رائج کرنے کا پورا لائحہ عمل تیار کر چکے ہیں اور پرامید ہیں کہ امتحانوں میں بدعنوانی اور کرپشن کا جلد از جلد خاتمہ کرسکیں گے۔ انہوں نے کہا اس لائحہ عمل کے مطابق میں نصاب کی تبدیلی، اوپن گراونڈ امتحانات، امتحانی مراکز پر سی سی ٹی وی کیمرے اور موبائل جیمرز کی تنصیب شامل ہے۔‘

پاکستان

BBC

نقل مافیا کے حربے

ہر سال سندھ سیکنڈری اور انٹرمیڈیٹ بورڈ کے زیر انتظام میٹرک اور انٹرمیڈیٹ کے امتحانات ہونے سے پہلے پرچہ لیک ہونے کی خبر نے معمول کی صورت اختیار کرلی ہے۔

کراچی کے ایک پرائیویٹ کالج کی پرنسپل نے بتایا کہ پرچہ امتحانی مراکز پہنچنے سے پہلے ہی سوشل میڈیا پر وائرل ہوجاتا ہے۔ ’انٹرمیڈیٹ کا 29 اپریل کو ہونے والا کیمسٹری کا پرچہ امتحان سے ایک گھنٹہ پہلے نقل مافیا نے سوشل میڈیا اور واٹس ایپ پلیٹ فارمز پر شیئر کرنا شروع کردیا تھا۔‘

انھوں نے یہ بھی بتایا کہ پرچہ سوشل میڈیا پر آتا ہے لیکن اس وقت تک طلبہ امتحانی مراکز پنہچ چکے ہوتے ہیں، تاہم کچھ طلبہ و طالبات موبائل فون کے زریعے آخری وقت میں سوالات دیکھ لیتے ہیں۔ اس کی بنیادی وجہ ان ڈیوٹی آفیسرز اور نگران امتحان ہیں جن کو امتحان سے ایک گھنٹہ پہلے پیپر فراہم کردیا جاتا ہے۔ ’امتحانی مراکز پر اس لیے موبائل فون پر پابندی ہونی چاہیے کیونکہ سوشل میڈیا نقل مافیا کا ایک طاقتور حربہ ہے۔‘

گیارہویں جماعت کی طالبعلم سائرہ کے والدین کا کہنا تھا کہ جو بچے سارا سال محنت کرتے ہیں، ان کے ساتھ بہت زیادتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم حکومت سندھ سے اپیل کرتے ہیں کہ ان افراد کے خلاف سخت کارروائی کی جائے۔‘

انٹرمیڈیٹ کامرس گروپ کی طالبہ حوریہ زیدی نے بتایا کہ سوشل میڈیا پر ایسے بہت سے اکاونٹ ہیں جن پر میٹرک اور گیارھویں جماعت کے کیمسٹری، فیزکس، مطالعہ پاکستان کے پرچے امتحان سے 50 منٹ سے ایک گھنٹہ پہلے حل شدہ جوابات کہ ساتھ پوسٹ کردیے گئے۔ ان کا کہنا تھا کہ ان کی نظر میں ایسے طلبہ بھی ہیں جن کو ان کے اساتذہ نے واٹس ایپ کے ذریعے پرچے فراہم کیے۔

سوشل میڈیا پر امتحانی پرچے لیک ہونے کہ حوالے سے ترجمان سندھ حکومت کا کہنا تھا کہ پرچے لیک ہونا سندھ بورڈ کی نااہلی کو ظاہر کرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مستقبل میں امتحانات کے عمل میں مزید سختی کی جائے گی اور امتحانات کے عمل کو بہتر بنانے کیلیے تھرڈ پارٹی سے مدد لی جائے گی جن میں آئی بی اے اور دیگر یونیورسٹیز کی انتظامیہ شامل ہوسکتی ہیں۔

کراچی ضلع وسطی میں امتحانی مرکز پر تعینات نگران امتحان نے بتایا کہ امتحانات کے دوران نقل مافیہ ایک کمرے میں نقل کرانے کے لاکھوں روپے لیتی ہے۔

یہ بھی پڑھیے

’ہائی ٹیک‘ نقل کرانے والا استاد پکڑا گیا

نقل کرتے پکڑے جانے کے بعد طالبہ کی خودکشی

امریکی استاد جسے لکھنا پڑھنا نہیں آتا تھا

پاکستان

BBC

سندھ میں نقل مافیا کیوں سرگرم ہے؟

کراچی سلطان آباد کے علاقہ میں موجود ایجوکیشن کارڈینیٹر نے بتایا کہ نقل مافیا کراچی میں اس لیے بھی سر گرم ہے کیونکہ طلبہ و طالبات کا رجحان نقل کی جانب مائل ہے۔ انھوں نے کہا کہ پہلے ان کا اسکول امتحانی مرکز بنایا جاتا تھا لیکن اے این پی اور پیپلز پارٹی کے ورکرز ہم پر دباؤ ڈالتے تھے کہ ان کے امیدواروں کو نقل کرائی جائے۔

انھوں نے کہا کہ ہم نے سیکنڈری بورڈ سے گزارش کی کہ سکول کو مرکز نہ بنایا جائے۔ ’یہاں ہر کوی پیسے دے کر اپنی سہولت کے اور مفاد کے مطابق امتحانی مرکز بنوا سکتا ہے تاکہ چیٹنگ کرائی جاسکے۔‘

پاکستان

BBC
پاکستان

BBC

ترجمان سندھ حکومت تعلیم نے سیاسی پارٹیوں کے دباؤ سے متعلق سوال کے جواب میں کہا کہ سندھ حکومت نے سب سے زیادہ سکولوں اور کالجوں پر کریک ڈاون لاڑکانہ میں کیا جو یہ ظاہر کرتا ہے کہ اگر حکومت کا کوئی بھی کارکن کسی بھی بدعنوانی میں ملوث نظر آیا تو اس کے خلاف بھی سخت کارروائی کی جائے گی۔

اساتذہ کے مطابق سندھ میں بڑھتی ہوئی نقل مافیا کی کرپشن کی ایک بڑی وجہ سندھ حکومت کی جانب سے لاپرواہی ہے۔ سندھ میں قائم ہونے والی کسی بھی حکومت نے اس مافیا سے نمٹنے کے لیے کوئی اقدامات نہیں کیے جبکہ خیبر پختونخواہ اور پنجاب کی حکومتوں نے نقل مافیا کو جڑ سے اکھاڑنا اپنی ترجیحات میں شامل کیا۔ پچھلی دہائی میں مسلم لیگ حکومت کے کچھ ممبران جب نقل کے معاملے میں ملوث پائے گئے تو ان سے استعفیٰ طلب کرلیا گیا۔

میڈیا پر پابندی

میٹرک اور نویں جماعت کے امتحانات میں چیٹنگ اور پرچے لیک ہونے کے معاملے کے بعد بورڈ آف انٹرمیڈیٹ ایجوکیشن نے کالجز میں میڈیا کوریج پر مکمل پابندی عائد کردی ہے۔

امتحانی مراکز کی صورتحال دکھانے پر بھی بورڈ کی جانب سے پابندی عائد کی گئ ہے۔

اس حوالے سے چیئرمین انٹرمیڈیٹ بورڈ انعام احمد نے بی بی سی سے بات کرتے ہوے کہا کہ ان کے نزدیک امتحان دینے والے بچے بچیوں کی اجازت کے بغیر انکی تصاویر اخباروں اور چینلز پر شائع کرنا ایک غیراخلاقی اور غیر قانونی عمل ہے۔

ان کا کہنا تھا بورڈ کی امتحان کی نگرانی کرنے والی ٹیمز کو اکثر امتحانات کے دوران طلبہ کی جانب سے نقل کی اجازت نہ دینے پر دھمکیاں ملتی ہیں، ہم اس کی درخواست پولیس اسٹیشن میں جمع بھی کراتے ہیں لیکن کبھی کوئی مثبت جواب نہیں ملتا۔

چیئرمین بورڈ نے بتایا ’کراچی میں امتحانات کا عمل پر امن طریقے سے جاری ہے، امتحان کی کاپیاں 9 بجے سینٹرز پر پہنچا دی جاتی ہیں جسکے بعد ان کو گن کر 50 اور 100 کے سیٹ بنائے جاتے ہیں۔ زیادہ تر پیپر سوشل میڈیا پر 9 بجے ہی لیک ہوتے ہیں جس میں بورڈ کا عمل دخل نہیں۔ اگر کوئی کہے کہ پیپر ایک گھنٹہ پہلے لیک ہوا ہے تو وہ غلط بیانی سے کام لے رہے ہیں۔‘

پاکستان

BBC

انھوں نے یہ بھی کہا کہ امتحانی کمرے میں موبائل فون کے استعمال پر سخت پابندی ہے اور جو لوگ ان افواہوں کو پھیلا رہے ہیں ان کے اپنے مقاصد ہیں اور ان میں سے ایک مقصد بورڈ کو بدنام کرنا ہے۔

انھوں نے بتایا کہ سوشل میڈیا پر ان تمام افراد کا ڈیٹا بورڈ نے جمع کرلیا ہے جو پرچوں کی آدھا گھنٹہ پہلے کی گئ لیکیج میں ملوث ہیں اور جلد ان پر سائبر کرائم کے قوانین کے تحت کاروائی کی درخوست جمع کرائی جائے گی۔

بورڈ آف سیکنڈری ایجوکیشن کے مطابق اس سال 215800 امیدوار امتحانات میں بیٹھیں گے۔ ان امتحانات کے لیے کراچی میں 188 سینٹرز بنائے گئے ہیں جن میں سے 59 حساس قرار دئے گئے ہیں۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 8752 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

––>