داعش کے سربراہ ابوبکر البغدادی کو پکڑنا اتنا مشکل کیوں ہے؟

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بغدادی

AFP
پانچ برس بعد بغدادی کی کوئی ویڈیو سامنے آئی ہے

ابوبکر البغدادی، نام نہاد دولت اسلامیہ کے مفرور ’خلیفہ‘ دنیا کے مطلوب ترین شخص ہیں اور امریکہ کی حکومت نے ان کے سر کی قیمت دو کروڑ 50 لاکھ ڈالر رکھی ہے۔

وہ تین سال سے زیادہ عرصے سے گرفتاری سے بچ رہے ہیں اور اپنی حفاظت کا خاص خیال رکھتے ہیں۔ آج تک وہ صرف ایک دفعہ نظر آئے ہیں جب سنہ 2014 میں انھوں نے موصل میں ایک خطبے میں اپنی ’خلافت‘ کا اعلان کیا تھا۔

رواں ہفتے ابوبکر البغدادی ایک بار پھر نظر آئے۔ ان کی 18 منٹ لمبی ویڈیو انٹرنیٹ پر سامنے آئی ہے جس میں وہ اپنے حامیوں کی حوصلہ افزائی کرتے نظر آرہے ہیں لیکن اس ویڈیوں میں بھی حسب توقع ان کے موجودہ پتے کا کوئی سراغ نہیں۔

یہ بھی پڑھیے۔

پانچ سال بعد دولتِ اسلامیہ کے رہنما کی ویڈیو منظرعام پر

’موصل سے پسپائی اختیار نہ کریں‘

عراقی افواج کی دولت اسلامیہ کے گڑھ کی طرف پیش قدمی

تو اس وقت وہ کہاں ہیں، ان کی کھوج کس طرح لگائی جا رہی ہے، اور امریکہ اور اس کے اتحادی اپنی پیچیدہ اور جدید ٹیکنالوجی کا استعمال کر کے ابھی تک انھیں کیوں نہیں ڈھونڈ سکے؟

اطلاعات کے مطابق تین نومبر سنہ 2016 میں بغدادی نے ایک ایسی غلطی کر دی تھی جس کی وجہ سے وہ اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھنے والے تھے۔

یہ اس وقت کی بات ہے جب عراق کے دوسرے سب سے بڑے شہر موصل پر قبضے کے لیے لڑائی جاری تھی اور امریکہ کی رہنمائی میں اتحادی افواج دولت اسلامیہ کو پیچھے دھکیل رہی تھی۔

ابوبکر البغدادی نے شہر سے باہر کسی جگہ سے اپنے حامیوں کی حوصلہ افزائی کے لیے ایک 45 سیکنڈ کی ریڈیو کال کی جس کو اتحادی افواج کے جاسوس جہازوں نے ریکارڈ کر لیا۔ آواز کو ابوبکر البغدادی کی آواز سے ملایا گیا اور تصدیق کے بعد فوری کاروائی کی گئی۔

اس وقت تک دولت اسلامیہ کے لیڈر کے محافظوں نے انھیں وہاں سے نکال لیا تھا اور یقیناً گزارش بھی کی ہوگی کہ وہ دوبارہ کبھی براہ راست ریڈیو کا استعمال نہ کریں۔

ابوبکر البغدادی

AFP
ابوبکر البغدادی نئی ویڈیو میں نظر آ رہے ہیں

سنہ 2001 میں 9/11 کے واقعے کے بعد اور دو مئی 2011 تک جب امریکہ کے نیوی سیلز نے پاکستان کے شہر آیبٹ آباد میں اپنی کاروائی کی، امریکہ کے حساس اداروں کو اسامہ بن لادن کو دھونڈنے اور مارنے میں تقریباً 10 سال لگے۔

امریکہ کی قومی سکیورٹی ایجنسی (این ایس اے) اور برطانیہ کی ایجنسی ’جی سی ایچ کیو‘ دنیا کے گرد سگنلز انٹیلیجنس جو ’سیگ انٹ‘ کہلاتی ہے، نگرانی، مداخلت اور ظاہر اور خفیہ بات چیت کو ڈیکوڈ کرنے میں مہارت رکھتی ہے۔

پرانے زمانے میں مطلوب دہشتگرد بعض اوقات اپنے موبائل فون کے استعمال یا ایک ہی جگہ پر دیر تک انٹرنیٹ پر رہنے کی وجہ سے اپنا لوکیشن ظاہر کر دیتے تھے۔

اس معاملے میں بن لادن کافی عقلمند تھے اور کافی حد تک بغدادی بھی ایسے ہی ہیں۔

القائدہ کے رہنما کو آخر کار ایبٹ آباد کے کمپاؤنڈ میں ڈھونڈ لیا گیا اور ایسا ان کے کسی ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کو براہ راست استعمال کرنے سے نہیں ہوا، بلکہ ان کا سراغ ان کے قاصد کی وجہ سے لگا جو اپنے ہاتھوں سے ان کے پروپگینڈا ویڈیوز اور پیغامات اس مقام تک پہنچاتے تھے جہاں سے ان کو انٹرٹیٹ پر اپ لوڈ کیا جاتا تھا۔

ابوبکر البغدادی

Getty Images
عراق میں امریکی افواج کے حملے کے بعد انھوں نے امریکہ کے زیر انتظام نظربندی کیمپ میں کچھ وقت گزارا

بغدادی کی انٹرنیٹ پر ویڈیو شائع ہونے کے بعد یقیناً امریکہ کی انٹیلیجنس نے دوبارہ وہی کرنے کی کوشش کی ہوگی جس سے بن لادن پکڑے گئے تھے لیکن بغدادی کے محافظ اتنے عقلمند اور محتاط ہوں گے کہ وہ ایسی غلطی نہ کریں۔

ان کے ساتھ چند قریبی معتمد ساتھی ہوں گے اور وہ مسلسل ایک جگہ سے دوسری جگہ منتقل ہو رہے ہوں گے۔

’بہترین حفاظتی نظام‘

ابوبکر البغدادی سنہ 1971 میں عراق کے شہر سامرا میں پیدا ہوئے اور ان کا اصلی نام ابراہیم اودہ البدری ہے۔

وہ ابتدا سے ہی کافی مذہبی تھے اور سنہ 2004 میں عراق میں امریکی افواج کے حملے کے بعد انھوں نے امریکہ کے زیر انتظام نظربندی کیمپ، ’کیمپ بوکا‘ میں کچھ وقت گزارا۔ وہاں انھوں نے دوسرے قیدیوں بشمول عراق کے حساس اداروں کے سابق اہلکاروں کے ساتھ اتحاد بنایا۔

لندن کے رائل یونائٹڈ سروسز انسٹیٹیوٹ میں مشرق وسطیٰ کے معاملات کے ماہر مائکل سٹیفن کہتے ہیں کہ ’انھوں نے صدام کے سابق انٹیلیجنس اہلکاروں سے کام کیسے کیا جاتا ہے سیکھا۔‘

انھوں نے مزید کہا کہ ’ان کی داخلی حفاظت کا نظام زبردست ہے اس کی کچھ وجہ ان کے ذہنی اختلال کی کیفیت ہے۔‘ وہ اس وقت کہاں چھپے ہوئے ہیں؟ یقیناً وہ ابھی بھی عراق اور شام کے سرحدی علاقے میں ہیں۔

ابوبکر البغدادی

AFP
بغدادی کا اصلی نام ابراہیم اودھ البدری ہے۔

وہ کہتے ہیں کہ ’وہ پہلے سے سرحد کے آر پار قائم سمگلنگ کے جال کا فائدہ اٹھائیں گے۔ وہ پیسوں کا استعمال کر کے (مقامی) قبیلوں کے بیچ اپنا راستہ بنا لیں گے۔‘

عراق کے سابق مضبوط رہنما صدام حسین اپنی حکومت کے گرنے کے بعد نو مہینوں تک چھپے رہے تھے۔

امریکہ کے آپریشن ’ریڈ ڈان‘ کے تحت انھیں ان کی جائے پیدائش کے علاقے تکریت میں تہ خانے سے ڈھونڈ لیا گیا جب ایک مخبر نے کروڑوں ڈالر کے بدلے ان کے خفیہ ٹھکانے کا پتہ دے دیا۔

لیکن بغدادی کے گرد ایسے مخبر کو داخل کرنا جو ان کے ساتھ غداری کرے بہت مشکل ہو گا۔ ان کے ارد گرد بہت تھوڑی تعداد میں قریبی ساتھی ہوں گے جو بے حد وفادار ہوں گے، لالچ سے ان کے دل نہیں بدلے جا سکیں گے۔

اگر دنیا کا مطلوب ترین شخص انٹرنیٹ سے دور ہے، موبائل فون کا استعمال نہیں کر رہا ہے اور ممکنہ طور پر مسلسل اپنا ٹھکانہ بھی بدل رہا ہے ایسی صورت میں امریکہ اور مغرب کا انھیں کبھی پکڑنے کے کیا امکان ہیں؟

آخر میں ہو سکتا ہے کہ یہ کھیل سارا قسمت اور صبر کا ہو: شاید کوئی متجسس دیہاتی انھیں کہیں دیکھ لے اور اس کی اطلاع دے دے۔ یا کوئی ڈرون غیر معمولی گاڑیوں کا قافلہ دیکھ لے یا یہ بھی ہو سکتا ہے کہ دولت سالامیہ کا کوئی تھکا ہوا اور مایوس اہلکار یہ فیصلہ کر لے کہ اب آخر کار وقت آ گیا ہے کہ وہ انعام لے کر اپنی باقی زندگی آرام سے چھپ کر گزارے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 11110 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp