کرپشن، رشوت اور ایک ڈائری: یونس حبیب کی کہانی

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

وہ ہر لمحے ایک ڈائری اپنے ساتھ رکھتے، اس ڈائری میں وہ اپنے خاص لوگوں کے بینک میں کھولے جانے والے اربوں روپے کے جعلی اکاؤنٹس، کروڑوں اور اربوں روپے مالیت کے ملک کے اہم ترین شہروں میں ہزاروں پلاٹوں، سیاسی اور غیر سیاسی شخصیات میں اربوں روپے قرض دے کر معاف کرنے کی تفصیل، سیاست دانوں کو خاص مقصد کے لیے ساتھ دینے کی صورت میں نوٹوں سے بھرے بیگ تقسیم کرنے کا ریکارڈ اور خدا جانے کیا کیا راز تحریر ہوتے تھے۔

اس ڈائری کی جان سے زیادہ حفاظت کرنا بتاتا تھا کہ اس میں اس سے زیادہ کچھ اہم راز بھی لکھے ہوتے تھے۔ یہ ہے ایک جونیئرکلرک سے بینک کے سربراہ اور چیف ایگزیکٹو کے عہدے تک پہنچنے والے یونس حبیب کے عروج کی کہانی جو گزشتہ دنوں طویل علالت کے بعد دو بیٹیوں، ایک بیٹے اور بے شمار کہانیوں کو چھوڑ کر اور نا جانے کتنے اہم راز اپنے دل میں لیے انتقال کر گئے۔

انہوں نے ان بے شمار اہم کہانیوں اور رازوں کو اپنی مخصوص ‘ڈائری’ میں لکھا ہوا تھا جو ان کی کراچی کے جناح انٹرنیشنل ایئر پورٹ سے پہلی دفعہ گرفتاری کے بعد غائب کر دی گئی۔ یونس حبیب بینکنگ سرکل اور سیاسی حلقوں میں انتہائی متنازع شخصیت کی حیثیت سے جانے جاتے تھے۔ ان کی موت کے ساتھ سازشوں اور غلط کاموں کے بے شمار واقعات کا ‘سیاہ باب’ ختم ہو گیا۔ لیکن یونس حبیب کی “خصوصی خدمات” سے مستفید ہونے والے بے شمار افراد آج بھی زندہ ہیں اور وفاقی تحقیقاتی ادارہ ( ایف آئی اے )ان میں سے کچھ کی غیر قانونی ذرائع سے حاصل کی گئی دولت کے بارے میں تحقیقات کر رہا ہے جنہوں نے 1990 کے عام انتخابات میں مبینہ طور پر رقم لی۔

مشہور مہران بینک اسکینڈل وہ واحد جعلی کھاتوں اور رقم کی غیر قانونی تقسیم کا کیس ہے جس میں 1990 ء کے انتخابات میں حصہ لینے والوں میں ریاست رقم تقسیم کرنے میں براہ راست ملوث پائی گئی۔ اس کہانی کا اصل کردار، یونس حبیب تو مر گیا لیکن یہ سچی کہانی اب بھی اصغرخان کیس کی صورت میں زندہ ہے۔

“بھائی، میں نے سب کو پیسہ دیا اور سب میری ڈائری موجودہے،” یہ بات انہوں نے مجھے اس وقت بتائی تھی جب پہلی دفعہ ان کا نام اخبارات میں شائع ہوا اور مجھے ان سے ملاقات کا موقع ملا۔ میں بعد میں بھی اپنے صحافیوں دوستوں کے ساتھ ان سے جیل میں ملتا رہا جہاں ان کو مالی دھوکہ دہی کے کیس میں 10 سال کی سزا ہوئی۔ اس کے بعد ان کا تین یا چار سال بعد ہی جیل کی قید سے آزاد ہو جانا بھی ایک دلچسپ کہانی ہے کہ کس طرح قید کے دوران انہوں نے جیلر کو پیسے دے کر یہ سہولت خریدی۔

اپنی ڈائری میں وہ ہر اس شخص کا نام لکھتے تھے جسے انہوں نے کسی کام کے لیے پیسے یا رشوت دی اور نام کے سامنے وہ رقم بھی تحریر کر دیتے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ “بھائی، حساب پورا رکھا ہے، اب کوئی مانے یا نہیں مانے۔”

یونس حبیب ان تنازعات کے بارے میں انٹرویو دینے سے ہمیشہ بچنا چاہتے تھے۔ جیل سے باہر آنے کے بعد وہ آئی آئی چندریگر روڈ پر اپنے دفتر میں بیٹھا کرتے تھے۔ ان کا یہ معمول کچھ سال پہلےتک رہا لیکن صحت کی خرابی کے باعث وہ اسے جاری نہیں رکھ سکے۔

بہت سے لوگ ان کو ‘بینامی اکاؤنٹس’ اور متوازی بینکنگ کے موجد کے طور پر بیان کرتے ہیں۔

جسمانی طورپر کمزور مگر ذہنی طور پر بلکل تندرست اور تیز، یہاں تک کہ اس وقت کے سیکریٹری داخلہ واجد رانا کی ان کے خلاف رپورٹ کو نظر انداز کر دیا گیا تھا اور یونس حبیب کو رہا کر دیا گیا۔ واجد رانا کی رپورٹ میں تفصیل سے بیان کیا گیا تھا کہ کس طرح یونس حبیب نے دھوکہ دہی اور جعل سازی کر کے اپنے خون کے دو مختلف گروپس کے مشکوک نمونے استعمال کرتے ہوئے اپنی سزا میں کمی کر وائی۔ کیا کوئی عقل مند شخص اس پر یقین کر ے گا کہ ایک ہی انسان کے خون کے دو مختلف گروپس ہوں اور ان کو جیل انتظامیہ نا صرف تسلیم کرے بلکہ اس کی بنیاد پر سزا ہی ختم کروا دے۔ یونس حبیب ایک ایسے ہی کردار کا نام تھا خواہ جیل میں ہو یا جیل کے باہر، وہ ایک نہایت شاطر اور طاقتور انسان تھا۔

1994 میں جب اس وقت کے وزیر داخلہ جنرل نصیر اللہ بابر نے ان کو مہران بینک کے ذریعے بے نامی اکاونٹس استعمال کرتے ہوئے اہم شخصیات میں رقم تقسیم کرنے کے معاملے میں نامزد کیا تو اس کے بعد یونس حبیب کا نام ان کے تمام غلط کاموں کی وجہ سے بدنامی کی شکل میں مشہور ہوا۔

1990 ء کے انتخابات میں حصہ لینے والے سیاست دانوں اور دیگر اہم شخصیات میں نوٹوں سے بھرے بیگ تقسیم کرنے کی جعلسازی کے کھیل کو بعد میں تحریک استقلال کے سربراہ مرحوم ایئر مارشل ریٹائرڈ اصغر خان نے عدالت میں چیلنج کیا۔ گو کہ یونس حبیب اور اصغر خان انتقال کر گئے لیکن یہ کہانی آج بھی اصغرخان کیس کی شکل میں زندہ ہے۔

ریٹائرڈ ایئر مارشل اصغر خان نے اس وقت کے چیف جسٹس آف پاکستان سعید الزمان صدیقی کو بھی ایک خط لکھا۔ جسٹس سعید الزمان صدیقی نے مجھے سے ایک انٹرویو میں یہ انکشاف کیا تھا کہ کیس کے دوران رقم کی تقسیم کا الزام درست ثابت ہوا اور ان کے حکم پر رقم دینے اور قبول کرنے والے افراد کے خلاف مقدمہ قائم ہوا تھا، لیکن 12 اکتوبر، 1999 کو جنرل مشرف کو آرمی چیف کے عہدے سے ہٹانے کے حکومتی فیصلے کے نتیجے میں ہونے والی فوجی کارروائی کی وجہ سے وہ اس مقدمے کا فیصلہ نہیں سنا سکے تھے۔

تاہم مقدمہ شروع ہونے کے بعد سرد خانے میں تو ڈالا جا سکتا ہے لیکن وہ ختم نہیں ہوتا۔ اصغر خان اور یونس حبیب دونوں ہی نہیں رہے لیکن ان کے بیانات ریکارڈ کا حصہ ہیں جو ہمیشہ رہیں گے۔ یہ اب بھی ایک پراسرار بات ہے کہ جب ایف آئی اے نے کراچی ایئر پورٹ سے یونس حبیب کو حراست میں لیا تو ان کی یہ مشہور ڈائری کہاں گم ہو گئی اور اسے تلاش کیوں نہیں کیا گیا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ یونس حبیب اپنی اس ڈائری میں پیسے پیسے کا حساب لکھا کرتے تھے بلکہ وہ اہم شخصیات سے ہونے والی بات چیت بھی ٹیپ کیا کرتے تھے اور ان کا آڈیو ریکارڈ بھی ان کے پاس تھا۔

میں نے 1994 سے اس مسئلہ پر بہت کچھ لکھا، اس دوران یونس حبیب کی کچھ سیاستدانوں سے ہونے والی گفتگو کی ریکارڈنگ بھی ہاتھ آئی۔ آج لگ بھگ 19 برس بعد ایک بار پھر ہمارے بینکوں کے نظام اور اس سے منسلک تنازعات، بینامی اکاؤنٹس اور غیر قانونی ذرائع سے سرمایہ ملک سے باہر منتقل کرنے جیسے سنگین سوال اٹھائے گئے ہیں اور اس معاملے سے جڑے بڑے نام بھی سامنے آئے ہیں۔

مہربان بینک اسکینڈل سے بینامی اکاؤنٹس کا معاملہ کس طرح مختلف ہے ؟ اس سوال کا جواب نیب اور مشترکہ تحقیقاتی ٹیم، جے آئی ٹی تلاش کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ اس تحقیقات میں یہ معلوم کرنے کی کوشش ہوئی کہ کیا ریاست کے کچھ اہم عہدے دار 1990 کے عام انتخابات میں ملوث تھے۔

یونس حبیب کون تھا ؟ ایک بینک کا جونیئر کلرک کس طرح زونل چیف بن گیا اور اس کے بعد ایک ہی چھلانگ میں صوبائی سربراہ کے عہدے پر پہنچ گیا۔ پھر براہ راست اور بالواسطہ تعلقات استعمال کر کے مہران بینک بنا لیتا ہے؟ جب میں نے یونس حبیب کی زندگی کے بارے میں تحقیق شروع کی تو مجھے معلوم ہوا کہ وہ بھارتی گجرات کے باٹوا میمن برادری سے تعلق رکھتا تھا۔ اس نے میٹرک کرنے کے بعد حبیب بینک میں ملازمت شروع کی اور پھر طاقتور حلقے سے اپنے زبردست تعلقات اور حمایت سے اس نے پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔

مزید پڑھنے کے لئے اگلا صفحہ کا بٹن دبائیے 

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
––>