آئی پی ایل میں پیسے کی ریل پیل، کسے کتنے ملے؟

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

انڈین کرکٹ بورڈ دنیا میں سب سے امیر کرکٹ بورڈ ہے اور جب سے انڈین پریمیئر لیگ یعنی آئی پی ایل کا قیام عمل میں آیا ہے انڈیا میں کرکٹ کے کھیل میں پیسے کی ریل پیل ہے۔

اتوار اور پیر کی درمیانی شب آئی پی ایل کا 12ویں سیزن سنسنی خیز مقابلے کے بعد اختتام پزیر ہوا۔

ڈیڑھ ماہ سے جاری اس ٹورنامنٹ میں جیت کا سہرا ممبئی انڈینز کے سر آیا۔ فائنل میں انھوں نے چنئی سپر کنگز کو ایک رن سے شکست دے کر ریکارڈ چوتھی بار یہ ٹرافی اپنے نام کی۔

اس سے قبل مذکورہ دونوں ٹیمیں تین تین بار ٹرافی جیت چکی تھیں۔

یہ بھی پڑھیے

‘آئی پی ایل میچز پاکستان میں نہیں دکھائے جائیں گے’

آئی پی ایل: ایشون کا ’مانکیڈ‘، سوشل میڈیا پر بحث

’رباڈا کے یارکرز نے وقار اور وسیم کی یاد تازہ کر دی‘

ممبئی نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے چنئی کے سامنے 150 رنز کا ہدف رکھا لیکن چنئی کی ٹیم مقررہ 20 اوورز میں صرف 148 رنز ہی بنا سکی۔

میچ میں سب سے زیادہ مہنگے ثابت ہونے والے سری لنکا کے فاسٹ بولر لستھ ملنگا نے آخری اوور میں اپنے سارے تجربات استعمال کر کے مطلوبہ رنز بنانے نہیں دیے۔

آسٹریلیا کے آل راؤنڈر شین واٹسن آخری اوور میں رن آؤٹ ہو گئے لیکن انھوں نے میچ میں سب سے زیادہ رنز بنائے۔

آئی پی ایل میں جہاں کھلاڑیوں کو بڑی قیمتوں پر خریدا جاتا ہے وہیں ٹورنامنٹ کے دوران ہر میچ میں مختلف قسم کے ایوراڈز دیے جاتے ہیں۔ عام طور پر کرکٹ میں مین آف دی میچ کا ایوراڈ دیا جاتا ہے لیکن یہاں اس کے ساتھ پرفیکٹ کیچ، سوپر سٹرائیکر، سٹائلش پلیئر، گیم چینجر وغیرہ ایوارڈز بھی ہیں۔ ان سب کے لیے ایک ایک لاکھ کی رقم ہر میچ میں دی جاتی ہے۔

دھونی اور روہت شرما

AFP

آئیے آئی پی ایل کے 12 ویں سیزن کے اختتام پر انعامی رقوم پر ایک نظر ڈالتے ہیں:

1- آئی پی ایل جیتنے والی ٹیم کو 20 کروڑ روپے ملے۔ قاعدے کے مطابق، اس رقم کا نصف حصہ ٹیم کے مالکان کو جاتا ہے جبکہ باقی نصف کو کھلاڑیوں میں تقسیم کیا جاتا ہے۔

2- آئی پی ایل کے فائنل میں ہارنے والی ٹیم یعنی رنرز اپ کو 12.5 کروڑ روپے ملے اور یہاں بھی رقم کی تقسیم کا وہی قاعدہ ہے۔

وارنر

Getty Images
وارنر نے نہ صرف سب سے زیادہ رنز بنائے بلکہ سب سے زیادہ آٹھ نصف سنچریاں بھی بنائیں

3- آئی پی ایل کے اختتام پر ایمرجنگ پلیئر آف دی ٹورنامنٹ کا ایوارڈ دیا جاتا ہے جس کے ساتھ دس لاکھ روپے بھی انعام میں دیے جاتے ہیں۔ یہ کھلاڑی ٹی وی مبصرین اور آئی پی ایل کی ویب سائٹ پر عوامی ووٹ کی بنیاد پر منتخب کیا جاتا ہے۔ رواں سال کولکتہ نائٹ رائڈرز کے شبھمن گِل کو اس اعزاز سے نوازا گیا ہے۔

4- ٹورنامنٹ میں سب سے زیادہ رنز بنانے والے بیٹس مین کو اورنج یعنی نارنجی رنگ کی کیپ کے ساتھ دس لاکھ روپے بھی دیے جاتے ہیں۔ رواں سال سن رائزرز حیدر آباد کے لیے کھیلنے والے آسٹریلین اوپنر دیوڈ وارنر کو یہ اعزاز ملا ہے۔ انھوں نے ٹورنامنٹ میں سب سے زیادہ 692 رنز بنائے جس میں آٹھ نصف سنچریاں اور ایک سنچری شامل ہیں۔ اس سے قبل بھی وہ اورینج کیپ جیت چکے ہیں۔

5- ٹورنامنٹ میں سب سے زیادہ وکٹیں لینے والے کھلاڑی کو پرپل یعنی ارغوانی کیپ کے ساتھ دس لاکھ روپے دیے جاتے ہیں۔ اس ریس میں دہلی کیپیٹلز کے لیے کھیلنے والے جنوبی افریقی کھلاڑی کھگیسو رباڈا سب سے آگے تھے لیکن وہ درمیان میں ہی ٹورنامنٹ سے چلے گئے اور فائنل میں چنئی سپر کنگز کے لیے کھیلنے والے دوسرے جنوبی افریقی کھلاڑی عمران طاہر نے دو وکٹیں لے کر سب سے زیادہ 26 وکٹیں حاصل کیں اور اس کیپ کے مستحق کہلائے۔

عمران طاہر

Getty Images
عمران طاہر دوسرے سپنر ہیں جنھیں پرپل کیپ ایوارڈ ملا ہے

6- اس ٹورنامنٹ میں سب سے زیادہ قیمتی کھلاڑی کا ایوارڈ بھی دیا جاتا ہے۔ یہ ایسے کھلاڑی کو ملتا ہے جس نے ٹورنامنٹ کے دوران سب سے زیادہ پوائنٹس حاصل کیے ہوں۔ یہ پوائنٹس چوکے، چھکے، وکٹ، ڈاٹ بال، کیچ، سٹمپ وغیرہ کی بنیاد پر دیے جاتے ہیں۔ موسٹ ویلویبل پلیر کو ٹرافی کے ساتھ دس لاکھ روپے بھی دیے جاتے ہیں۔ رواں سال کولکتہ نائٹ رائڈرز کے لیے کھیلنے والے ویسٹ انڈیز کے کھلاڑی آنڈرے رسل کو یہ ایوارڈ ملا۔ ان کا ایوارڈ شبھمن گِل نے حاصل کیا کیونکہ وہ کولکتہ کے ٹورنامنٹ سے باہر ہونے کے بعد اپنے ملک لوٹ چکے تھے۔

7- آئی پی ایل کے دوران سب سے شاندار کیچ پکڑنے والے کھلاڑی کو بھی ایوارڈ دیا جاتا ہے۔ رواں سیزن میں بہت سے بہترین کیچ پکڑے گئے جن میں ریلے کیچ بھی شامل تھے۔ لیکن یہ ایوارڈ ممبئی انڈینز کے لیے کھیلنے والے ویسٹ انڈیز کے کرکٹر کیرون پولارڈ کو ملا۔

8- آنڈرے رسل کو ہی سپر سٹرائکر پلیئر آف دی ٹورنا منٹ کا ایوارڈ ملا جس کے ساتھ انھیں ایک کار اور ایک لاکھ روپے دیے گئے۔ انھوں نے ٹورنامنٹ میں 510 رنز بنائے، 11 وکٹیں لیں اور سب سے زیادہ 52 چھکے بھی لگائے۔

آنڈرے رسل

AFP
آنڈرے رسل نے 14 میچوں میں 52 چھکے لگائے

9- سٹائلش پلیئرآف دی ٹورنامنٹ کا ایوارڈ کنگز الیون پنجاب کے کھلاڑی کے ایل راہل کو دیا گیا۔ یہ ایوارڈ ان کی جگہ ان کے دوست ہاردک پانڈیا نے حاصل کیا۔ اس اعزاز کے ساتھ بھی دس لاکھ روپے دیے جاتے ہیں۔

10- پچ اور گراؤنڈ ایوارڈز میں جس سٹیڈئیم نے سات سے زیادہ میچز کی میزبانی کی ہوتی ہے انھیں 50 لاکھ روپے دیے جاتے ہیں اور جنھوں نے سات سے کم میچز منعقد کرائے انھیں 25 لاکھ روپے دیےجاتے ہیں۔

11- ڈریم الیون گیم چینجر آف دی ٹورنامنٹ کا اعزاز ممبئی انڈینز کے راہل چاہر کو ملا۔ اس کے ساتھ انھیں دس لاکھ روپے کا انعام بھی دیا گیا۔

12- فائنل میں مین آف دی میچ کا ایوراڈ ممبئی انڈینز کے جسپریت بمراہ کو دیا گیا جس کے ساتھ انھیں پانچ لاکھ روپے بھی ملے۔

ہر میچ میں مختلف قسم کے پانچ ایوارڈز دیے جاتے ہیں جو ایک ایک لاکھ پر مبنی ہوتے ہیں اس طرح کھلاڑیوں کو ہر میچ میں پانچ لاکھ انعام ملتے ہیں۔

آئی پی ایل کے رواں ٹورنامنٹ میں مجموعی طور پر 60 میچز کھیلے گئے جس میں 56 میچز لیگ کے تھے اور تین پلے آف اور ایک فائنل۔

اس طرح تمام میچز میں ملنے والی مجموعی رقم تین کروڑ روپے سے ذرا زیادہ ہوئی کیونکہ پلے آف کے میچز میں مین آف دی میچ کو ایک لاکھ کے بجائے پانچ پانچ لاکھ روپے دیے جاتے ہیں۔

اس طرح دیکھا جائے تو کھلاڑیوں کی میچ فیس کے علاوہ فائنل میں ملنے والے انعامات کی مجموعی رقم تقریباً 38 کروڑ انڈین روپے ہوتی ہے۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 8890 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp