ایف بی آر کا بحران ۔ ناقابل اشاعت کالم

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

شبر زیدی کی ایف بی آر چئیرمین کے طور پر تعیناتی کی خبر سے ایف بی آر کے بحران میں کمی کی بجائے اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔  ایف بی آر وفاق پاکستان کا ”کماؤ پُتر“ ہے۔  جس دن سے کہیں نواز شریف کے خلاف پانامہ لیکس کے مقدمات کو غیر جمہوری سیاسی مقدمات میں تبدیل کرنے کا فیصلہ ہوا، اسی دن سے پاکستان کی معیشت پر بُرے اثرات مرتب پڑنا شروع ہوئے جو پہلے سے ہی کمزرو میعشت کا کھرب ہا کھرب روپے کا معاشی نقصان کرنے کے باوجود ابھی تک جاری ہیں۔

ایک تو موجودہ حکومت کے مینڈیٹ پر بہت سے سوالیہ نشانات ہیں، دوسرے ریاست کو غیر موافق خارجہ اور سیکیورٹی پالیسی کی وجہ سے بین الاقوامی طور پر تقریبا معاشی بائیکاٹ کا سامنا ہے، پھر اسد عمر کی قیادت میں جو معاشی ٹیم سامنے لائی گئی وہ نا اہلیت کا ایک مینار ثابت ہوئی۔ سو عوامی مینڈیٹ میں ملاوٹ، بین الاقوامی بائیکاٹ اور اسد عمر کی نا اہلی، ان سارے محرکات نے مل کر وفاق کے محصولات کو بُری طرح متاثر کیا اور ایف بی آر کے ریونیو ٹارگٹ میں ریکارڈ کمی دیکھنے کو ملی۔

جس طرح ایک جھوٹ کو چھپانے کے لئے بہت سے جھوٹ بولنے پڑتے ہیں اسی طرح سیاست میں بھی ایک غلط کام کو چھپانے کے لئے بہت سے غلط کام کرنے پڑتے ہیں۔  نواز حکومت میں معیشت بہت اچھی چل رہی تھی لیکن ریاستی وسائل کی تقسیم پر جھگڑا شروع ہوا جس پر اسحاق ڈار سے منسوب مشہور زمانہ بیان سامنے آیا کہ کیک کا سائز بڑھے گا تو سب کو زیادہ حصہ بھی ملے گا۔ لیکن اس گولڈن معاشی اصول کو نظر انداز کر کے غیر مرئی طور پر نواز حکومت کے خلاف غیر جمہوری سازشوں کا آغاز ہوا۔

سازشیں تو کامیاب ہو گئیں لیکن ان کا نتیجہ یہ نکلا ہے کہ کیک کا سائز بڑھنے کی بجائے چھوٹا ہونا شروع ہو گیا ہے جس سے پورے کا پورا سیاسی، معاشی اور قومی سلامتی کا نظام بیٹھ گیا ہے۔  مقتدر حلقوں کا خیال تھا کہ نواز حکومت کے جانے سے کیک کا سائز بڑا ہو جائے گا، شاید یہ حلقے بھی نواز شریف اور آصف زرداری کی کرپشن پرکیے گئے مبالغہ آمیزی پر مبنی اپنے ہی پراپیگنڈہ کو سچ سجھنے لگے، یہیں پرمقتدر حلقوں سے سب سے بڑی بھول ہوئی۔

سیاسی پراپیگنڈہ کا ایک اصول ہے کہ اپنے مخالفین کو بدنام کرنے کے لئے مبالغہ آمیزی کی آخری حد تک جانے کے باوجود فیصلہ سازی کے وقت حقائق کو ہی مد نظر رکھنا چاہیے ورنہ پراپیگنڈہ کرنے والے اپنے ہی جھوٹ کو سچ سمجھ کر فیصلوں میں غلطی کر جاتے ہیں۔  پھر نواز شریف نے بھی، جائز طور پر، جاتے جاتے اتنی مزاحمت کی کہ سیاسی استحکام طویل ہوتے ہوتے اس حد تک پہنچ گیا کہ فیصلہ سازوں کے لئے ملکی معیشت کو سنبھالنا ناممکن ہو گیا۔ تیسرا خارجہ اور سیکیورٹی پالیسی میں سوائے آسیہ بی بی کے مقدمے کے دیگر بنیادی مسئلوں میں کوئی خاص تبدیلی نہ کرنے سے اندرونی طور پر لا اینڈ آرڈر اور بیرونی طور پر بین الاقوامی معاشی بائیکاٹ جیسی کیفیت جاری ہے۔

سو بنیادی مسائل جو معیشت اور نتیجتا ریاستی محصولات کو پھندہ ڈالے کھڑے ہیں ان میں کوئی تبدیلی وقوع پذیر نہیں ہوئی ہے۔  ایسے میں آئی ایم ایف کی سخت ترین شرائط جن سے عوام کا بھرکس نکل جائے گا، ماننے سے لیکر سٹیٹ بنک آئی ایم ایف کے حوالے کرنے اور ایف بی آر کی باگ ڈور سرمایہ داروں اور بڑے کاروبار کے حوالے کرنے تک موجودہ حکومت، جس پر خودمختاری کی تہمت ہے، ایک سے بڑھ کر ایک غلطی کرتی جا رہی ہے۔  شبر زیدی کی چیئرمین ایف بی آر تعیناتی ایک فاش غلطی ہے۔

ایف بی آر وفاق اور عوام کی ایما پر ٹیکس اکٹھا کرتا ہے اس ٹیکس میں بہت بڑا حصہ بڑے سرمایہ داروں اور ان کے کاروبار سے آتا ہے۔  یہ ایک طرح کی جنگ ہوتی ہے جس میں ایف بی آر کی کوشش ہوتی ہے کہ زیادہ سے زیادہ ٹیکس وصول کیا جائے لیکن سرمایہ داروں کی کوشش ہوتی ہے کہ کم سے کم ٹیکس دیا جائے۔  سرمایہ داروں کی ٹیم کے کپتان شبر ذیدی جیسے ٹیکس بچانے کے ماہرین ہوتے ہیں اور ایف بی آر کے کپتان چئیرمین ایف بی آر ہوتے ہیں۔

شبر زیدی کو ایف بی آر کا کپتان لگانا ایسے ہی ہے جیسے وفاق نے ایف بی آر کی ٹیم سرمایہ داروں کی ٹیم کے کپتان کے حوالے کر دی ہے جس سے ایف بی آر کی ٹیم ساری عمر مقابلہ کرتی آئی ہے، اس عمل کے لئے Institutional capture کی اصطلاح استعمال ہوتی ہے۔  یہی وجہ ہے کہ ایف بی آر کے افسران میں سخت بے چینی ہے اور اس کا اظہار انہوں نے اپنی ایسوسی ایشن کے ذریعے اور وزیراعظم اور ان کے وزرا کو اپنے تحفظات کے ذریعے بھی کیا ہے۔

ایف بی آر چیئرمین بن کر شبر زیدی کو ایک بہت بڑے مفادات کے ٹکراؤ یعنی Conflict of interest کا بھی سامنا ہے۔  یعنی کیسے وہ اپنے ساری عمر کے سرمایہ دار کلائینٹس کے مفادات اور ان سے اربوں روپے کے ٹیکس وصول کرنے والے ایف بی آر کے مفادات کا ایک ساتھ تحفظ کر پائیں گے؟ خدشہ ہے کہ وہ اپنی تعیناتی کے دوران اپنے سابقہ اور مستقبل کے ممکنہ کلائینٹس کا بھرپور فائدہ پہنچانے کی کوشش کریں گے۔  (انکے ابتدائی چند احکامات اس رجحان پر مہر ثبت کر رہے ہیں ) پھر ان کی تعیناتی اعزازی ہونے نے مزید سوالیہ نشان کھڑے کر دیے ہیں، اس سلسلے میں ان کا اپنا انٹریو سوشل میڈیا پر وائرل ہے جس میں وہ سنگا پور کا حوالہ دیتے ہوئے یہ دلیل دے رہے ہیں کہ کسی بھی بڑی کمپنی کے ہیڈ کی تنخواہ جو پاکستان میں کم از کم ساٹھ ستر لاکھ ماہانہ تک جاتی ہے سے کم پر چئیرمین ایف بی آر لگنے کے مقاصد اپنے یا کسی دوسرے کے مفادات کے لئے پاور کا حصول یا بے ایمانی ہو سکتے ہیں۔  ایسے حالات میں حکومت شبر زیدی کی متنازع تعیناتی ختم کر کے ایف بی آر کے کسی بھی سینئر افسر کو جس قدر جلد چئیرمین لگا دے اتنا ہی بہتر ہو گا۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •