سکیورٹی خدشات کے باعث قبائلی اضلاع میں انتخابات ملتوی کرنے کی درخواست

رفعت اللہ اورکزئی - بی بی سی اردو ڈاٹ کام، پشاور

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

سابق قبائلی علاقہ جات کے عوام

Getty Images
ضم شدہ اضلاع میں انتخابات کے انعقاد کی تمام تر تیاریاں مکمل کرلی گئی ہیں

پاکستان کے صوبے خیبر پختونخوا کی حکومت نے الیکشن کمیشن آف پاکستان کو ایک خط لکھا ہے جس میں سکیورٹی خدشات کے باعث قبائلی اضلاع میں دو جولائی کو ہونے والے انتخابات 20 دنوں تک ملتوی کرنے کی درخواست کی گئی ہے۔

الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ حکومت کی طرف سے تاحال انہیں ایسی کوئی درخواست موصول نہیں ہوئی ہے، تاہم خیبر پختونحوا کی حکومت کے ترجمان اور صوبائی وزیر اطلاعات شوکت علی یوسفزئی نے ضم شدہ اضلاع میں انتخابات ملتوی کرانے کے ضمن میں الیکشن کمیشن کو لکھے جانے والے خط کی تصدیق کی ہے۔

محکمۂ داخلہ و قبائلی امور خیبر پختونخوا کی طرف سے تین جون کو لکھے گئے اس خط میں کہا گیا ہے کہ نئے ضم شدہ اضلاع میں انتخابات کو سبوتاژ کرنے کے خطرات موجود ہیں اور سرحد پار افغانستان سے بھی دہشتگردی کی کارروائیوں کو رد نہیں کیا جاسکتا، لہذا ایسی صورتحال میں ضم شدہ اضلاع میں پرامن انتخابات ممکن نہیں۔

یہ بھی پڑھیے

افغان شدت پسندوں کے حملے میں تین پاکستانی فوجی ہلاک

شمالی وزیرستان میں دھماکہ، چار فوجی اہلکار ہلاک

محسن داوڑ اور علی وزیر ایف آئی اے کی تحویل میں

پی ٹی ایم کا موقف پاکستانی میڈیا سے غائب کیوں؟

خط میں انتخابات ملتوی کرانے کی درخواست کی پانچ وجوہات بتائی گئی ہیں۔ ان میں سرحد پار سے دہشت گردی کے خطرات، سیاسی رہنماؤں کو ممکنہ طورپر حملوں میں نشانہ بنانا، شمالی وزیرستان میں حالیہ دہشت گردی کے واقعات میں اضافہ، ضم شدہ اضلاع کی لیوی فورس کا غیر تربیت یافتہ ہونا اور ان کی کمانڈ ڈپٹی کمشنرز سے ضلعی پولیس افسروں کو دینے کے عمل کے ساتھ ساتھ انضمام کے عمل میں پیچیدگیاں شامل ہیں۔

خط میں درخواست کی گئی ہے کہ مذکورہ وجوہات کو مدنظر رکھتے ہوئے ضم شدہ اضلاع میں انتخابات کو فوری طور پر 20 دنوں کے لیے ملتوی کیا جائے تا کہ وہاں پرامن انتخابات کے انعقاد کے لیے فُول پروف انتظامات کیے جا سکیں۔

دریں اثناء صوبائی وزیر اطلاعات شوکت علی یوسفزئی نے ذرائع ابلاغ کو جاری کردہ ایک وڈیو پیغام میں کہا ہے کہ چونکہ شمالی وزیرستان میں عمومی طورپر آپریشن کے ساتھ ساتھ امن و امان کی صورتحال تسلی بخش نہیں ہے، لہذ ایسے حالات میں ان علاقوں میں پرامن انتخابات کا انعقاد ممکن نہیں ہے۔

تاہم دوسری طرف پشاور میں صوبائی الیکشن کمیشن کے ترجمان سہیل خان کا کہنا ہے کہ صوبائی حکومت کی طرف سے لکھا گیا خط تاحال انہیں موصول نہیں ہوا ہے۔ ترجمان کا کہنا تہا کہ اس بارے میں الیکشن کمیشن قانون کے مطابق فیصلہ کرے گا۔

یاد رہے کہ صوبائی حکومت کی طرف سے الیکشن کمیشن کو خط ایسے وقت لکھا گیا ہے جب ضم شدہ اضلاع میں انتخابات کے انعقاد کی تمام تر تیاریاں مکمل کر لی گئی ہیں اور مختلف سیاسی جماعتوں کی طرف سے امیدواروں کو ٹکٹ بھی جاری کردیے گئے ہیں۔

علی وزیر اور محسن

Reuters
پشتون تحفظ موومنٹ کا ترمیمی بِل قومی اسمبلی بھاری اکثریت سے منظور کر چکی ہے

قبائلی علاقوں پر نظر رکھنے والے سینیئر صحافی اور اینکر پرسن سلیم صحافی کا کہنا ہے کہ صوبائی حکومت کی طرف سے جو خط لکھا گیا ہے اس میں سکیورٹی خدشات بڑی وجہ قرار دی گئی ہے حالانکہ زمینی حقائق اس سے بالکل مختلف نظر آتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ 2013 اور2018 کے عام انتخابات جن بدترین حالات میں ہوئے ان سے موجود حالات سو درجے بہتر ہیں اور پھر اس کی کیا گارنٹی ہے کہ بیس دنوں کے بعد وہاں حالات یکدم بہتر ہوجائیں گے۔

سلیم صافی کے بقول شمالی وزیرستان کے علاوہ باقی کسی قبائلی ضلع میں ایسے حالات نہیں ہیں کہ وہاں الیکشن ملتوی کرنے کا کوئی جواز بن سکے لیکن اس کے باوجود التواء کی درخواست تمام علاقوں کے لیے دی گئی ہے۔

انہوں نے الزام لگایا کہ ضم شدہ اضلاع میں حکمران جماعت کی پوزیشن بہتر نہیں ہے، اس وجہ سے سکیورٹی خدشات کا شوشا چھوڑا جارہا ہے۔

یاد رہے کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان نے 25ویں آئینی ترمیم کے بعد ضم ہونے والے قبائلی اضلاع میں پہلی مرتبہ صوبائی اسمبلی کے انتخابات دو جولائی کو منعقد کرنے کا اعلان کیا تھا۔ الیکشن کمیشن کے اعلان کے مطابق یہ انتخابات سات قبائلی اضلاع اور ایف آر ریجن سے صوبائی اسمبلی کی 16 نشستوں پر منعقد ہونا تھے۔

یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ گزشتہ ماہ پشتون تحفظ موومنٹ کے رکن قومی اسمبلی محسن داوڑ کی طرف سے ضم شدہ اضلاع کے قومی اور صوبائی اسمبلی کی نشستوں میں اضافے کے لیے ایک آئینی ترمیمی بل قومی اسمبلی سے بھاری اکثریت سے منظور ہونے کے بعد مزید کارروائی کےلیے ایوان بالا بھیج دیا گیا تھا۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر یہ بل ایوان بالا سے منظورہو جاتا ہے تو اس صورت میں ضم شدہ اضلاع میں نئے سرے سے حلقہ بندیاں کی جائیں گی اور ایسی صورت میں وہاں صوبائی اسمبلی کے انتخابات مزید تاخیر کا شکار ہو سکتے ہیں۔ تاہم ابھی تک یہ بل ایوان بالا میں ایجنڈے پر نہیں آیا ہے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 10438 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp