کرکٹ ورلڈ کپ 2019: فائنل کھیلنا ہے تو ہمیں بڑی ٹیموں کو ہرانا ہوگا، امام الحق

عبدالرشید شکور - بی بی سی اردو ڈاٹ کام، ٹانٹن سمرسٹ

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

امام الحق

Getty Images

پاکستانی کرکٹ ٹیم ورلڈ کپ میں اپنا چوتھا میچ بدھ کے روز عالمی چیمپئن آسٹریلیا کے خلاف ٹانٹن کے میدان میں کھیلنے والی ہے۔ اس سے قبل اسے پہلے میچ میں ویسٹ انڈیز کے ہاتھوں سات وکٹوں سے شکست ہوئی تھی۔دوسرے میچ میں ٹیم نے عالمی نمبر ایک انگلینڈ کو ہرایا تھا لیکن سری لنکا کے خلاف میچ بارش کی نذر ہوگیا تھا اور اسے ایک پوائنٹ پر اکتفا کرنا پڑا تھا۔

امام الحق نے پیر کے روز ٹانٹن میں بی بی سی اردو کے سوال کے جواب میں کہا کہ یہ سب کو پتہ ہے کہ سری لنکا کے خلاف دو پوائنٹس بڑی اہمیت کے حامل تھے کیونکہ دیگر ٹیموں کی طرح سری لنکا کی ٹیم سے پاکستانی کرکٹ ٹیم کو خطرہ نہیں تھا لیکن جو ہوگیا اسے وااپس نہیں لایا جاسکتا۔

یہ بھی پڑھیے

#CWC19: مونچھیں ہوں تو محمد حفیظ جیسی

#CWC19: ’جلدی آؤٹ ہو جاؤں تو خود کو کوستا ہوں‘

’ایک دوسرے کو اپنی اچھی پرفارمنسز یاد دلائیں‘

’آ گیا وہ سرفراز جس کا ہمیں انتظار تھا‘

https://www.facebook.com/bbcurdu/videos/848133045553530/

امام الحق نے کہا کہ اگر پاکستانی ٹیم نے ورلڈ کپ کا فائنل کھیلنا ہے تو اسے بڑی ٹیموں کو ہرانا ہوگا کیونکہ جیت کا اصل مزا اسی وقت آتا ہے جب آپ بڑی ٹیموں کو ہراتے ہیں اور کھلاڑیوں کا مورال بھی بلند ہوتا ہے جیسا کہ پاکستانی ٹیم چیمپئنز ٹرافی کے سیمی فائنل میں انگلینڈ کو ہرا کر فائنل میں پہنچی تھی۔

امام الحق کا کہنا ہے کہ آسٹریلیا کے خلاف ون ڈے سیریز میں پانچ صفر کی شکست کبھی بھی ذہن میں نہیں رہے گی کیونکہ ورلڈ کپ میں صورتحال بالکل مختلف ہے۔ ٹیم کا مورال مختلف ہے اور کھلاڑیوں میں خود اعتمادی موجود ہے۔

امام الحق آسٹریلوی فاسٹ بولرز مچل اسٹارک کو خطرہ نہیں سمجھتے بلکہ وہ ان کا سامنا کرنے کے لیے ُپرجوش ہیں۔

امام الحق کا کہنا ہے کہ انگلینڈ کے جوفرا آرچر اور مارک ووڈ بھی خطرناک بولرز تھے اسی طرح وہ جنوبی افریقہ میں ربادا اور اسٹین کو بھی کھیلے تھے جہاں کنڈیشنز زیادہ مشکل تھیں۔ کوئی بھی بولر ہو آپ اسے خطرہ نہیں کہہ سکتے البتہ آپ زیادہ تیار رہتے ہیں کیونکہ یہ ورلڈ کپ کی بہترین ٹیمیں ہیں۔

امام الحق کا کہنا ہے کہ وہ حریف بولرز کے خلاف تیاری اپنی قوت کے اعتبار سے کرتے ہیں اور اسی کے مطابق گراؤنڈ میں جا کرکارکردگی دکھائیں۔

امام الحق کا کہنا ہے کہ اس ورلڈ کپ میں زیادہ تر کامیابی انہی ٹیموں کو مل رہی ہے جن کے پہلے تین بیٹسمین فارم میں ہیں اور اچھی کارکردگی دکھارہے ہیں۔ درحقیقت اس وقت ون ڈے کرکٹ میں پہلے تین بیٹسمینوں کا فارم میں ہونا اور ٹیم کے لیے اچھی بنیاد فراہم کرنا بہت ضروری ہوگیا ہے۔

اکیس سالہ امام الحق دو بار انڈر19 ورلڈ کپ میں پاکستان کی طرف سے کھیل چکے ہیں۔

Getty Images
امام الحق دو بار انڈر19 ورلڈ کپ میں پاکستان کی طرف سے کھیل چکے ہیں

امام الحق کا ون ڈے انٹرنیشنل کا ریکارڈ خاصا متاثر کن ہے۔ وہ 30 میچوں میں چھ سنچریاں اور پانچ نصف سنچریاں بنا چکے ہیں اور ان کی بیٹنگ اوسط 57 سے زیادہ ہے لیکن اس کے باوجود انہیں صرف اس لیے تنقید کا نشانہ بننا پڑا ہے کہ وہ چیف سلیکٹر انضمام الحق کے بھتیجے ہیں۔

امام الحق کا کہنا ہے کہ وہ بھی انسان ہیں اور یہ ممکن نہیں کہ اس طرح کی باتوں سے انہیں تکلیف نہ پہنچے اور خاص طور پر اسوقت جب آپ کی کارکردگی بھی اچھی ہو لیکن پھر بھی آپ پر تنقید ہو۔ لیکن اسی چیز نے انہیں ذہنی طور پر بہت زیادہ مضبوط بنا دیا ہے۔

امام الحق کا کہنا ہے کہ ان کی توجہ صرف اور صرف کرکٹ اور خاص طور پر اس ورلڈ کپ پر ہے یہ ایونٹ ان کے لیے اور پوری ٹیم کے لیے بہت زیادہ ضروری ہے۔ جہان تک ناقدین کا تعلق ہے تو وہ ساری زندگی بولتے رہیں گے۔ تنقید کو وہ قبول کرتے ہیں اور کوشش کرتے ہیں کہ وہ اپنی ٹیم اور ملک کے لیے کارکردگی دکھاتے رہیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 11180 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp