پیپلز پارٹی کا ’جیالوں سے بھری سڑکیں نظر آنے‘ کا دعوی کتنا درست ثابت ہوا؟

عمر دراز ننگیانہ - بی بی سی اردو ڈاٹ کام، لاہور

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

پیپلز پارٹی احتجاج

BBC
کراچی میں ہونے والے احتجاج میں خواتین کی ایک بڑی تعداد دکھائی دی

پاکستان میں حزبِ اختلاف کی دو بڑی جماعتیں پاکستان پیپلز پارٹی اور پاکستان مسلم لیگ نون کے کارکنان نے منگل کے روز ملک کے مختلف شہروں میں احتجاجی مظاہرے کیے۔

یہ مظاہرے دونوں جماعتوں کے دو اہم قائدین کو قومی احتساب بیورو نیب کی طرف سے محض دو روز کے دورانیے میں گرفتار کیے جانے کے ردِ عمل میں سامنے آئے۔

پاکستان پیپلز پارٹی اس بات کا عندیہ دے رہی ہے کہ ان کا احتجاج نہ صرف جاری رہے گا بلکہ اس میں شدت آئے گی۔

پاکستان پیپلز پارٹی کے کارکنان کراچی، لاہور اور پشاور سمیت ملک کے دوسرے چند شہروں میں سڑکوں پر آئے۔

منی لانڈرنگ کے الزامات میں گرفتار سابق صدر آصف علی زرداری کی نیب کے ہاتھوں گرفتاری کے خلاف لیاری میں پیپلز پارٹی کے کارکنان نے چاکیواڑہ سے لی مارکیٹ تک احتجاجی ریلی نکالی۔

اس کے علاوہ حسن سکوائر اور چند دیگر مقامات پر بھی احتجاجی ریلیاں نکالی گئیں۔ پشاور اور لاہور میں پیپلز پارٹی کے کارکنان نے اپنا احتجاج ریکارڈ کروانے کے لیے پریس کلبوں کا رُخ کیا۔

مزید پڑھیے

آصف علی زرداری کو کن الزامات کا سامنا ہے؟

جعلی اکاونٹس کیس: زرداری کی درخواستیں مسترد

اب زرداری کا بچنا محال ہے؟

’مائی لارڈ رجسٹری نہیں کیش جمع کراؤں گا‘

پشاور میں منعقد ہونے والے احتجاج میں مظاہرین نے نیب اور حکومت کے خلاف نعرے بازی کی جبکہ نیب کے سربراہ کی تصویر کو نذرِ آتش بھی کیا گیا۔ صوبہ پنجاب میں پاکستان پیپلز پارٹی کے احتجاج کا مرکز لاہور رہا۔

احتجاج

BBC
چیئرمین نیب کی تصویر کو نذر آتش کیا گیا

پریس کلب کے باہر پاکستان پیپلز پارٹی کے کارکنان جمع ہوئے، روایتی نعرے بازی کی گئی اور گھنٹہ بھر تپتے سورج کے نیچے مجمع کرنے کے بعد جب وہ منتشر ہوئے تو سڑک پر ’نیب گردی بند کرو‘ جیسے نعرے درج پائے گئے۔

تاہم سوال یہ ہے کہ ان مظاہروں کا مقصد کیا تھا؟ کیا پاکستان پیپلز پارٹی اپنے سیاسی اثر و رسوخ اور طاقت کا مظاہرہ کرنا چاہتی ہے؟ آصف زرداری کی گرفتاری کے بعد ایسا کرنے سے جماعت کو کیا فائدہ حاصل ہو سکتا ہے؟

پنجاب اسمبلی میں پاکستان پیپلز پارٹی کے پارلیمانی لیڈر حسن مرتضٰی کے مطابق وہ حکومت پر دباؤ ڈالنا چاہتے ہیں کہ وہ غیر ضروری مسائل کے بجائے حقیقی مسائل پر توجہ دے۔ وہ چاہتے ہیں کہ اصل مسائل سے توجہ ہٹائی جائے۔‘

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ حزبِ اختلاف نے عید کے بعد مہنگائی کے خلاف بڑے پیمانے پر احتجاج کی کال دے رکھی تھی۔

’تو اس سے توجہ ہٹانے کے لیے انھوں (حکومت) نے یہ طریقہ اختیار کیا کہ سیاسی لیڈروں اور کارکنان کو گرفتار کرو۔‘

پاکستان پیپلز پارٹی

BBC
لاہور میں پیپلز پارٹی کے اراکین احتجاج کرتے ہوئے

حزبِ اختلاف کی جماعتوں کی طرف سے یہ الزام پہلے بھی سامنے آتا رہا ہے کہ حکومت نیب کو استعمال کر کے انھیں سیاسی انتقام کا نشانہ بنا رہی ہے۔ حکومت ان الزامات کی تردید کرتی رہی ہے۔ تاہم پیپلز پارٹی کے پنجاب میں پارلیمانی لیڈر حسن مرتضٰی حکومتی تردید کو نہیں مانتے۔

ان کے مطابق ’نیب حکومت کی بی ٹیم ہے اور حکومت نیب کی بی ٹیم ہے۔ آپ دیکھیں ان کے تمام جو غیر منتخب ترجمان ہیں وہ سارا دن نیب ہی کا دفاع کر رہے ہوتے ہیں۔‘

صوبہ پنجاب میں پاکستان پیپلز پارٹی کے بارے میں یہ تاثر پایا جاتا ہے کہ وہ اپنی مقبولیت کھو چکی ہے۔ یاد رہے کہ گزشتہ انتخابات میں پیپلز پارٹی پنجاب اسمبلی کی محض چھ نشستیں جیت پائی تھی۔

تو کیا ایسی صورت میں وہ پنجاب میں حکومت پر دباؤ ڈالنے کے لیے کوئی منظم اور بڑی تحریک چلانے کی صلاحیت رکھتی ہے؟

احتجاج

BBC

حسن مرتضٰی کا کہنا تھا ’آپ دیکھیں گے، انھی گرمیوں میں پنجاب کی سڑکیں آپ کو جیالوں سے بھری نظر آئیں گی۔‘ تاہم منگل کے روز ہونے والے احتجاج کو اگر آغاز سمجھا جائے تو وہ بڑا آغاز نہیں تھا۔

ہجوم کے خاطر خواہ بڑا نہ ہونے کی طرف حسن مرتضٰی کی توجہ مبذول کروائی گئی تو ان کا کہنا تھا ’یہ اچانک تھا اور بہت تھوڑے وقت میں (کیا گیا)، پھر بھی کافی تعداد میں کارکنان آئے اور اب تیاری ہوتی رہے گی، اور یہ تعداد آپ کو بڑھتی نظر آئے گی۔‘

پاکستان پیپلز پارٹی

BBC

پاکستان پیپلز پارٹی کی پنجاب میں مقبولیت کھونے کے حوالے سے تاثر کے جواب میں لاہور سے جماعت کے رہنما فیصل میر کا کہنا تھا ’ایک منظم طریقے سے ہر انتخابات میں، دھاندلی زدہ انتخابات کے ذریعے لوگوں کے ذہنوں میں یہ تاثر پیدا کیا گیا کہ پیپلز پارٹی ختم ہو گئی ہے۔‘

ان کا کہنا تھا ’اس میں کوئی شک نہیں کہ ایسا کچھ تاثر پاکستان پیپلز پارٹی کے ورکرز کے اندر بھی ہے لیکن جب آصف علی زرداری صاحب کو گرفتار کیا گیا تو سب سے پہلے پاکستان میں لاہور کا ورکر سڑک پر آیا۔‘

فیصل میر کا ماننا ہے ’پاکستان پیپلز پارٹی درحقیقیت مزاحمت کی جماعت ہے مگر کیونکہ وہ مصالحتی سیاست میں رہی ہے اس کی وجہ سے ورکر بھی غیر فعال ہو گیا تھا لیکن اب ورکر دوبارہ اس پرانے طرز پر واپس آ جائے گا۔‘

وہ سمجھتے ہیں کہ ’عمران خان اسٹیبلشمنٹ کی علامت ہیں اور پاکستان پیپلز پارٹی ہمیشہ سے اسٹیبلشمنٹ کے خلاف مزاحمت میں رہی ہے۔‘

پیپلز پارٹی احتجاج

BBC
پشاور میں احتجاج کا ایک منظر

فیصل میر نے اس تاثر کو بھی مسترد کیا کہ سابق صدر آصف علی زرداری اپنے خلاف کرپشن کے الزامات سے نکلنے کے لیے پی پی پی کو استعمال کر رہے تھے۔

’اگر آصف زرداری نے پیپلز پارٹی کو استعمال کرنا ہوتا تو وہ پہلے کرتے، اب وہ گرفتار ہونے کے بعد کیوں کریں گے۔‘

تاہم اس حوالے سے تاحال سوالیہ نشان موجود ہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی پنجاب میں وہ تحریک چلا پائے گی جس کا وہ دعوٰی کر رہی ہے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 11132 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp