صورہ: کشمیری مزاحمت کا نیا مرکز

ریاض مسرور - بی بی سی اردو ڈاٹ کام، سرینگر

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

صورہ

Getty Images

سرینگر کے نواح میں واقع آنچار جھیل کے کنارے واقع صورہ کے علاقے میں کشمیر کی پہلی اور سب سے پرانی سیاسی جماعت نیشنل کانفرنس کے بانی اور خود مختار کشمیر کے پہلے وزیراعظم شیخ محمد عبداللہ کا آبائی مکان آج کل کھنڈرات کا ایک ڈھیر ہے۔

یہی وہ علاقہ ہے جہاں 30 سال قبل بھارتی کنٹرول کے خلاف مسلح شورش میں شامل ہونے کے لئے بڑی تعداد میں مقامی نوجوان شامل ہوئے تھے۔

کشمیر کی خصوصی حیثیت کے خاتمے اور اس کے بعد لاک ڈاؤن پر بی بی سی اردو کی خصوصی کوریج

اگرچہ یہاں آج بھی نیشنل کانفرنس کے حمایتی موجود ہیں، لیکن اب یہ علاقہ حکومت ہند کے لیے پریشانی کا سبب بن چکا ہے۔

کشمیر میں فی الوقت تاریخ کا سخت ترین محاصرہ اور مواصلاتی تعطل جاری ہے لیکن کشیدگی کے دوران صورہ کے لوگ آئے روز مظاہرے کرتے ہیں اور حکومت کے اُس فیصلے کے خلاف احتجاج کر رہے ہیں جس کے تحت کشمیر کی خصوصی آئینی حیثیت کو ختم کیا گیا۔

یہ بھی پڑھیے

صورہ میں احتجاج ہوا، انڈیا کی حکومت کا اعتراف

نماز جمعہ کے بعد صورہ میں مظاہرہ اور پرتشدد جھڑپیں

کشمیری مظاہرین پر پولیس کی فائرنگ کی ویڈیو

کشمیر کے تجارتی مرکز لال چوک سے مشرق کی جانب 13 کلومیٹر دُور واقع صورہ دہائیوں سے سب سے بڑے ہسپتال شیرِ کشمیر انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز یا سکمز کی وجہ سے مشہور تھا۔

پانچ اگست کو جب کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کر کے اسے جموں کے ساتھ ملا کر مرکز کے زیراہتمام خطہ قرار دیا گیا تو جموں کے مسلم اکثریتی علاقوں کے ساتھ ساتھ وادی کو بھی سخت ترین کرفیو اور مواصلاتی شٹ ڈاؤن سے ایک وسیع قید خانے میں تبدیل کر دیا گیا۔

حکومت کا اصرار تھا کہ دفعہ 370 ہٹانے کے بعد کشمیر میں کوئی مظاہرہ نہیں ہوا اور نہ کوئی ہلاکت ہوئی لیکن صرف تین روز بعد صورہ میں جناب صاحب کی درگاہ میں لوگ جمع ہوگئے اور باہر کی شاہراہ پر آتے آتے جلوس میں ہزاروں لوگ جمع ہو چکے تھے۔

لوگوں نے پاکستان اور پاکستان کے زیرانتظام کشمیر کے پرچم اُٹھا رکھے تھے۔ پولیس نے ہوا میں فائرنگ کی، جلوس پر آہنی چھرے اور اشک آور گیس کے گولے فائر کیے، کئی افراد زخمی ہوئے اور اس طرح جلوس کو لال چوک پہنچنے سے روک دیا گیا۔

بعد میں صورہ اور گردونواح میں پابندیاں سخت کر دی گئیں۔ انڈین حکومت نے کئی دنوں تک اس واقعے کی تردید کی اور بی بی سی پر نشر ہونے والی اس واقعے کی تصویروں کو جھٹلایا گیا تاہم عالمی میڈیا نے اس واقعے کی مفصل رپورٹنگ کی۔

سخت ترین پابندیوں کے باوجود صورہ کے علاقوں جناب صاحب اور آنچار میں لوگوں نے مظاہروں کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے گو ان کا دائرہ اندرونی صورہ تک ہی محدود ہے۔

نوجوانوں کی مختلف ٹولیوں نے بی بی سی کو بتایا کہ انہوں نے علاقے میں آنے جانے کے راستوں کو خود ہی سیل کر دیا ہے تاکہ سکیورٹی فورسز اندر نہ آنے پائیں۔

نوجوانوں نے مختلف گروپ تشکیل دیے ہیں جو باری باری رات کے دوران محلے کی سڑکوں پر گشت کرتے ہیں اور اگر سکیورٹی فورسز کی آمد کا کوئی امکان ہو تو دکانوں کے شٹر بجا کر آبادی کو الرٹ کیا جاتا ہے۔

مقامی نوجوانوں کا کہنا ہے کہ صورہ کے گردونواح کی پانچ کلومیٹر کی پٹی میں کم از کم پچاس نوجوانوں کو گرفتار کیا گیا ہے، تاہم سرکاری طور گرفتاریوں کی تعداد نہیں بتائی جا رہی۔ کشمیر پولیس کے اعلیٰ افسر نے نام مخفی رکھنے کی شرط پر بتایا کہ اس علاقے میں عنقریب ایک وسیع کریک ڈاؤن کیا جائے گا۔

مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ چونکہ صورہ کا علاقہ ایک طرف سے آنچار جھیل سے گھرا ہوا ہے اور دوسری طرف ہسپتال کی لمبی فصیل ہےاور اندر جانے کے صرف دو راستے ہیں، اس کی وجہ سے سکیورٹی فورسز جناب صاحب اور آنچار کے علاقوں میں مظاہروں پر قابو نہیں پا سکتیں۔

تاہم بعض لوگوں کا کہنا ہے کہ ٹیلی فون، موبائل فون اور انٹرنیٹ پر پابندی کے درمیان وہاں کے لوگ مظاہروں کے بارے میں ایک دوسرے کو کیسے مطلع کرسکتے ہیں۔

ایک نوجوان نے نام مخفی رکھنے کی شرط پر بتایا کہ ’دفعہ 370 ہٹانے کا اعلان ہوتے ہی ہم نے سوچا کہ اب سب کچھ بند ہو جائے گا۔ ہم نے خطوط لکھے اور لوگوں میں بانٹنا شروع کیے، یہی وجہ ہے کہ ایک بڑا جلوس نکالنے میں ہمیں تین دن لگے۔`

صورہ کشمیر کے انتخابی نقشے پر گاندربل حلقے کا حصہ ہے اور یہ فاروق عبداللہ کے والد اور عمرعبداللہ کے دادا کا آبائی حلقہ ہے۔

یہی وجہ ہے کہ شیخ عبداللہ کے بعد فاروق عبداللہ اور اُن کے بعد عمرعبداللہ بھی اسی حلقے سے الیکشن لڑتے رہے ہیں۔ لیکن کئی سال ہوگئے کہ گاندربل حلقے سے عبداللہ خانوادے کے کسی بھی لیڈر نے الیکشن نہیں لڑا۔

مبصرین کہتے ہیں کہ صورہ کی آبادی کے ایک حصے کا جھکاؤ ضرور نیشنل کانفرنس کی طرف ہو گا، لیکن گذشتہ 30 سال کے دوران اس علاقے کے لوگوں میں ہند مخالف جذبات پروان چڑھے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ آج جب پوری آبادی پر ایک خوفناک خاموشی طاری ہے، صورہ کے جناب صاحب اور آنچار علاقوں کی آبادی حکومت کے ساتھ براہ راست ٹکراؤ میں مصروف ہے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 10470 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp