ایران کی دھمکی، غیر ملکی افواج خلیج سے دور رہیں

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Hassan Rouhani

AFP

ایران کے صدر حسن روحانی نے متنبہ کیا ہے کہ غیر ملکی افواج خلیج کی سلامتی کے لیے خطرہ ہیں۔ ان کا یہ بیان امریکہ کی جانب سے خطے میں مزید فوج تعینات کرنے کے اعلان کے بعد سامنے آیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ غیر ملکی افواج خطے میں ہمیشہ ’درد اور تباہی‘ لائی ہیں اور انھیں ’اسلحے کی دوڑ‘ میں استعمال نہیں کیا جانا چاہیے۔

صدر روحانی نے یہ بھی کہا کہ ایران آنے والے دنوں میں خلیج میں امن کے لیے نیا منصوبہ اقوامِ متحدہ میں پیش کرے گا۔

ان کا یہ بیان ایران اور عراق کے درمیان سنہ 1980 سے 1988 تک جاری رہنے والے جنگ کی سالگرہ کے موقع پر سامنے آیا۔

واضح رہے کہ گذشتہ ہفتے یمن کے ایرانی حمایت یافتہ حوثی باغیوں نے سعودی عرب کی دو بڑی تیل کی تنصیبات پر حملوں کی ذمہ داری قبول کی تھی جن میں آرامکو کمپنی کے بڑے آئل پروسیسنگ پلانٹ ابقیق اور مغربی آئل فیلڈ خریص شامل ہیں۔

امریکہ اور سعودی عرب نے ان حملوں کی ذمہ داری ایران پر عائد کی ہے جبکہ ایران نے اس حملے میں ملوث ہونے کی تردید کی ہے۔

سعودی عرب کی تیل تنصیبات پر حملوں کے بعد سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کی درخواست پر امریکہ نے سعودی عرب میں اپنی مزید افواج تعینات کا فیصلہ کیا تھا۔

حسن روحانی

EPA

صدر روحانی نے کیا کہا؟

صدر روحانی نے ٹی وی پر کی جانے والی تقریر میں کہا ’غیر ملکی افواج ہماری عوام اور ہمارے خطے کے لیے مسائل اور عدم تحفظ کا باعث بن سکتی ہیں۔‘

انھوں نے ماضی میں ایسی افواج کی تعیناتی کو ’تباہی‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ وہ اس معاملے سے ’دور رہیں‘

ایرانی صدر کے مطابق ’اگر وہ مخلص ہیں تو انھیں ہمارے خطے کو اسلحے کی دوڑ کا مقام نہیں بنانا چاہیے۔ آپ ہمارے خطے اور اقوام سے جتنا دور رہیں گے، یہ اتنے ہی زیادہ محفوظ ہوں گے۔‘

ایران کا امن منصوبہ کیا ہے؟

حسن روحانی نے کہا کہ ان کا امن منصوبہ منگل کو اقوام متحدہ میں پیش کیا جائے گا۔ تاہم انھوں نے اس کی تفصیل نہیں بتائی۔

انھوں نے صرف اتنا کہا کہ آبنائے ہرمز میں امن ’مختلف ممالک کے ساتھ تعاون میں‘ حاصل ہو سکتا ہے۔

روحانی نے کہا ’ ایران اپنے علاقائی ہمسایہ ممالک کی ماضی کی غلطیوں کو نظر انداز کرنے کے لیے تیار ہے۔‘

انھوں نے مزید کہا ’اس حساس اور اہم تاریخی لمحے میں ہم اپنے ہمسایہ ممالک کے ساتھ دوستی اور بھائی چارے کا ہاتھ بڑھانے کا اعلان کرتے ہیں۔‘

اس سے قبل یمن کے حوثی باغیوں نے بھی ایک امن منصوبہ پیش کیا جس کے مطابق ان کا کہنا تھا کہ وہ سعودی عرب پر تمام حملوں کا خاتمہ کریں گے بشرطیکہ سلطنت اور اس کے حلیفوں نے بھی ایسا ہی کیا۔

یہ پیشکش حوثی باغیوں کی جانب سے سعودی عرب کی تیل تنصیبات کو ڈرون اور میزائل حملوں سے نشانہ بنانے کے ایک ہفتے بعد کی گئی۔

یمن میں اقوام متحدہ کے خصوص ی ایلچی مارٹن گریفھیس نے ایک بیان میں کہا کہ’اس موقع سے فائدہ اٹھانا اور تشدد ، فوجی اضافے اور غیر اعلانیہ بیانات کو کم کرنے کے لیے تمام ضروری اقدامات کے ساتھ آگے بڑھنا ضروری ہے۔‘

امریکی افواج

Getty Images

امریکی افواج کی تعیناتی کیا ہے؟

امریکی محکمہ دفاع پینٹاگون نے جمعے کو اعلان کیا تھا کہ سعودی عرب کی درخواست کے جواب میں ہزاروں فوجیوں کے بجائے کم تعداد میں تعیناتی ہو گی اور فضائی اور میزائل دفاع پر توجہ دی جائے گی۔

امریکی وزیر دفاع مارک ایسپر نے کہا ’ہم فوجی سازو سامان کی فراہمی کو تیز کرنے کے لیے بھی کام کریں گے۔‘

ایران کے پاسدارانِ انقلاب

AFP

امریکی اعلان کے بعد ایران کے پاسدارانِ انقلاب کے سربراہ جنرل حسین سلامی نے اپنے ملک پر حملے کے خلاف خبردار کرتے ہوئے کہا تھا کہ ایسے کسی بھی حملے کا نتیجہ حملہ آور کی تباہی کی صورت میں نکلے گا۔

جنرل حسین سلامی کا یہ بیان گذشتہ ہفتے سعودی تیل تنصیبات پر حملے کے تناظر میں امریکہ کی جانب سے سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات میں فوجی بھیجنے کے اعلان کے بعد سامنے آیا تھا۔

تیل حملوں کے پیچھے کیا ہے؟

حوثی باغیوں نے بار بار کہا ہے کہ سعودی عرب کی دو بڑی تیل تنصیبات جن میں آرامکو کمپنی کے بڑے آئل پروسیسنگ پلانٹ ابقیق اور مغربی آئل فیلڈ خریص شامل ہیں پر ہونے والے حملوں میں ان کا ہاتھ ہے، سعودی عرب نے بار بار ایران کو مورد الزام ٹھہرایا ہے اور تہران نے بار بار کسی بھی طرح کی مداخلت کی تردید کی ہے۔

سعودی عرب میں ابقیق اور خریص کی آئل فیلڈز کو نشانہ بنایا گیا تھا جس کے باعث عالمی سطح پر تیل کی رسد متاثر ہوئی تھی۔

ان حملوں کے بعد سعودی عرب کا کہنا ہے کہ وہ اپنی تیل تنصیبات پر حملے کا مناسب اور ‘ضروری اقدامات’ کے ساتھ جواب دے گا۔

سعودی وزیر خارجہ عادل الجبیر نے ریاض میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے ایک مرتبہ پھر ایران کو تیل تنصیبات پر حملے میں ملوث قرار دیتے ہوئے کہا کہ ان تنصیبات پر ایرانی ہتھیاروں سے حملے کیے گئے تھے اور وہ تحقیقات کے مکمل نتائج جاری کریں گے۔

تہران نے اس حملے میں ملوث ہونے کے الزام کی تردید کی ہے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 11103 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp