پی ٹی وی پر بھارتی سیاستدان شنکر سنگھ واگھیلا کا چھ سال پرانا بے بنیاد بیان نشر کرنا قابل مذمت ہے: ترجمان جماعت احمدیہ

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

جماعت احمدیہ پاکستان کے ترجمان سلیم الدین نے انڈین گجرات کے کانگریسی لیڈر شنکرسنگھ واگھیلا کے 6 سال پرانے، جھوٹے اور بے بنیاد الزام کو 6 اکتوبر کو پاکستان کے قومی چینل پی ٹی وی پر بلا تحقیق نشر کرنے پر شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔ ترجمان نے کہا کہ بھارتی سیاستدان کا پر امن جماعت احمدیہ کو انتہا پسند ہندو تنظیم آر ایس ایس سے جوڑنا انتہائی افسوسناک اور قابل مذمت ہے۔ جماعت احمدیہ کی سو سال سے زائد تاریخ گواہ ہے کہ یہ ایک پر امن جماعت ہے اور کہیں بھی، کبھی بھی، کسی قسم کی دہشت گرد ی اور انتہا پسندانہ کارروائیوں میں ملوث نہیں ہوتی اور نہ ہم اس قسم کی کارروائیوں پر یقین رکھتے ہیں۔

ترجمان جماعت احمدیہ پاکستان نے شنکر سنگھ واگھیلا کے شر انگیز بیان کو پاکستان کے قومی چینل پی ٹی وی پر 6 اکتوبر کو بغیر تحقیق نشر کرنے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ انٹر نیٹ اور جدید ذرائع ابلاغ کے زمانے میں اس بیان کی ذرا سی بھی تحقیق کرلی جاتی تو معلوم ہو جاتا کہ یہ بیان 2013 کا ہے۔ ترجمان نے کہا کہ بھارتی سیاستدان کا یہ بیان 2013 میں سامنے آیا تھا اور جماعت احمدیہ نے اس وقت بھی بلا ثبوت الزام تراشی کرنے پر اس بھارتی سیاستدان سے اپنا بیان واپس لیتے ہوئے معافی مانگنے کا مطالبہ کیا تھا۔ جس کو درج ذیل لنک پر ملاحظہ کیا جا سکتا ہے۔

https://themuslimtimes.info/2013/11/16/ahmadiyya-muslim-community-demands-apology-from-shankar-singh-waghela/

ترجمان نے کہا کہ جماعت احمدیہ تو خود ایک عرصہ سے دہشت گردی اور انتہا پسندی کا نشانہ بنی ہوئی ہے تاہم ہم امن، انصاف اور سچائی پر یقین رکھتے ہیں ۔ حالیہ پاک بھارت کشیدہ صورتحال اور پاکستان میں موجودہ سیاسی صورتحال کے تناظر میں پی ٹی وی اور چند دیگر چینلز پر بھارتی سیاستدان کے 6 سالہ پرانے بیان کو انتہائی غیر ذمہ داری کے ساتھ اب نشر کرنے پر ترجمان جماعت احمدیہ نے شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ بھارتی سیاستدان کا بلا ثبوت اور شر انگیز بیان نشر کرنا احمدیوں کے خلاف نفرت پھیلانے کی سوچی سمجھی سازش ہے اور خاص طور پر سرکاری ٹی وی پر بار بارنشر ہونا اور ٹکر چلائے جانا افسوس ناک ہے۔ ترجمان نے وزارت اطلاعات سے مطالبہ کیا ہے کہ 6 سال پرانے بیان کو موجودہ حالات میں بلا تحقیق نشر کرنے کی تحقیقات کروائی جائیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •