ایران میں تیل کی قیمتوں کے خلاف مظاہرے: اقوام متحدہ کو درجنوں ہلاکتوں کا خدشہ

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

ایران میں احتجاج

Reuters
ایران میں تیل کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے ملک گیر احتجاج جاری ہے

اقوام متحدہ نے ایران میں پیٹرول کی قیمتوں میں اضافے کے بعد سے شروع ہونے والے احتجاج میں درجنوں افراد کے ہلاک ہونے کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔

اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے دفتر نے ایران کے سکیورٹی اداروں سے کہا ہے کہ وہ مظاہرین کے خلاف طاقت کے بے دریغ استعمال سے گریز کریں۔

اقوام متحدہ نے ایران سے کہا ہے کہ وہ لوگوں کی انٹرنیٹ تک رسائی کو نہ روکے۔ ایران نے ’غیر ملکی‘ دشمنوں کو احتجاج کا ذمہ دار قرار دیا ہے اور مظاہرین کی مذمت کی ہے۔

ایران میں تیل کی قیمتوں میں اضافے کے خلاف جمعے سے شروع ہونے والا ملک گیر احتجاج جاری ہے جس میں کم از کم چار افراد کی ہلاکت کی تصدیق ہو چکی ہے۔

یہ بھی پڑھیے

ایران: تیل کی قیمتوں میں اضافے پر ملک گیر احتجاج

’ایران پابندیوں کی وجہ سے سخت دباؤ میں ہے‘

امریکی اقتصادی پابندیاں ایران پر کتنی بھاری پڑ رہی ہیں؟

ایران کا فیصلہ جوہری بلیک میل ہے: امریکی اہلکار

آیت اللہ خامنہ ای

EPA
ایران کے رہبر اعلیٰ آیت اللہ خامنہ ای نے تیل کی قیمتوں میں اضافے کی حمایت کی ہے

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق منگل کو مظاہرین نے تین سکیورٹی اہلکاروں کو ہلاک کر دیا ہے۔

ایران میں جمعے سے شروع ہونے والے احتجاج میں کم از کم پانچ افراد کے ہلاک ہونے کی تصدیق ہو چکی ہے۔

ایران میں حکام نے تین روز سے انٹرنیٹ تک رسائی کو روک دیا ہے جس کی وجہ سے مظاہروں کی فوٹیج حاصل کرنے میں دشواری پیش آ رہی ہے۔

ایران میں اے ایف پی کے صحافیوں نے مرکزی تہران میں دو پیٹرول پمپوں، ایک پولیس سٹیشن اور راہ گیروں کے لیے بنائے گئے پل کو نذر آتش ہوتا دیکھا ہے۔

حکام نے ان صحافیوں کو احتجاج کو ریکارڈ کرنے سے روک دیا ہے۔

اے ایف پی کے مطابق سکیورٹی اہلکار ہر بڑے چوراہے پر بکتر بند گاڑیوں اور پانی کی توپوں کے ہمراہ کھڑے ہیں۔

تیل کی قیمتوں میں اضافے کے خلاف جب جعمے کو احتجاج شروع ہوا تو ڈرائیوروں نے سڑکوں پر اپنی گاڑیوں کو روک دیا جس سے ملک بھر کی بڑی شاہراہوں پر ٹریفک رک گئی۔

جمعے کو تہران میں شروع ہونے والا احتجاج جلد ہی ملک گیر احتجاج میں تبدیل ہو گیا۔ مظاہرین نے ایران کے گیارہ بڑے شہروں میں بینکوں، پیٹرول سٹیشنوں اور سرکاری املاک کو نقصان پہنچایا۔

ایران میں حکومت نے گذشتہ ہفتے پیٹرول کی قیمتوں میں اضافہ کیا تھا۔ اس اعلان کے مطابق ایران میں ہر شخص اگر ماہانہ 60 لیٹر تیل خریدے گا تو اسے پچاس فیصد اضافی قیمت ادا کرنی ہو گی لیکن اگر اس نے 60 لیٹر سے زیادہ پیٹرول خریدا ہے تو اسے دو سو فیصد اضافی قمیت ادا کرنی ہو گی۔

گذشتہ سال مئی سے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران پر اضافی اقتصادیاں پابندیاں عائد کر رکھی ہیں جس سے ایران کی معیشت متاثر ہوئی ہے۔

مظاہرین کے ہاتھوں ہلاک ہونے والے سکیورٹی اہلکاروں میں سے ایک کا تعلق پاسداران انقلاب سے ہے جبکہ دو کا تعلق بیسج ملیشیا سے ہے۔ ہلاک ہونے والے اہلکاروں میں مرتضیٰ ابراہیمی، مجید شیخی اور مصطفیٰ رضائی شامل ہیں۔

جمعے کو شروع ہونے والے مظاہروں میں اب تک سرکاری اہلکاروں سمیت چار افراد کے ہلاک ہونے کی تصدیق ہو چکی ہے۔ غیر سرکاری اطلاعات کے مطابق کم از کم دس افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

ایران میں 2017 کے بعد یہ سب سے شدید مظاہرے ہیں۔ دو ہزار سترہ میں ہونے والے مظاہروں میں کم از کم پچیس افراد کے ہلاک ہونے کی تصدیق ہوئی تھی۔

حکام کے مطابق کم از کم دو سو افراد کو گرفتار کر لیا گیا ہے.

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 11178 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp