اسد عمر کی نئئ وزارت: اینگرو کیمیکلز سے سی پیک تک

ریاض سہیل - بی بی سی اردو، کراچی

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اسد عمر

Getty Images

پاکستان تحریک انصاف اسد عمر کو عمران خان کی ٹیم کا اوپننگ بیٹسمین کہا جاتا تھا لیکن اقتدار میں آنے کے چند ماہ بعد ان سے وزارت خزانہ کا قلمدان واپس لے لیا گیا۔

اب تقریباً سات ماہ کے بعد انھیں دوبارہ وفاقی وزارت دی گئی ہے، اس بار ان کے پاس منصوبہ بندی کا قلمدان ہے۔

پاکستان میں جب اسد عمر نے اینگرو کیمیکلز کو جوائن کیا تو اس کمپنی کی شناخت صرف کیمیکلز بنانے والی فیکٹری کے طور پر تھی اور جب انھوں نے 2012 میں ریٹائرمنٹ لی تو کئی شعبوں میں اس کا کاروبار پھیل چکا تھا، اسد عمر نے اینگرو کیمیکلز کو چھوڑ کر ابھرتی ہوئی سیاسی جماعت تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کی۔

اسد عمر کا تعلق فوجی گھرانے سے ہے، ان کے والد جنرل غلام عمر تھے جن کا تعلق انبالہ سے تھا۔ سابق وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو نے انھیں برطرف کردیا تھا۔ بھٹو حکومت کی برطرفی کے بعد جنرل ضیاالحق نے جنرل غلام عمر کو حکومتی معاملات میں شامل کیا تھا۔

اسد عمر کی پیدائش 1961 میں راولپنڈی میں ہوئی اور بعد میں وہ کراچی منتقل ہوگئے جہاں انھوں نے اپنی تعلیم مکمل کی۔ انھوں نے گورنمنٹ کالج آف کامرس اینڈ اکنامکس سے بی کام کی ڈگری لی اس کے بعد انسٹیٹیوٹ آف بزنس ایڈمنسٹریشن سے 1984 میں ایم بی اے کیا۔

اسد عمر کے پروفیشنل کیریئر کی ابتدا عالمی مالیاتی ادارے ایچ ایس بی سی سے ہوئی۔ انھوں نے کینیڈا میں قلیل مدت کے لیے یہ ملازمت اختیار کی جس کے بعد پاکستان میں ایکسن کیمیکل میں مالی تجزیہ نگار کے طور پر شامل ہوئے۔ 1985 میں انھوں نے اینگرو پاکستان میں قدم رکھا۔

یہ بھی پڑھیے

’اسد عمر کو پیار محبت سے منا لینا چاہیے تھا‘

اسد عمر:پاکستان کی سیاسی تاریخ اور بھتیجے

کیا عمران خان بھی۔۔۔ مداح ناخوش

عمران خان، اسد عمر

Getty Images
اسد عمر کو عمران خان کی ٹیم کا اوپننگ بیٹسمین تصور کیا جاتا تھا لیکن اقتدار میں آنے کے چند ماہ بعد ان سے وزارت خزانہ کا قلمدان واپس لے لیا گیا

اینگرو میں اسد عمر مختلف عہدوں پر رہے اور بالاخر 1997 میں انھیں اینگرو پولیمر اینڈ کیمیکلز کا چیف ایگزیکٹو افسر نامزد کیا گیا اور 2004 میں وہ اپنے پروفیشنل کیریئر کی بلندی پر پہنچ گئے اور انہیں اینگرو کارپوریشن کا صدر اور سی ای او نامزد کیا گیا۔ ان کی اعلیٰ کارکردگی پر پاکستان پیپلز پارٹی کے دور حکومت میں انھیں 2009 میں تمغہ امتیاز سے بھی نوازا گیا۔

28 سال کے پروفیشنل کیریئر کے بعد انھوں نے 2012 میں 50 برس کی عمر میں ریٹائرمنٹ لے لی اور تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کی اور انھیں جماعت کا نائب صدر مقرر کیا گیا۔ جو بزنس ایگزیکٹیو پس منظر میں رہتا تھا وہ بطور سیاستدان اب میڈیا اور عوامی اجتماعات میں سامنے آنے لگا، دھیمے لہجے و انداز اور معاشی معاملات پر عبور کی وجہ سے وہ اپنے لیے نرم گوشہ بنانے میں کامیاب ہوگئے۔

2013 کے انتخابات میں انھوں نے اسلام آباد کے حلقے این اے 48 سے انتخاب میں حصہ لیا اور مسلم لیگ کے امیدوار اشرف گجر کو شکست دی، انھیں جماعت اسلامی کی بھی حمایت حاصل رہی۔ قومی اسمبلی میں پہلے اسحاق ڈار، نوید قمر وغیرہ کی معاشی معاملات پر جو آواز گونجتی تھی اس میں ایک نئی آواز کا بھی اضافہ ہوگیا۔

یہ بھی پڑھیئے

’اسد عمر کو پیار محبت سے منا لینا چاہیے تھا‘

اسد عمر:پاکستان کی سیاسی تاریخ اور بھتیجے

کیا عمران خان بھی۔۔۔ مداح ناخوش

2018 کے انتخابات میں بھی اسد عمر نے اسلام آباد سے ہی انتخاب میں حصہ لیا لیکن اس بار ان کا حلقہ این اے 54 تھا، جہاں انھوں نے مسلم لیگ ن کے امیدوار انجم عقیل خان کو شکست دی۔

تحریک انصاف کی حکومت کے قیام کے بعد اسد عمر کو توقعات کے مطابق وزارت خزانہ، محصولات اور معاشی معاملات کا قلمدان دیا گیا۔ انھیں آغاز سے ہی مالی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا اور پارٹی کے سربراہ عمران خان نے جو کبھی کہا تھا کہ آئی ایم ایف سے رجوع نہیں کیا جائے گا، مجبور ہوکر آئی ایم ایف سے بیل آؤٹ پیکیج لینا پڑا۔

پاکستان تحریک انصاف کا اسد عمر پر مکمل تکیہ رہا کہ وہ معاشی بحران سے نکالنے میں کامیاب ہوجائیں گے، لاکھوں ملازمتوں اور گھروں کی تعمیر کے جو اعلانات کیے گئے وہ ایفا ہوں گے لیکن مالی تنگی کے باعث بالآخر اسد عمر کو ہٹنا پڑا اور ان کی جگہ عبدالحفیظ شیخ اور چیئرمین شبر زیدی کو لایا گیا۔

اسد عمر کو تقریباً سات ماہ کے بعد دوبارہ وفاقی وزارت دی گئی ہے، اس بار ان کے پاس منصوبہ بندی کا قلمدان ہے۔ چین پاکستان اقتصادی راہداری منصوبوں کی نگرانی اور عملدرآمد بھی اسی وزرات کے پاس ہے۔

بعض میڈیا رپورٹس کے مطابق اس راہدری کے منصوبوں پر پیش رفت میں سستی آگئی تھی، وزیر اعظم اور چین دونوں اس کی تردید کرتے رہے ہیں تاہم اسد عمر کی اس وزارت میں تعیناتی کو ان منصوبوں میں تیز رفتاری لانے کی کوشش قرار دیا جارہا ہے اور یوں انھیں ایک اور دشوار ٹاسک سونپا گیا ہے۔

اسد عمر نے حلف اٹھانے کے بعد سی پیک کو اپنی اولیت قرار دیا ہے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 11177 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp