بلوچستان: ضلع گوادر میں او جی ڈی سی ایل کے قافلے پر حملے میں کم از کم چھ سکیورٹی اہلکار ہلاک

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

سکیورٹی فورسز (فائل فوٹو)
Getty Images
صوبہ بلوچستان کے ضلع گوادر کی تحصیل اورماڑہ میں او جی ڈی سی ایل کے قافلے پر ہونے والے ایک حملے میں کم از کم چھ سکیورٹی اہلکار ہلاک ہو گئے ہیں۔

وفاقی وزیر داخلہ اعجاز شاہ نے اس حملے میں چھ اہلکاروں کی ہلاکت کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’دہشت گردی کا یہ واقعہ دشمن عناصر کی بزدلانہ کارروائی ہے۔ شرپسند عناصر کو ان کے عزائم میں ہرگز کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔‘

وزیر اعظم عمران خان کے آفس سے جاری ہونے والے ایک بیان میں سیکورٹی اہلکاروں کے خاندانوں کے ساتھ اظہار ہمدردی کرتے ہوئے اس واقعے کی رپورٹ طلب کی گئی ہے۔

نامہ نگار محمد کاظم کے مطابق یہ حملہ اورماڑہ کے علاقے سرپٹ میں ہوا جس کی ذمہ داری ابھی تک کسی گروپ نے قبول نہیں کی ہے۔

گوادر انتظامیہ کے ایک اہلکار نے اس حملے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ اس حملے میں قافلے کی حفاظت پر معمور فرنٹیئر کور کی دو گاڑیوں کو شدید نقصان پہنچا ہے۔ ان کے مطابق نامعلوم مسلح افراد نے ان گاڑیوں پر بڑے اور چھوٹے ہتھیاروں سے حملہ کیا۔

فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کی جانب سے فی الحال اس حملے کی تفصیلات اور اس میں ہونے والے جانی نقصان کی تفصیلات جاری نہیں کی گئی ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

’علیحدگی پسند قومی سلامتی کے لیے خطرہ نہیں رہے‘

بشدت پسندوں کے حملے میں ایک افسر سمیت چھ پاکستانی فوجی ہلاک

’جبری گمشدگی کا الزام بے بنیاد نہیں، شبیر کو میرے سامنے اٹھایا گیا‘

وفاقی وزیر داخلہ اعجاز شاہ کا اپنے پیغام میں مزید کہنا ہے کہ حملے میں ملوث افراد کے خلاف فوری کارروائی کی جائے گی اور انھیں کیفر کردار تک پہنچایا جائے گا۔ انھوں نے ہلاک ہونے والے سکیورٹی اہلکاروں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے قیمتی جانوں کے ضیاع پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔

وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے ٹوئٹر پر جاری کردہ اپنے ایک پیغام میں کہا ہے کہ کوسٹل ہائی وے پر قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکاروں کی جانوں کا ضیاع ’اس بات کی علامت ہے کہ دشمن بلوچستان اور اس کے عوام کو ترقی کرتے نہیں دیکھ سکتا‘۔

سکیورٹی فورسز

AFP
پاکستانی فوج کا دعویٰ ہے کہ انڈیا پاکستان کو کمزور کرنے کی غرض سے علیحدگی پسندوں کی حمایت کر رہا ہے (فائل فوٹو)

اورماڑہ کہاں واقع ہے؟

اورماڑہ بلوچستان کے ضلع گوادر کی کراچی کے قریب واقع ایک تحصیل ہے۔ اورماڑہ میں اپریل 2019 میں بھی سکیورٹی فورسز پر حملے میں 14 اہلکار ہلاک ہوئے تھے۔

اپریل 2019 میں ہلاک ہونے والے اہلکاروں کا تعلق کوسٹ گارڈ اور نیوی سے تھا۔ جبکہ مئی 2019 میں گوادر میں پرل کانٹینینٹل ہوٹل پر بھی مسلح افراد نے حملہ کیا تھا جس میں پانچ افراد ہلاک ہوئے تھے۔

گوادر انتظامی طور پر مکران ڈویژن کا حصہ ہے۔

گوادر کی طرح مکران ڈویژن کے دو دیگر اضلاع کیچ اور پنجگور بھی شورش سے متاثر ہیں۔

اگرچہ مکران ڈویژن میں حملے ہوتے رہتے ہیں تاہم سرکاری حکام کا کہنا ہے کہ پہلے کے مقابلے میں ان علاقوں میں امن وامان کی صورتحال میں بہت زیادہ بہتری آئی ہے۔

سکیورٹی فورسز

AFP

بلوچستان: سنہ 2020 میں سکیورٹی فورسز پر ہونے والے بڑے حملے

اس سے قبل آٹھ مئی کو صوبہ بلوچستان میں ضلع کیچ کے علاقے بلیدہ میں سکیورٹی فورسز پر ہونے والے ایک بڑے حملے میں پاکستانی فوج کے ایک میجر سمیت چھ اہلکار ہلاک ہوئے تھے۔

اس حملے کے بعد پاکستان فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کی جانب سے جاری کیے گئے بیان میں کہا گیا تھا کہ پاکستان ایران سرحدی علاقے کے قریب بلوچستان کے ضلع کیچ میں شدت پسندوں کی ممکنہ نقل و حمل کی نگرانی کے لیے معمول کے گشت سے واپسی پر سکیورٹی فورسز کی گاڑی پر ریموٹ کنٹرول دیسی ساختہ بم (آئی ای ڈی) سے حملہ کیا گیا۔

کالعدم بلوچ عسکریت پسند تنظیم بلوچستان لبریشن آرمی (بی ایل اے) نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی تھی۔

جبکہ اس کے چند روز بعد 19 مئی کو صوبے کے دو مختلف علاقوں، کچھی اور کیچ، میں سکیورٹی فورسز پر ہونے والے حملوں میں کم از کم سات فوجی اہلکار ہلاک جبکہ چار زخمی ہوئے تھے۔

آئی ایس پی آر کے مطابق کچھی میں مچھ کے علاقے پیرغیب میں فرنٹیئر کور کی ایک گاڑی کو معمول کی گشت کے بعد کیمپ واپس جاتے ہوئے بم حملے کا نشانہ بنایا گیا تھا جس میں چھ اہلکار ہلاک اور چار زخمی ہوئے تھے۔ ہلاک ہونے والوں میں ایک نائب صوبیدار بھی شامل تھا۔

اس حملے کی ذمہ داری کالعدم عسکریت پسند تنظیم بلوچستان لبریشن فرنٹ نے قبول کی تھی۔

14 جولائی کو بلوچستان کے ضلع پنجگور میں نامعلوم مسلح افراد کی جانب سے ایک اور حملہ کیا گیا جس میں سکیورٹی فورسز کے تین اہلکار ہلاک جبکہ ایک افسر سمیت آٹھ اہلکار زخمی ہوئے تھے۔

پاکستان فوج کے تعلقات عامہ کے ادارے آئی ایس پی آر کے مطابق یہ حملہ ضلع پنجگور کے علاقے گیچک میں اس وقت کیا گیا تھا جب اہلکار اس علاقے میں معمول کی گشت پر تھے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 16075 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp