ڈیموں کی تعمیر نے روئے ارض کو نئی شکل کیسے دی؟

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

ڈیم
Getty Images
انسانوں کی جانب سے زمین پر پتھروں اور کنکریٹ کی مدد سے بنائی جانی والی تعمیرات میں سے چند ہی ایسی ہیں جنھوں نے کرہ ارض پر اتنا عمیق اور گہرا اثر چھوڑا ہے جتنا کے ڈیمز نے۔

پہاڑوں سے لے کر دریاؤں کے وسیع اور چوڑے دہانوں تک ہم پانی کے قدرتی بہاؤ کو روکتے ہیں اور پانی پر اثر انداز ہونے والی کشش ثقل کو تبدیل کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ اور ایسا کرتے ہوئے ہم ارضیات کی قدرتی رفتار پر اثر انداز ہوتے ہیں۔

ڈیم کی صورت میں پانی کا ذخیرہ بنانا صرف اس حد تک محدود نہیں ہے کہ ایسا کرتے ہوئے کوئی انسانی آبادی یا وادی زیر آب آ جاتی ہے اس کے علاوہ بھی بہت کچھ ہوتا ہے۔ جیسا کہ کسی دریا کے قدرتی بہاؤ پر اثرانداز ہونا اور اس کو بدلنا، مصنوعی رکارٹ پر مٹی اور تلچھٹ کا جمع کرنا اور پانی کے کٹاؤ کی قوت کو تیز کرنا وغیرہ۔

ڈیموں کی بل کھاتی عمودی دیواریں، انوکھا اور حیرت انگیز فن تعمیر اور انتہائی گہری بنیادیں بھی روئے زمین پر ایک انوکھا نشان چھوڑتی ہیں۔

انجینیئرنگ کا شاہکار ان نمونوں میں سے چند تو اتنے بڑے ہوتے ہیں کہ انھیں آئندہ ہزاروں برسوں تک کے لیے محفوظ کیا جا سکتا ہے۔

ارضیات پر پڑنے والے ان اثرات کے علاوہ ڈیموں کی تعمیر اس سے متصل علاقوں میں بسنے والوں کی زندگیوں پر بھی گہرا اثر چھوڑتی ہے۔ اور یہ اثر نسل در نسل رہتا ہے۔

جب کسی دور دراز دارالحکومت میں حکومت اپنے دریاؤں کا استحصال کرنے کا فیصلہ کرتی ہے تو ، مقامی مکانات ، کھیتوں کی زمین اور معاش معاش کی تباہی اکثر اس کے بعد ہی ہوتی ہے۔

یہ بھی پڑھیے

پاکستان کے دریا خشک کیوں ہو رہے ہیں؟

’بڑے ڈیموں کا اب کوئی مستقبل نہیں ہے‘

ایک اور ڈیم سے دریائے سندھ کا گلا گُھٹ جائے گا؟

کوئی بھی حکومت جب اپنے ملک کے کسی دور دراز علاقے میں موجود کسی آبی گزرگاہ (ندی، دریا) کے استحصال کا فیصلہ کرتی ہے، یعنی ڈیم بنانے کا فیصلہ، تو یہ مقامی آبادیوں، کھیت کھلیانوں اور وہاں بسنے والوں کے روزگار کی تباہی کا عندیہ ہوتا ہے۔

مثال کے طور پر رواں برس کے آغاز پر جب دنیا کی تمام تر توجہ کورونا وائرس سے نمٹنے میں تھی تو اسی دوران ترکی کا ایک قدیمی قصبہ ڈیم کی بلند ہوتی سطح کی بھینٹ چڑھ رہا تھا۔

ہماری نسلوں کے ختم ہونے کے بعد جب مستقبل بعید میں ماہر ارضیات ڈیموں کی تعمیر کے دوران ڈوب جانے والی آبادیوں پر تحقیق کر رہے ہوں گے تو وہ یہ ضرور سوچیں گے کہ ہم نے قلیل مدتی سیاست اور انرجی کی ضروریات پوری کرنے کی غرض سے اتنے انتہائی اقدام کیوں اٹھائے تھے۔

اور ان کے اثرات دور دور تک دیکھے جا سکتے ہیں۔ وہ بڑے دریا جو مختلف براعظموں کے بیچوں بیچ بہتے ہیں، جیسا کہ افریقہ کا دریائے نیل، کا راستہ روک پر ہم ان اقوام کے لیے ارضیات کی ہیت ہمیشہ کے لیے بدل دیتے ہیں جو ڈاؤن سٹریم رہتی ہیں۔

زیر نظر دیکھیے چند ایسے ہی ڈیموں کی تصاویر جو دنیا بھر کے مختلف حصوں میں ارضیات پر اپنی انوکھی کہانیاں چھوڑ رہے ہیں۔

بی بی سی فیوچر کی نئی سیریز ’انتھروپو سین‘ میں خوش آمدید۔ اس سیریز میں ہم دنیا کے دور دراز مقامات کی فوٹو گرافی کریں گے اور ہمارا مقصد ایک حتمی فوٹو گرافک ریکارڈ مرتب کرنا ہے کہ انسانیت کس طرح ہمارے سیارے اور فطرت کو نئی شکل دے رہی ہے۔

ڈیم

Getty Images
رواں برس ترکی کا قدیم قصبہ حسینکیف ایلیسو ڈیم کے لیے اکھٹے کیے جانے والے پانی میں زیر آب آ گیا ہے۔ یہ ڈیم بارہ سو میگا واٹ کے ایک ہائیڈروالیکٹرک پاور پلانٹ کو سپورٹ کرنے کے لیے بنایا گیا ہے
ڈیم

Getty Images
شاہراہ ریشم کے روٹ پر حسینکیف کا قصبہ رہائشیوں سے خالی ہو چکا ہے اور یہاں کہ مکین اب ٹائیگرس ریور کے بلند ہوتے پانی کے باعث نقل مکانی کر چکے ہیں
ڈیم

Getty Images
پہلے پانی کی قصبے میں بہاؤ کی رفتار کم تھی مگر فروری میں بلند ہوتی سطح نے حسینکیف میں موجود تمام نئی اور پرانی عمارتوں کو اپنی آغوش میں لے لیا
ڈیم

Getty Images
دریا کے کنارے کسی جھیل کے کناروں کی شکل اختیار کر گئے اور اس کے بعد پانی کی بلند ہوتی سطح نے پوری قدیم آبادی کو نگل لیا
ڈیم

Getty Images
حسنکیف کی ایک سٹرک جو اب کہیں نہیں جاتی۔۔۔
ڈیم

Getty Images
ماہ اگست میں لی گئی اس تصویر میں دیکھا جا سکتا ہے کہ ایک لڑکی اسی پانی میں تیراکی کر رہی ہے۔ جب پانی کا یہ ذخیرہ اپنی بلند ترین سطح پر ہوتا ہے تو یہ تین سو سکوئر کلومیٹر کے رقبے کو اپنے اندر سموئے ہوئے ہوتا ہے
ڈیم

Getty Images
قدیم حسینکیف کے باسی اب حکومت سے طرف سے تعمیر کردہ ’نیو حسینکیف‘ میں نقل مکانی کر گئے ہیں
ڈیم

Getty Images
حسینکیف کے علاوہ دنیا کے دیگر علاقوں میں موجود ڈیم بھی عجوبہ ہیں۔ آپ صرف تخیل ہی کر سکتے ہیں کہ امریکہ میں بسنے والوں کی آئندہ نسلیں امریکہ میں واقع کلیویلینڈ ڈیم کو کیا شکل دیں گی، ایک بڑی واٹر سلائیڈ
ڈیم

Getty Images
یا برطانیہ کے پیک ڈسٹرکٹ نیشنل پارک میں واقع لیڈی بوئر ڈیم کے اوور فلو ہونے والے اس پائپس کو جو کوئی خلائی شے محسوس ہوتے ہیں
ڈیم

Getty Images
پانی کے یہ ذخیرے بڑے بڑے ہو سکتے ہیں جو بعض اوقات پورے خطے کی ارضیات کو بدل کر رکھ دیتے ہیں جیسا کہ عراق میں واقع ڈوکان ڈیم
ڈیم

Getty Images
ہانگ کانگ میں تکونی شکل کا یہ ڈیم کاؤلون پر قائم کردہ پانی کا ذخیرہ ہے
ڈیم

Getty Images
پانی کے یہ ذخیرے بڑے بڑے ہو سکتے ہیں جو بعض اوقات پورے خطے کی ارضیات کو بدل کر رکھ دیتے ہیں جیسا کہ عراق میں واقع ڈوکان ڈیم
ڈیم

Getty Images
ایک ڈیم کا فضائی منظر
ڈیم

Getty Images
یہاں تک کہ وہ ڈیم جن کا استعمال متروک ہو چکا ہے وہ بھی فائدہ مند ہوتے ہیں جیسا کہ فلپائن میں منیلا کے نزدیک واقع ایک ڈیم جو پیاسوں کی پیاس بجھاتا ہے
ڈیم

Getty Images
مگر پانی کے یہ ذخیرے خشک بھی ہو سکتے ہیں جیسا کہ چلی میں واقع ال یوسو ڈیم
ڈیم

Getty Images
مگر بعض اوقات یہ خشک سالی ڈیم میں واقع پرانے آثار کو نمودار کر دیتی ہے جیسا کہ سپین میں چار سے پانچ ہزار برس قدیم یہ یادگار جو پہلے والڈیناس ڈیم میں زیر آب تھی
ڈیم

Getty Images
قدرت کو آپ ہمیشہ کے لیے پابند نہیں کر سکتے، جیسا کہ افغانستان میں واقع باندی سلطان ڈیم کے لیک ہو جانے کے بعد ہوا
ڈیم

Getty Images
ڈیم شاید بہت عرصے تک قائم و دائم رہیں مگر وہ دریاؤں کا مقابلہ نہیں کر سکتے۔ چین کے ہائیڈرو پاور پلانٹ سے ٹکرانے والا دریا کا بپھرا ہوا پانی
Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 16624 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp