نیوزی لینڈ: محکمہ پولیس نے حجاب کو خواتین اہلکاروں کی یونیفارم کے حصے کے طور پر متعارف کروا دیا

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

نیوزی لینڈ میں حکام نے زیادہ سے زیادہ مسلمان خواتین کو محکمہ پولیس میں شامل ہونے کی ترغیب دینے کے لیے پولیس کی سرکاری وردی (یونیفارم) میں حجاب متعارف کروا دیا ہے۔

حال ہی میں محکمہ پولیس میں بھرتی ہونے والی کانسٹیبل زینا علی پولیس یونیفارم کے ساتھ حجاب پہننے والی پہلی مسلمان افسر بنیں گی۔

پولیس ترجمان نے کہا کہ اس اقدام کا مقصد ’متنوع سماج‘ کی عکاسی کرنے والی پولیس سروس تشکیل دینا ہے جس میں ’سبھی (مختلف نسلوں اور مذہبوں) کی شمولیت‘ کا اظہار ہو۔

نیوزی لینڈ کے علاوہ لندن کی میٹرو پولیٹن پولیس اور سکاٹ لینڈ پولیس کے محکمے مسلمان خواتین افسران کو یونیفارم کے ساتھ حجاب پہننے کا اختیار دیتے ہیں۔

برطانیہ میں لندن کی میٹرو پولیٹن پولیس نے سنہ 2006 میں یونیفارم کے ساتھ حجاب کے استعمال کی منظوری دی تھی جبکہ سکاٹ لینڈ پولیس نے سنہ 2016 میں حجاب کو اپنایا۔ اس سے قبل آسٹریلیا میں وکٹوریہ پولیس کی ماہا سکّر نے سنہ 2004 میں حجاب والی وردی پہنی تھی۔

یہ بھی پڑھیے

رفیعہ ارشد: برطانیہ میں حجاب پہننے والی پہلی جج

’حجاب نہ پہننا آزادی ہے تو حجاب پہننا بھی آزادی ہے‘

بغیر حجاب کے تصویر: شطرنج ریفری ایران جانے سے خوفزدہ

نیوزی لینڈ پولیس نے بتایا کہ حجاب والی وردی کی تیاری پر سنہ 2018 سے ہی کام شروع ہو گیا تھا۔ یہ اس وقت شروع ہوا جب سیکنڈری سکولوں کا دورہ کرنے والے پولیس عملے نے اس کے متعلق درخواست دی۔

اس کے بعد زینا علی پہلی ایسی پولیس سپاہی تھیں جنھوں نے اپنی وردی میں حجاب کے شامل کیے جانے کی درخواست کی تھی اور انھیں اس کی تیاری اور ڈیزائن کے عمل میں شامل ہونے کے لیے مدعو بھی کیا گیا تھا۔

کانسٹیبل زینا علی فجی میں پیدا ہوئیں تھیں لیکن بچپن میں ہی نیوزی لینڈ منتقل ہو گئیں۔ انھوں نے نیوزی لینڈ ہیرالڈ کو بتایا کہ انھوں نے کرائسٹ چرچ کے دہشت گرد حملے کے بعد پولیس میں شامل ہونے کا فیصلہ کیا تھا۔

انھوں نے قومی روزنامہ کو بتایا کہ ’میں نے محسوس کیا کہ پولیس میں زیادہ سے زیادہ مسلم خواتین کی ضرورت ہے تاکہ وہ لوگوں کے ساتھ جا کر ان کی مدد کریں۔‘

انھوں نے مزید کہا کہ ’مجھے اپنی وردی کے طور پر نیوزی لینڈ پولیس کے حجاب والی وردی پہن کر باہر جانا اور اسے دکھانا اچھا لگتا ہے۔ مجھے لگتا ہے کہ اسے دیکھ کر مزید مسلمان خواتین بھی اس میں شامل ہونا چاہیں گی۔‘

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 16558 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp