تھائی لینڈ میں مظاہرین نے پولیس ہیڈکوارٹر کو پینٹ سے نہلا دیا

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

پولیس ہیڈکوارٹر
Reuters
تھائی لینڈ میں ہزاروں مظاہرین نے بدھ کی رات دارالحکومت بینگکاک میں احتجاج کا انوکھا طریقہ اپنایا اور پولیس ہیڈکوارٹر کے باہر اکھٹے ہو کر عمارت پر پینٹ پھینک کر احتجاج کیا۔

یہ احتجاج منگل کے روز سامنے آنے والے پرتشدد احتجاج میں درجنوں افراد کے زخمی ہونے کے بعد سامنے آیا ہے۔

حکومت کی جانب سے ایک آئینی ترمیم کے مسودے کو مسترد کرنے اور پولیس کی جانب سے مبینہ تشدد کے باعث اشتعال میں آنے والے ان مظاہرین کی جانب سے رائل تھائی پولیس کے ہیڈکوارٹرز پر مختلف رنگوں کے پینٹ کی بالٹیاں پھینکی گئیں اور گرافیٹی سپرے کیا گیا۔

پولیس ہیڈکوارٹر

EPA

پولیس نے خود کو عمارت میں ہی بند کر لیا اور اس دوران مداخلت نہیں کی۔

تھائی لینڈ میں گذشتہ کئی ماہ سے طلبا کی سربراہی میں ہونے والے مظاہروں کے باعث تناؤ کی کیفیت ہے جبکہ مظاہرین کے مطالبات میں آئینی ترامیم، ملک کے وزیرِ اعظم کو برطرف کرنے اور شاہی نظام میں ردوبدل شامل ہیں۔

سپرے پینٹ

Reuters

منگل کے روز تھائی لینڈ میں اب تک کہ سب سے زیادہ پرتشدد مظاہرے دیکھنے میں آئے جن میں مظاہرین اور پولیس حکام کے درمیان تصادم دیکھنے میں آیا۔

ان جھڑپوں میں کم از کم 40 افراد زخمی ہوئے اور مظاہرین اور نے پولیس پر سموک بم اور پینٹ کے تھیلے پھینکے اور جواب میں پولیس کی جانب سے واٹر کینن اور آنسو گیس کے ذریعے جواب دیا گیا۔

مظاہرین ایک عرصے سے ملک کی پارلیمان تک پہنچنے کی کوشش کر رہے تھے جہاں اراکینِ پارلیمان آئین میں ممکنہ تبدیلیوں پر بحث کر رہے تھے۔ ان میں سے ایک متنازع قانونی مسودہ بھی ہے جسے ایک غیر سرکاری تنظیم انٹرنیٹ ڈائیلاک آن لا ریفارم کی جانب سے پیش کیا گیا ہے اور اسے مظاہرین کی حمایت بھی حاصل ہے۔

اس مسودے میں ایک شفاف اور جمہوری حکومت کا قیام اور ایسی ترامیم جن کے تحت صرف ایک رکنِ پارلیمان ہی وزیرِ اعظم بن سکتا ہے شامل ہیں۔ تھائی لینڈ کے موجودہ پارلیمانی نظام کے تحت ایک غیرمنتخب شدہ شخص کو بھی وزیرِ اعظم بنایا جا سکتا ہے۔

بدھ کی شام اس مسودے کو مسترد کر دیا گیا جس کے مظاہروں کی شدت میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

خبررساں ادراے روئٹرز کو مظاہرین کے ایک رہنما پنوسایا ’رنگ‘ ستھیجیراوتاناکل نے بتایا کہ ’ہم یہاں صرف اپنے غصے کی وجہ سے آئے ہیں۔‘

حکومت مخالف احتجاج

EPA

مظاہرین نے پولیس پیڈکوارٹرز کی دیواروں پر شیشے کی بوتلیں پھینکیں جس کے باہر پولیس کی جانب سے کنکریٹ کے بلاکس اور خاردار تاریں لگائی گئی تھی۔

دیگر مظاہرین کی جانب سے دیواروں پر سپرے پینٹ کے ذریعے پولیس مخالف نعرے لکھے گئے اور انھوں نے ایک ایسی یادگار پر پینٹ پھینکا جس پر تھائی لینڈ کی ملکہ کی تصویر موجود تھی۔ تاہم ان کی تصویر کو چھیڑا نہیں گیا۔

سپرے پینٹ

Reuters

مظاہروں کے دوران ربر کے بطخیں بھی نظر آئیں جو اس سے قبل منگل کے روز نظر آئی تھیں اور انھیں واٹر کینن سے بچاؤ کے لیے استعمال کیا گیا۔

ربر کی بطخیں
Reuters
حکومت مخالف احتجاج
EPA

جمعرات کی صبح تک پولیس ہیڈکوارٹرز کو سفید پینٹ کر دیا گیا تھا تاہم گذشتہ روز ہونے والے احتجاج کے باعث ڈالے گئے نشانات اب بھی موجود ہیں۔

تاہم مظاہرین نے اگلے ہفتے ایک اور مظاہرہ کرنے کا ارادہ کیا ہے۔

پولیس ہیڈکوارٹر

Reuters

تمام تصاویر کے جملہ حقوق محفوظ ہیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 16555 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp