فرانس میں مسلمان رہنماؤں کو ’جمہوری اقدار‘ پر حامی بھرنے کے لیے 15 دن کی مہلت

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

فرانسی
Reuters
فرانسیسی صدر ایمانویل میکخواں نے فرانس کے مسلم رہنماؤں سے گفتگو میں کہا ہے کہ وہ 'جمہوری اقدار' کے چارٹر پر رضامندی اختیار کریں جو کہ فرانس میں انتہا پسند اسلام کے خلاف حکومتی کریک ڈاؤن کا حصہ ہے۔

بدھ کو فرانسیسی صدر نے فرینچ کونسل آف مسلم فیتھ (سی ایف سی ایم) کو 15 دن کی مہلت دی کہ وہ اس عرصے میں وہ فرانس کے وزارت داخلہ کے ساتھ کام کریں۔

سی ایف سی ایم نے اس بات پر رضامندی ظاہر کی ہے کہ وہ نیشنل کونسل آف امام قائم کرے گی جو کہ ملک میں امام کے لیے لیے باضابطہ اجازت نامے جاری کرے گی اور ان اجازت ناموں کو واپس بھی لے سکے گی۔

یہ فیصلے ملک میں گذشتہ چند ہفتوں میں ہونے والے تین حملوں کے بعد سامنے آئے ہیں جن میں انتہا پسند اسلام کا پرچار کرنے والے افراد ملوث تھے۔

اسی حوالے سے مزید پڑھیے

فرانس میں مسلمانوں کی تاریخ اور قومی شناخت کا محافظ نظریہ ’لئی ستے‘ کیا ہے؟

پیرس میں استاد کا سر قلم، حملہ ’دہشتگردانہ کارروائی‘ قرار

فرانس کے مظاہرے ’معیشت کی تباہی ہیں‘

فرانسیسی معاشرے میں کشیدگی، مسلمان مستقبل کے بارے میں فکرمند

اس منشور میں درج ہوگا کہ ‘اسلام ایک مذہب ہے، نہ کہ سیاسی تحریک’ اور فرانس میں مسلم گروہوں میں ‘بیرونی مداخلت’ پر بھی پابندی عائد کی گئی ہے۔

فرانس

EPA

فرانسیسی صدر میکخواں نے حالیہ حملوں کے بعد فرانس کی روایتی سکیولرزم کا بھرپور دفاع کیا ہے۔ رواں سال فرانس میں ایک سکول ٹیچر کا سر قلم کر دیا گیا تھا جنھوں نے پیغمبر اسلام پر بنے ہوئے متنازع خاکے اپنی کلاس میں دکھائے تھے۔

بدھ کو ہی فرانس کے صدر اور ان کے وزیر داخلہ گیرالڈ ڈارمانن نے سی ایف سی ام کے آٹھ رہنماؤں سے ملاقات کی۔

فرانس کے اخبار لے پیریرزین کو ذرائع نے بتایا کہ ‘دو رہنما اصول اس منشور میں سیاہ و سفید طور پر درج ہوں گے اور وہ ہیں کہ سیاسی اسلام اور بیرونی مداخلت قطعی نامنظور ہیں۔’

اس کے علاوہ فرانسیسی صدر نے مزید اقدامات کا اعلان کیا جس کے تحت وہ ملک میں ‘اسلام پسند علیحدگی’ کا مقابلہ کریں گے۔

ان اقدامات میں ایک ایسا بِل شامل ہے جو انتہا پسندی کے خلاف ہے اور اس میں درج ذیل قوانین ہیں۔

گھر پر پڑھانے پر پابندی اور ان لوگوں کے لیے سخت سزائیں جو سرکاری ملازمین کو مذہبی بنیادوں پر ڈرائیں دھمکائیں۔

بچوں کو شناختی نمبر دینا جس کے تحت اس بات کی نگرانی کی جا سکی گی کہ وہ سکول جا رہے ہیں۔ جو والدین قانون کی خلاف ورزی کریں گے ان پر بھاری جرمانے لگائے جائیں گے اور چھ ماہ کی جیل بھی ہو سکتی ہے۔

ایسی ذاتی معلومات کی ترسیل پر پابندی جو کسی شخص کی ذات کے لیے خطرہ بن سکتی ہو اور دشمن عناصر اس معلومات کو استعمال کر کے اس شخص کو نقصان پہنچا سکتے ہوں۔

وزیر داخلہ ڈارمانن نے کہا کہ ‘ہمیں اپنے بچوں کو سخت گیر اسلام پسندوں کے چنگل سے بچانا ہوگا۔’ یہ بل فرانسیسی کابینہ میں نو دسمبر کو پیش کیا جائے گا۔

فرانسیسی استاد سیموئیل پیٹی کو گذشتہ ماہ ان کے سکول کے باہر قتل کر دیا گیا تھا اور اس سے قبل ان کے خلاف انٹرنیٹ پر مہم بھی چلائی گئی تھی۔

سیموئل پیٹی

AFP
سیموئل پیٹی کو متنازع کارٹون دکھانے پر دھمکیاں مل چکی تھیں

اخبار لے مونڈ نے سیموئیل پیٹی اور ان کے ساتھی اساتذہ کے درمیان بھیجی گئی ای میلز بھی شائع کی جو پیٹی کی جانب سے کارٹون دکھائے جانے کے بعد بھیجی گئی تھیں۔

ان ای میلز میں پیٹی کہتے ہیں کہ ‘یہ بہت پریشان کن بات ہے اور بالخصوص اس لیے کہ وہ ایک ایسے خاندان کی جانب سے آئی ہیں جن کا بچہ تو میری کلاس میں بھی نہیں تھا اور میں اس کو جانتا بھی نہیں ہوں۔ یہ بہت خطرناک افواہ بنتی جا رہی ہے۔’

واضح رہے کہ اسی سال فرانسیسی صدر نے اسلام کو ایسا مذہب قرار دیا تھا جو ‘بحران میں ہے’ اور ان جریدوں کا دفاع کیا تھا جو پیغمبرِ اسلام کے خاکے شائع کرتے ہیں۔

ان بیانات کے بعد فرانسیسی صدر کے خلاف مسلم اکثریتی ممالک میں شدید تنقید کی گئی تھی اور کئی ممالک میں مظاہرین نے فرانسیسی مصنوعات کے بائیکاٹ کا مطالبہ کیا ہے۔

فرانس میں ریاستی سیکولرزم (لئی ستے) ملکی شناخت کا مرکزی جزو ہے اور عوامی مقامات اور سکولوں میں آزادی اظہار رائے بھی اسی کا حصہ ہے۔

مغربی یورپی ممالک میں سب سے زیادہ مسلمان فرانس میں رہتے ہیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 16658 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp