کیپیٹل ہل پر حملے کے بعد امریکی صدر ٹرمپ اقتدار کی منظم منتقلی کے لیے پرعزم

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

ٹرمپ کا ویڈیو پیغام
BBC
ٹرمپ کا کہنا تھا کہ ان کی توجہ اقتدار کی بلارکاوٹ اور منظم طریقے سے منتقلی پر ہے اور مفاہمت اس وقت کی ضرورت ہے
امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے حامیوں کی جانب سے کیپیٹل ہل پر ہنگامہ آرائی کے اگلے دن ایک بیان میں کہا ہے کہ وہ اقتدار کی منظم منتقلی کے عمل کے لیے پرعزم ہیں تاہم ان کے مخالفین ان کی مدتِ صدارت مکمل ہونے سے قبل ہی انھیں ہٹانے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

صدر ٹرمپ کا یہ بیان ٹوئٹر پر شائع کیا گیا اور اسے ان کی جانب سے عوامی سطح پر انتخابی شکست تسلیم کرنے کا پہلا اظہار سمجھا جا رہا ہے۔

امریکی صدر کی جانب سے یہ بات ایک ایسے وقت کی گئی ہے جب ڈیموکریٹ پارٹی کی جانب سے انھیں مدت ختم ہونے سے قبل ہی عہدۂ صدارت سے ہٹانے کا مطالبہ سامنے آیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

کیپیٹل ہل پر ڈونلڈ ٹرمپ کے حامیوں کا دھاوا: کب کیا ہوا؟

بدھ کا دن صدر ٹرمپ کی سیاسی میراث کے لیے کیا معنی رکھتا ہے؟

’صدر ٹرمپ کو فوراً عہدے سے ہٹایا جائے ورنہ ان کا مواخذہ ہو سکتا ہے‘

جب جو بائیڈن کی فتح شکست میں بدلنے کے لیے صدر ٹرمپ نے حکام کو ووٹ ’تلاش‘ کرنے کو کہا

بدھ کو جو بائیڈن کی صدارتی انتخاب میں کامیابی کی توثیق کے موقع پر صدر ٹرمپ کے حامی یو ایس کیپیٹل کی عمارت میں گھس گئے تھے اور وہاں ہنگامہ آرائی کے دوران اب تک پانچ افراد کی ہلاکت کی تصدیق کی گئی ہے جن میں سے ایک خاتون پولیس کی گولی لگنے سے ہلاک ہوئی جبکہ اس واقعے میں زخمی ہونے والا ایک اہلکار ہسپتال میں ہلاک ہوا ہے۔ بقیہ تین افراد ہنگامہ آرائی کے دوران طبی وجوہات کی وجہ سے جان سے گئے۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے کیا کہا؟

جمعرات کی شام ٹوئٹر پر اپنے ویڈیو پیغام میں ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ اب جب کہ کانگریس نے انتخابی نتائج کی تصدیق کر دی ہے، نئی انتظامیہ 20 جنوری کو اپنا کام سنبھال لے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ اس صورتحال میں ’اب میری توجہ اقتدار کی بلارکاوٹ اور منظم طریقے سے منتقلی پر ہے اور مفاہمت اس وقت کی ضرورت ہے۔‘

صدر ٹرمپ نے اپنے پیغام میں ووٹر فراڈ کے بارے میں اپنے بنیاد دعوؤں کا ذکر نہیں کیا جو بدھ کو ان کے حامیوں کی جانب سے ہنگامہ آرائی کی وجہ بنے تھے۔

ڈونلڈ ٹرمپ کا یہ بھی کہنا تھا کہ انھوں نے ہنگامہ آرائی کے بعد فوراً نیشنل گارڈ کی تعیناتی کے احکامات دے دیے تھے تاہم کچھ امریکی ذرائع ابلاغ کے مطابق انھوں نے اس سلسلے میں ہچکچاہٹ دکھائی تھی جس پر نائب صدر کی جانب سے یہ احکامات دیے گئے تھے۔

امریکی صدر کا یہ پیغام ان کی جانب سے باقاعدہ انتخابی شکست تسلیم کرنے سے نزدیک ترین چیز ہے۔ اس سے قبل وہ یہی کہتے رہے ہیں کہ وہ صدارتی انتخاب جیت چکے ہیں اور نومبر میں انھوں نے ایک ٹویٹ میں کہا تھا کہ بائیڈن کی الیکشن میں فتح کی وجہ انتخاب میں دھاندلی ہونا تھی۔

نیسنی پلوسی

Getty Images
نینسی پلوسی نے یہ بھی کہا ہے کہ اگر نائب صدر اس سلسلے میں اقدام نہیں کرتے تو وہ ایوانِ نمائندگان میں دوسری مرتبہ صدر ٹرمپ کے مواخذے کی کارروائی کے لیے اجلاس بلا سکتی ہیں

ٹرمپ کو صدارت سے ہٹانے کا مطالبہ کون کر رہا ہے؟

امریکی کانگریس کے دونوں ایوانوں میں صدر ٹرمپ کے مخالفین نے بدھ کو کپیٹل ہل میں ان کے حامیوں کی جانب سے کیے جانے والے حملے کے بعد انھیں عہدے سے ہٹانے کا مطالبہ کیا ہے۔

ایوانِ نمائندگان کی سپیکر نینسی پلوسی اور سینیٹ میں ڈیموکریٹ پارٹی کے قائد چک شومر نے نائب صدر مائیک پینس اور صدر ٹرمپ کی کابینہ پر زور دیا ہے کہ وہ ’بغاوت پر اکسانے پر‘ صدر کو ان کے عہدے سے ہٹا دیں۔

ایک مشترکہ بیان میں ان کا کہنا تھا کہ ’صدر کے خطرناک اقدامات کے بعد ضروری ہے کہ انھیں فوری طور پر عہدے سے ہٹا دی جائے۔‘

ان رہنماؤں نے اس سلسلے میں امریکی آئین کی 25ویں ترمیم کے استعمال کی بات کی ہے جس کے تحت اگر صدر ذہنی یا جسمانی بیماری کی وجہ سے کام کرنے سے قاصر ہو تو نائب صدر اس کی جگہ لے سکتا ہے۔

تاہم اس شق کو لاگو کرنے کے لیے نائب صدر پینس اور کابینہ کے کم از کم آٹھ اراکین کو ساتھ ملنا ہو گا اور بظاہر ایسا ممکن دکھائی نہیں دیتا۔

نینسی پلوسی نے یہ بھی کہا ہے کہ اگر نائب صدر اس سلسلے میں اقدام نہیں کرتے تو وہ ایوانِ نمائندگان میں دوسری مرتبہ صدر ٹرمپ کے مواخذے کی کارروائی کے لیے اجلاس بلا سکتی ہیں۔

تاہم اس مواخذے کی کامیابی کے لیے بھی ڈیموکریٹس کو سینیٹ میں دو تہائی اکثریت درکار ہو گی جو کہ ان کے پاس نہیں ہے۔

کیپیٹل ہل

Getty Images
یہ منظر کیپیٹل ہل کے اندر کا ہے جہاں پولیس نے ایوان کے ممبران سے کہا تھا کہ فرش پر لیٹ جائیں

استعفوں کی لہر

جمعرات کی شام وزیرِ تعلیم بیٹسی ڈیووس ٹرمپ کابینہ کا وہ دوسری رکن بنیں جنھوں نے کیپیٹل ہل پر ہنگامہ آرائی کے بعد اپنے عہدے سے استعفی دیا ہے۔

انھوں نے اپنے استعفے میں صدر کو بدھ کو پیش آنے والے واقعے کے لیے ذمہ دار قرار دیا۔

ان سے قبل وزیرِ ٹرانسپورٹ الین چاؤ نے بھی یہ کہتے ہوئے استعفیٰ دے دیا تھا کہ اس ہنگامہ آرائی نے انھیں بری طرح پریشان کیا ہے۔

اس سے قبل ٹرمپ انتظامیہ کے اور بھی متعدد ارکان نے استعفیٰ دیا جن میں خصوصی ایلچی مائیک ملونے، سینیئر سکیورٹی افسر اور خاتون اوّل کی پریس سیکریٹری شامل ہیں۔

ان کے علاوہ اور بہت سے جونیئر افسران نے بھی استعفے دیے ہیں۔

امریکہ

Getty Images

ہنگامہ آرائی کے دوران پولیس کا کردار

خیال رہے کہ بدھ کو کانگرس کے مشترکہ اجلاس کے دوران کیپیٹل ہل پر ہونے والے حملے اور ہنگامہ آرائی کے بعد اب تک 68 افراد کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔

اس وقت پولیس کی جانب سے صورتحال سے نمٹنے کے لیے کیے جانے والے اقدامات پر بہت تنقید کی جا رہی ہے۔ کہا جا رہا ہے کہ پولیس اس پرتشدد ہنگامہ آرائی کو روکنے میں ناکام ہوئی۔

ادھر کیپیٹل کی پولیس، یو ایس سی پی کے سربراہ کا کہنا ہے کہ ان کے افسران نے مجرمانہ انداز میں کیےن جانے والے فساد کا سامنا کیا۔ انھوں نے اپنے افسران کی کارروائی کو سراہا اور انھیں بہادر کہا۔

تاہم نینسی پلوسی نے انھیں اپنے عہدے سے مستعفی ہونے کا کہنا ہے اور واشنگٹن ڈی سی کی پولیس یونین نے کہا ہے کہ کیپیٹل ہل میں یو ایس سی پی کی لیڈر شپ اس حملے کے لیے نہ تو عددی اعتبار سے اور نہ ہی وسائل کے لحاظ سے تیار تھی۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 17382 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp