انڈیا: سپریم کورٹ کا زرعی قوانین کے نفاذ پر حکمِ امتناعی

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

کسان
EPA
انڈیا کی سپریم کورٹ نے تین نئے زرعی قوانین کے نفاذ پر غیر معینہ مدت کے لیے حکمِ امتناعی جاری کیا ہے اور احتجاج کرنے والے کسانوں اور حکومت سے بات چیت کے لیے ماہرین کی ایک کمیٹی تشکیل دی ہے۔

کسان یونین سپریم کورٹ کے فیصلے پر بات چیت کر رہی ہیں لیکن کسانوں نے اپنے ابتدائی ردعمل میں کہا ہے کہ وہ اپنے اس مطالبے پر قائم ہیں کہ ان تینوں قوانین کو واپس لیا جائے۔

چیف جسٹس ایس اے بوبڈے کی سربراہی میں عدالت عظمی کی تین رکنی بنچ نے کہا کہ وہ کسانوں کی تحریک کے نتیجے میں ہونے والے جانی و مالی نقصان سے فکرمند ہیں ۔ ‏عدالت عظمی نے کہا کہ ماہرین کی کمیٹی قائم کرنے کا مقصد اس مسئلے کو گہرائی سے سمجھنا ہے تاکہ اس تعطل کو ختم کیا جا سکے۔

مزید پڑھیے:

انڈیا کے کسان آخر چاہتے کیا ہیں؟

کیا انڈیا میں کسان غریب سے غریب تر ہوتے جا رہے ہیں؟

بینچ نے مزید وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ماہرین کا پینل حکومت اور کسانوں کے درمیان ثالثی کا کردا ر نہیں ادا کرے گا بلکہ مرکزی حکومت اور کسان تنظیموں سے بات چیت کے بعد کوئی حل نکالنے کی کوشش کرے گا۔ کسانوں کے درمیان مذاکرات کے اب تک آٹھ دور ہو چکے ہیں لیکن ابھی تک کوئی کامیابی نہیں مل سکی ہے۔

اس پینل میں بھارتی کسان یونین کے بھوپیندر سنگھ مان، شیتکاری سنگٹھن کے انل گنوت، فوڈ پالیسی ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے ڈاکٹر پرمود کمار جوشی اور زرعی ماہر اقتصادیات اشوک گولاٹی شامل ہیں۔

حکومت نے گذشتہ ستمبر میں تین نئے زرعی قوانین منظور کیے تھے جن کے تحت اناج کی سرکاری منڈیوں کو نجی تاجروں کے لیے کھول دیا گیا ہے۔ اناج کی ایک مقررہ قیمت کی سرکاری ضمانت کے نظام کو ختم کر دیا گیا۔ اس کی جگہ کسانوں کو اپنا اناج کہیں بھی فروخت کرنے کی آزادی دی گئی ہے۔ کنٹریکٹ کھیتی کا بھی نظام شروع کیا گیا ہے جس کے تحت تاجر اور کمپنیاں کسانوں سے ان کی آئندہ فصل کے بارے میں پیشگی سمجھوتہ کر سکتی ہیں۔

کسان

AFP

کسانوں کو خدشہ ہے کہ سرکاری منڈیوں کی نجکاری سے تاجروں اور بڑے بڑے صنعتکاروں کی اجارہ داری ‍قائم ہو جائے گی اور مقررہ قیمت کی سرکاری صمانت نہ ہونے کے سبب انہیں اپنی پیداوار کم قیمت پر فروخت کرنے کے لیے مجبوبر ہونا پڑے گا۔ انہیں یہ بھی خدشہ ہے کہ کنٹریکٹ کھیتی سے رفتہ رفتہ ان کی زمینوں پر بڑی بڑی کمپنیوں کا قبضہ ہو جائے گا۔

حکومت کا کہنا ہے کہ ان قوانین سے کسانوں کو کھلی منڈی حاصل ہو جائیں گی جس سے وہ اپنی پیداوار کی بہتر قیمت حاصل کر سکیں گے۔ لیکن کسان اس جواب سے مطمئن نہیں ہیں اور وہ انہیں پوری طرح واپس لینے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

ہزاروں کسان دلی کے نواح میں گذشتہ ڈیڑھ مہینے سے احتجاج میں بیٹھے ہوئے ہیں۔ انھوں نے یومِ جمہوریہ کے موقع پر 26 جنوری کو دلی میں کسان ٹریکٹر ریلی نکالنے کی کال دی ہے۔ اس روز دلی میں یومِ جمہوریہ کی پریڈ منعقد ہوتی ہے۔ سپریم کورٹ نے اس ریلی پر روک لگانے کے لیے دلی پولیس کی عزرداری کے سلسلے میں سبھی فریقوں کو نوٹس جاری کیا ہے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 17387 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp