کولمبیا میں ایک ویب سائٹ جہاں خونی ماضی والی محل نما گھر برائے فروخت

میگن جینٹسکی - میڈیلن

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  


Art Deco mansion

Megan Janetsky
مونٹیکیسینو مینشن کو اپنی خونیں تاریخ کی وجہ سے فروخت کرنا مشکل تھا جس کی وجہ سے یہ شاندار عمارت خراب ہونے لگی تھی

کسی بھی ویب سائٹ پر جائیداد کی فروخت کے اشتہارات ایسے نمودار ہوتے ہیں جیسے یہ کوئی پراپرٹی کی ویب سائٹ ہو۔

اسی سلسلے میں مجھے معلوم ہوا کہ کولمبیا کے کریبیئن ساحل پر تین خواب گاہوں، دو غسل خانوں اور فیروزی رنگ کے سوئمنگ پول والا اپارٹمنٹ کرائے کے لیے خالی ہے۔

پاناما کی سرحد کے قریب جنگل کے سائے میں چار کمروں، چار غسل خانوں اور لکڑی کے فرش والا مکان۔ یہ وسیع و عریض آرٹ ڈیکو مینشن کولمبیا کے دوسرے بڑے شہر میڈیلن میں واقع ہے۔

مگر ایک مسئلہ ہے: یہ جگہیں دائیں بازو کی نیم فوجی ملیشیا اور بائیں بازو کی ریولوشنری آرمڈ فورسز آف کولمبیا یا ایف اے آر سی (فارک) کے جنگجوؤں کی ملکیت رہی ہیں جو کولمبیا کی کئی دہائیوں پر محیط لڑائی میں ایک دوسرے سے نبرد آزما رہے۔

کولمبیا کی حکومت نے فروری میں ایک آن لائن ریئل اسٹیٹ ایجنسی قائم کی جس کا مقصد ایسے 1600 مکانوں یا دوسری جائیدادوں کو فروخت کرنا تھا جو حکومت کے قبضے میں آ چکے تھے یا مسلح گروہوں نے صلح کے بعد انھیں حکومت کے حوالے کر دیا تھا۔

خیال ہے کہ اس املاک کی فروخت سے 140.3 ملین ڈالر حاصل ہوں گے جنھیں جنگ کے دوران متاثر ہونے والے ستّر لاکھ افراد کی بحالی پر خرچ کیا جائے گا۔

کولمبیا میں متاثرین کے لیے کام کرنے والے یونٹ کے مِگویل اوینڈانو کا کہنا ہے کہ ان میں سے بعض مکانات کی فروخت یا انھیں کرائے پر چڑھانا انتہائی مشکل ہے۔

2018 میں ان کی فروخت کے آغاز سے اب تک صرف 12 مکانات ہی فروخت ہوئے ہیں۔

مِگویل کہتے ہیں کہ قوم کے زخم آہستہ آہستہ مندمل ہو رہے ہیں اور ایسے اس اسٹیٹ ایجنسی کی کوشش ہے کہ ان جائیدادوں کی فروخت میں شفافیت پیدا کی جائے تاکہ ان کے ’خونی ماضی‘ سے لوگوں کی توجہ ہٹائی جا سکے۔

ان میں سے کئی مکانات دیہی علاقوں میں واقع ہیں جہاں فارک جنگجوؤں اور حکومت کے درمیان امن معاہدہ ہونے کے باوجود لڑائی جاری ہے۔

Bay window

Megan Janetsky
سول انجینیئر سرگیو آرٹِز کو امید ہے کہ اس حویلی کے تاریک ماضی کے باوجود اس کا مستقبل روشن ہو سکتا ہے

کئی جائیدادیں محفوظ علاقوں میں بھی واقع ہیں مگر ان کا پُرتشدد ماضی ان کے آڑے آتا ہے، جیسا کہ میڈیلِن میں مونٹیکیسِنو مینشن۔

سنگ مرمر سے مزین یہ محل نما حویلی گنجان آباد پہاڑی شہر میں واقع ہے اور ماہانہ 4,700 ڈالر کرایے پر دستیاب ہے۔ اس میں 12 کمرے اور 13 غسل خانے اور وہ سب کچھ ہے جس کا آپ کسی محل میں تصور کر سکتے ہیں۔

اس حویلی کا سابق مالک نیم فوجی ملیشیا گروپ یونائیٹڈ سیلف ڈیفنس فورسز آف کولمبیا کے بانیوں میں سے ایک تھا۔ جس مقام پر یہ تعمیر کیا گیا وہاں کبھی خون آشام سانحے نے جنم لیا تھا۔

ملیشیا کے قائدین یہاں قتل عام اور حملوں کے منصوبے بنایا کرتے تھے، لوگوں کو ایذائیں دی جاتی تھیں اور خطرناک جنگجو یہاں تربیت پاتے تھے۔

میگوِل کہتے ہیں کہ ’اس محل جیسا دوسرا نہیں ہے۔ یہ تین ہیکٹر پر پھیلا ہوا ہے اور میڈیلِن کے سب سے اچھے علاقے میں واقع ہے۔ پھر بھی اس کی فروخت ناممکن ہے۔‘

Stairs

Megan Janetsky
ایجنسی گزشتہ دو ماہ میں ایسے ہی دس مکان فروخت کر چکی ہے اور اسے امید ہے کہ ان میں ایک بار پھر زندگی لوٹ آئے گی

سول انجینیئر سرگئی اورٹِز اس کے خونریز ماضی کو بھلا کر اس کے شاندار مستقبل کے امکانات کو دیکھتے ہیں۔

باون سالہ سرگئی، جن کا اپنا خاندان اس جنگ میں متاثر ہوا، کہتے ہیں کہ وہ اس جگہ کو کرائے پر لے کر اس کے احاطے میں ورزش کی جگہ اور پارک بنائیں گے جو عام لوگوں کے لیے کھلا ہوگا۔

ان کا کہنا ہے کہ اگر ان کی بولی منظور ہوگئی تو وہ یہاں جنگ سے متاثر ہونے والے افراد کو ملازمت پر رکھیں گے اور ماضی کو پیچھے چھوڑنے کی کوشش کریں گے۔ ’یوں جگہ اور امن فراہم کر کے ہم اپنی قوم کی خدمت کریں گے۔‘

Rear view

Megan Janetsky

کرائسِس گروپ اِن کولمبیا سے وابستہ تجزیہ کار ایلزبتھ ڈِکنسن کا کہنا ہے کہ بڑے شہروں میں ایسی جائیدادوں کی فروخت میں کوئی مسئلہ نہیں مگر ان علاقوں میں جہاں حکومت کا کنٹرول نہ ہونے کے برابر ہے، وہاں ایسی جگہوں کی فروخت ’موت کو دعوت‘ دینے کے مترادف ہے۔

وہ کہتی ہیں کہ: ’سب جانتے ہیں کہ ان کا تعلق کس سے رہا ہے اور یقیناً ان علاقوں میں اس وابستگی کے جذبات اب بھی موجود ہیں۔‘

ایسے واقعات بھی پیش آئے ہیں کہ کرایہ داروں کو مکان چھوڑنے پر مجبور کیا گیا اور ممکنہ خریداروں کو ڈرایا دھمکایا گیا۔

Overgrown drive

Megan Janetsky

مِگویل کو امید ہے کہ وقت گزرنے اور سابق جنگجوؤں کی جائیدادیں عام لوگوں کے ہاتھ میں جانے کے ساتھ یہ مسئلہ ختم ہو جائے گا۔

اپنے قیام کے دو ماہ کے اندر اسٹیٹ ایجنسی دس جائیدادوں کی فروخت میں کامیاب رہی ہے۔

سرگئی بھی موٹیکیسینو مینشن کی کھڑکی سے باہر محل کے احاطے پر نظر ڈالتے ہوئے ایسی ہی توقعات رکھتے ہیں۔

وہ درختوں اور جھاڑیوں سے بھری ہوئی ایک پٹی کی جانب اشارہ کرکے کہتے ہیں: ’یہاں ہم باغ بنائیں گے۔ ہم یہاں پھول اگائیں گے، کیوںکہ پھول زندگی کی علامت ہیں۔‘

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 18482 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp