پھٹی ہوئی جینز: انڈیا میں ننگے گھٹنوں اور ڈینم کے کپڑے کی شامت کیوں آئی ہوئی ہے؟

گیتا پانڈے - بی بی سی نیوز نئی دلی

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  


جینز

Getty Images
بالی وڈ اداکاروں میں جینز اب بھی بہت مقبول ہیں

ڈینم یعنی جینز کا کپڑا اکثر انڈیا میں دقیانوس طبقے کے نشانے پر رہتا ہے جن کے خیال میں یہ کپڑا نوجوان نسل کے عقائد خراب کرنے میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔ اب ایک مرتبہ پھر جینز خبروں کی شہ سرخیوں میں آ گیا ہے۔

جینز پر غصہ کرنے والے تازہ ترین شکایت گزار ہیں تیرتھ سنگھ روات جنھوں نے حال ہی میں انڈیا کی شمالی ریاست اترکھنڈ کے وزیراعلیٰ کا عہدہ سنبھالا ہے۔

اس ہفتے کے آغاز میں انھوں نے ‘پھٹی ہوئی جینز‘ کو نوجوانوں کے مسائل کی جڑ قرار دیا ہے۔

بچوں کے تحفظ کے لیے بنے ایک ریاستی کمیشن کے زیرِ اہتمام ایک ورک شاپ کے دوران اظہارِ خیال کرتے ہوئے انھوں نے ایک عورت کا ذکر کیا جس سے ان کی ایک پرواز پر ملاقات ہوئی تھی۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ عورت دو بچوں کے ساتھ سفر کر رہی تھی اور ‘بوٹ پہنے ہوئی تھی، اسکی جینز گھٹنوں سے پھٹی ہوئی تھی اور ان کی کلائی پر بہت سے کنگن تھے۔‘

یہ بھی پڑھیے

’حجابی فیشن‘ خواتین میں کیوں مقبول ہو رہا ہے؟

لہنگے کے بجائے پرانا پینٹ سوٹ، دلہن کی تعریف بھی، ٹرولنگ بھی

حلیمہ عدن: حجاب اوڑھنے والی خاتون کو ماڈلنگ کیوں چھوڑنا پڑی؟

وزیراعلیٰ نے سوال اٹھایا کہ ‘آپ ایک این جی او (غیر سرکاری تنظیم) چلاتی ہیں، گھٹنوں سے پھٹی ہوئی جینز پہنتی ہیں اور کھلے عام میں گھومتی ہیں۔ آپ کے ساتھ بچے ہیں، آپ انھیں کیا اقدار سیکھا رہی ہیں؟‘

تیرتھ سنگھ روات وزیراعظم نریندر مودی کی ہندو قوم پرست بھارتیہ جنتا پارٹی بی جے پی کے رکن ہیں۔ ان کے خیال میں پھٹی ہوئی جینز معاشرے کی اقدار کی تباہ کی عکاسی بھی کرتی ہے اور اس کی وجہ بھی ہے۔ انھوں نے والدین کو اپنے بچوں، خاص کر لڑکیوں کو یہ پہننے کی اجازت دینے پر تنقید کا نشانہ بنایا۔

انھوں نے کہا کہ انڈیا ’برہنہ پن اور بے حیائی‘ کی طرف جا رہا تھا جبکہ بیرونِ ممالک میں لوگ اپنے جسم ٹھیک سے ڈھانپ رہے ہیں اور یوگا کر رہے ہیں۔

تاہم ان کے یہ بیانات ملک بھر میں تنقید کا نشانہ بنے ہیں۔

حزب اختلاف کی جماعت کانگریس نے ایک بیان جاری کیا جس میں انھوں نے ان سے انڈیا کی تمام خواتین سے معافی مانگنے کا یا پھر استعفیٰ دینے کا مطالبہ کیا۔

جمعرات کو کانگریس کی سینیئر لیڈر پرینکا گاندھی نے ایک تصویر شیئر کی جس میں وزیراعظم مودی اور ان کی کابینہ کے ساتھیوں کے ‘گھٹنے نظر آ رہے تھے۔‘

https://twitter.com/priyankagandhi/status/1372559046625038338

دلی کمیشن فار ویمن کی سربراہ سوارت مالیوال نے ٹوئٹ کیا کہ تیرتھ سنگھ روات پدر شاہی کو فروغ دینے والا پروپاگنڈا کر رہے ہیں۔

https://twitter.com/SwatiJaiHind/status/1372430950735380482

ہندی زبان میں ایک ٹوئیٹ میں انھوں نے کہا کہ مسئلہ صرف ان کے الفاظ کا نہیں بلکہ سوال یہ ہے کہ انھوں نے یہ کہا کیسے۔ ‘انھوں نے ایک عورت کو اوپر سے نیچے تک گھورنے کا اعتراف کیا ہے۔‘

تیرتھ سنگھ روات کے بیان کے بعد ٹوئٹر پر بہت سی انڈین خواتین اور کچھ مردوں نے غم و غصے کا اظہار کیا ہے اور اپنی پھٹی ہوئی جینز پہننے تصاویر شیئر کیں جس کی وجہ سے ہیش ٹیگ #RippedJeansTwitter اور #RippedJeans کئی گھنٹوں تک ٹرینڈ کرتے رہے۔

https://twitter.com/DeekshaNRaut/status/1372231138404630529

https://twitter.com/IamBhumikaC/status/1372240710607331330

کچھ لوگوں نے تیرتھ سنگھ روات کو اپنی ٹوئیٹس میں ٹیگ بھی کیا اور کچھ نے انھیں مشورہ دیا کہ وہ زیادہ اہم مسائل جیسے کہ ‘پھٹی ہوئی معیشت‘ اور خواتین کے تحفظ کے بارے میں غور کریں۔

جمعے کے روز تیرتھ سنگھ روات نے معافی تو مانگی لیکن ان کا کہنا تھا کہ اگر ان کے بیان سے کسی کی دل آزاری ہوئی ہے تو وہ معذرت خواہ ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ان کی نیت کسی کی بےعزتی کرنا نہیں تھا اور ہر کسی کو حق ہے کہ وہ جو چاہے پہننے۔

مگر اترکھنڈ کے وزیراعلی پہلے انڈین سیاستدان نہیں جو خواتین کو کپڑوں کے بارے میں مشورے دے رہے تھے۔

پانچ سال پہلے بھی اُس وقت کے وزیرِ ثقافت مہیش شرما نے انڈیا آنے والے سیاحوں کو ایک تنبیہہ دی تھی جس میں لکھا تھا کہ وہ ڈریس یا سکرٹ نہ پہنیں اور چھوٹے شہروں میں رات کو باہر نہ نکلیں۔

اس کے ساتھ ہی کئی ایسی مثالیں ہیں جہاں معروف انڈین سیاستدان ریپ اور جنسی ہراسانی کو عورتوں کے کپڑوں سے جوڑتے ہیں۔

سنہ 2014 میں معروف گلوکار کے جے یسوداس کو اس وقت تنقید کا سامنا کرنا پڑا جب انھوں نے کہا تھا کہ لڑکیوں کو جینز نہیں پہننی چاہیے کیونکہ یہ غیرمناسب رویے کو جنم دیتی ہیں۔

گذشتہ ہفتے اترپردیش میں ایک دیہاتی کونسل نے اعلان کیا تھا کہ سکرٹ اور جینز میں ملبوس خواتین اور شارٹس پہنے مردوں کا سماجی بائیکاٹ کیا جائے گا۔

ایک دہائی قبل اترپردیش کے بتیسہ نامی گاؤں میں لڑکیوں کے جینز پہننے اور موبائل فون استعمال کرنے پر پابندی لگائی گئی تھی۔

سنہ 2014 میں 46 دیہات کے بااثر افراد کے ایک اجلاس میں بھی ایسی ہی پابندی لگائی گئی تھی۔ تین سال بعد ہریانہ اور راجھستان میں بھی خواتین کے موبائل فون رکھنے اور جینز پہننے پر پابندی لگائی گئی۔

تو کیا وجہ ہے کہ انڈین سیاست دان اس کپڑے کے اتنے خلاف ہیں؟


Bollywood actress Priyanka Chopra in a pair of ripped jeans

Gotham

جینز کا کپڑا یعنی ڈینم انڈیا میں 1980 کی دہائی میں مقبول ہونا شروع ہوا اور ملک بھر میں نوجوان اسے بہت پسند کرنے لگے ہیں۔

انڈیا میں ڈینم کی مارکیٹ تقریباً چار ارب ڈالر کی ہے اور 2028 تک اس کے 12.6 ارب ڈالر تک پہنچنے کی توقع ہے۔

گذشتہ کچھ سالوں میں وہ بالی وڈ ستاروں سے لے کر عام لوگوں، سبھی میں انتہائی مقبول ہو گئی ہیں۔

مگر فیشن ڈزائنر آنند بشن کا کہنا ہے کہ انڈینز کا جینز سے رشتہ ‘بیک وقت پیار اور نفرت‘ کا ہے۔

وہ کہتے ہیں کہ ‘نوجوانوں کے یہ کول اور زبردست لگنے کا معاملہ ہے مگر ان کے والدین کو یہ سمجھ نہیں آتی کہ ان کے بچے پھٹے ہویے لباس کو کیوں ترجیح دیتے ہیں۔‘

Denim is the choice of clothing for many young Indians

Getty Images

مگر والدین کا اپنے بچوں کے طنزیہ لباس پر تنقید کرنا اپنی جگہ مگر عوامی حکام کا اسے معاشرے کے مسائل کی بنیاد دینا بالکل مختلف ہے۔

بسن کہتے ہیں کہ ‘یہ خواتین کو کنٹرول کرنے کی ایک کوشش ہے۔ یہ بات بہت تھکا دینے والی ہے کہ کیسے یہ پدر شاہی میں ڈونے مرد روایت کا بہانہ کرتے ہوئے خواتین کیا پہنتی ہیں اسے کنٹرول کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔‘

وہ کہتے ہیں کہ ‘ان کے پاس کوئی نیے جواز نہیں تو وہ وہی پرانے جواز پیس کرتے ہیں کہ یہ ہماری ثقافت کا حصہ نہیں بلکہ مغرب سے آئے ہیں۔‘

ادھر تیرتھ سنگھ روات کے بیانات اور ان پر تنقید کے کچھ غیر ارادی نتائج بھی سامنے آ رہے ہیں۔ ان کی وجہ سے اب کچھ لوگوں نے پھٹی ہویی جینز پہلی مرتبہ پہننے کا ارادہ کیا ہے۔

ممبئی میں سرطان کے مریضوں کے لیے کونسلر وجی ویکاٹیش نے اپنی ایک تصویر ٹوئٹر پر لگائی۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ ان کے بیان سے اس قدر ناراض ہوئیں کہ انھوں نے ایک جینز کو خود سے پھاڑ کر پہننا شروع کر دیا۔

وہ کہتی ہیں کہ میں 69 سال کی ہوں اور عام طور پر شاڑھی پہنتی ہوں۔ ‘میں ہمیشہ سوچتی تھی کہ بچے پھٹی ہویی جینز کیوں پہنتے ہیں۔ مگر تیرتھ سنگھ روات کے عورت مخالف بیان پر میں اتنا غصہ آیا کہ میں نے غصے میں اپنی جینز پھاڑی اور اسے پہنے ٹوئٹر پر ایک تصویر شیئر کی۔‘

https://twitter.com/vijivenkatesh/status/1372403763164684293

میں نے ان سے پوچھا کہ کیا اب انھیں اس حوالے میں کوئی ندامت ہے؟

انھوں نے ہنستے ہوئے کہا کہ ’بالکل نہیں۔ یہ میرے گھٹنوں پر آرام دے ہیں اور ابھی بھی اچھی نظر آتی ہیں۔‘

ان کا مزید کہنا تھا کہ ’مگر سنجیدہ بات یہ ہے کہ خواتین کیا پہنتی ہیں یہ صرف ان کا ذاتی معاملہ ہے کسی اور کا نہیں۔‘

‘تیرتھ سنگھ روات کو اس کی فکر نہیں ہونی چاہیے۔ انھیں اترکھنڈ میں پگھلتے گلیشیئرز کا خیال کرنا چاہیے۔ ان کی ریاست کن ماحولیاتی مسائل کا شکار ہے یہ سوچیں نہ کہ خواتین کیا پہنتی ہیں۔‘

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 18481 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp