برازیل کے صدر دس روز مسلسل ہچکیوں کا شکار رہنے کے بعد ہسپتال داخل

برازیل کے صدر جیر بولسونارو کے دفتر کا کہنا ہے کہ گذشتہ دس روز سے آنے والی مسلسل ہچکیوں کے باعث برازیل کے صدر کو ایمرجنسی سرجری کی ضرورت پیش آ سکتی ہے۔

صدر جیر کو مقامی ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے جہاں ان کی آنت میں ممکنہ رکاوٹ کی جانکاری کے لیے ٹیسٹ کیے جائیں گے۔

برازیل کے 66 سالہ صدر نے ایک ٹویٹ کے ذریعے عوام کو آگاہ کیا ہے کہ اگر ’خدا نے چاہا تو وہ جلد واپس آئیں گے۔‘

سنہ 2018 کے انتحابات کے دوران اُن کے پیٹ میں خنجر کے ذریعے ہونے والے حملے کے بعد سے برازیل کے صدر کی صحت سے متعلق تشویش پائی جاتی رہی ہے۔

یاد رہے کہ سنہ 2018 میں وہ چاقو کے حملے میں بری طرح زحمی ہو گئے تھے اور ان کے جسم کا 40 فیصد خون بہہ گیا تھا۔ خنجر کے حملے کے بعد سے اب تک ان کی متعدد آپریشن ہو چکے ہیں۔

برازیل کے صدر بدھ کی صبح برازیلا میں معائنے کے لیے ایک فوجی ہسپتال گئے تھے جہاں ڈاکٹروں نے اُن سے کہا کہ وہ اگلے 24 سے 48 گھنٹوں تک ڈاکٹرز کے زیر نگرانی رہیں گے۔

لیکن بعد میں صدارتی دفتر نے آگاہ کیا کہ جس سرجن نے سنہ 2018 میں صدر کی سرجری کی تھی انھوں نے صدر کو ساؤ پاؤلو ہسپتال میں مزید ٹیسٹ اور ممکنہ آپریشن کے لیے داخل ہونے کا مشورہ دیا ہے۔

برازیل کی اطلاعات کی منیجر فابیو فاریہ نے رپورٹرز کو بتایا کہ صدر بولسونارو کو ساؤ پالو ہسپتال منتقل کرنے سے قبل بے ہوش کیا گیا تھا۔ صدر کے بیٹے فلاویو نے سی این این برازیل کو بتایا کہ ان کے والد کا ایک آپریشن ہوا ہے اور ان کے معدے سے احتیاطً کچھ مواد نکالا گیا ہے۔

فلاویو نے مزید کہا کہ ان کے والد کو بولنے میں مشکلات کا سامنا تھا لیکن اگر اس کے لیے انھیں سرجری کی ضرورت پڑی تو وہ زیادہ سنگین نوعیت کی نہیں ہو گی۔

یہ بھی پڑھیے

خاتون صحافی پر خبر حاصل کرنے کے لیے سیکس کی پیشکش کا الزام برازیلی صدر کو مہنگا پڑ گیا

برازیل میں کووڈ سے پانچ لاکھ سے زیادہ ہلاکتیں، ملک بھر میں مظاہرے

ویکسینز میں پائی جانے والی عجیب و غریب اشیا

صدر بولسونارو نے اس سے قبل ہسپتال کے بستر سے اپنی ایک تصویر بھی ٹویٹ کی جس میں ان کی چھاتی پر مختلف قسم کے طبی آلات اور سینسر لگے نظر آ رہے تھے اور پادری کے حلیے سے ملتا جلتا شخص اُن کے ہسپتال کے بستر کے پاس کھڑا دکھائی دے رہا ہے۔

اپنے ڈھائی سالہ متنازع دور صدارت کے بعد آج کل بولسونارو کو ملک میں کورونا وبا سے نمٹنے کی حکمت عملی پر سخت تنقید کا سامنا ہے۔ رواں ماہ کے آغاز میں سینکڑوں افراد نے کورونا ویکسین کی خریداری میں کرپشن کے الزامات پر سڑکوں پر مظاہرے کیے تھے۔

برازیل کے صدر کو اس وبا کے دوران قومی سطح پر حکمت عملی، ان کی ویکسین، لاک ڈاؤن اور ماسک کے استعمال پر شکوک و شبہات کے باعث سخت تنقید کا سامنا ہے۔ گذشتہ ماہ برازیل میں کورونا سے ہونے والی اموات کی تعداد پانچ لاکھ سے تجاوز کر گئیں تھیں جو دنیا میں امریکہ کے بعد دوسرے نمبر پر ہیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words