محمد علی سدپارہ: کے ٹو پر لاپتہ ہونے والے پاکستانی کوہ پیما کی لاش مل گئی

منزہ انوار - بی بی سی اردو ڈاٹ کام، اسلام آباد

دنیا کے دوسرے بلند ترین پہاڑ کے ٹو کو سردیوں میں سر کرنے کی کوشش کے دوران لاپتہ ہونے والے پاکستانی کوہ پیما علی سد پارہ کی لاش کے ٹو پہاڑ کے ’بوٹل نیک‘ کے قریب مل گئی ہے۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق وزیر اطلاعات گلگت بلتستان فتح اللہ خان نے تصدیق کی ہے کہ محمد علی سدپارہ اور جان سنوری کی لاشیں مل گئی ہیں۔ ایک بیان میں انھوں نے کہا ہے کہ لاشوں کو فوج کے ہیلی کاپٹروں کے ذریعے منتقل کیا جائے گا۔

یاد رہے کہ پاکستانی کوہ پیماہ علی سدپارہ، آئس لینڈ کے جان سنوری اور چلی کے ہوان پابلو موہر کو پانچ فروری کو آٹھ ہزار میٹر سے زیادہ بلندی پر کے ٹو کی چوٹی کے قریب آخری مرتبہ علی سدپارہ کے بیٹے ساجد سدپارہ نے دیکھا تھا جو آکسیجن ریگولیٹر کی خرابی کی وجہ سے مہم ادھوری چھوڑ کر واپس آنے پر مجبور ہو گئے تھے۔

علی سدپارہ اور ساجد سدپارہ اس مہم میں بطور ہائی ایلٹیچیوڈ پورٹر شریک تھے۔

تقریباً دو ہفتے تک زمینی اور فضائی ذرائع کا استعمال کرنے کے بعد حکام نے 18 فروری کو علی سدپارہ سمیت لاپتہ ہونے والے تین کوہ پیماؤں کی موت کی تصدیق کرتے ہوئے ان کی تلاش کے لیے جاری کارروائی ختم کرنے کا اعلان کر دیا تھا۔

یاد رہے کہ ساجد سدپارہ اپنے والد علی سدپارہ، آئس لینڈ کے جان سنوری اور چلی کے ہوان پابلو موہر کی لاشوں کی تلاش کے سلسلے میں کے ٹو پر موجود ہیں اور ان کے ہمراہ کینیڈین فوٹو گرافر اور فلم میکر ایلیا سیکلی اور نیپال کے پسنگ کاجی شرپا بھی ہیں۔

اس مہم کے انتظامات کرنے والی کمپنی جیسمن ٹورز کے بانی اور پاکستان میں ہیڈ آف ریسکیو مشن فار پاٹو (پاکستان ٹور آپریڑ ایسوسی ایشن) اصغر علی نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے تصدیق کی ہے کہ ملنے والی تینوں لاشیں علی سدپارہ، جان سنوری اور جان پابلو موہر کی ہی ہیں۔

ان کے مطابق آرمی کی طرف سے ان کے لئیزن آفیسر جن کا بذریعہ ریڈیو ساجد سدپارہ سے رابطہ ہے، تصدیق کی ہے کہ یہ لاشیں علی سدپارہ، جان پابلو موہر اور جان سنوری کی ہیں۔

یاد رہے کہ پہلے دو لاشوں کے ملنے کی اطلاعات موصول ہوئی تھیں لیکن کے ٹو پر مہمات کا انتظام کرنے والی کمپنیوں نے تیسری لاش ملنے کی بھی تصدیق کی ہے۔

اس سے پہلے کے ٹو پر مہمات کا انتظام کرنے والی کمپنی مہاشا برم ایکسپیڈیشن کے مالک محمد علی نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے علی سدپارہ کی لاش ملنے کی تصدیق کی تھی۔

مہاشا برم ایکسپیڈیشن کے مالک محمد علی نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے تصدیق کی کہ ان کی ٹیم میں شامل رسیاں لگانے والے شرپاؤں کو ’بوٹل نیک‘ کے قریب دو لاشیں ملی ہیں جن میں سے ایک کی شناخت کر لی گئی ہے اور وہ محمد علی سد پارہ کی لاش ہے۔ دوسری لاش کی شناخت ابھی تک نہیں ہو سکی ہے۔

محمد علی کے مطابق ان کی مختلف ممالک کے 19 کوہ پیماؤں پر مشتمل ٹیم کے ٹو کی جانب رواں دواں تھی اور اس دوران سات شرپا (جن میں ان کی ٹیم کے چار شرپا) بھی شامل ہیں، سب سے پہلے رسیاں فکس کرنے اوپر جا رہے تھے۔ جب یہ سات افراد سمٹ کی جانب رسی فکس کرنے گئے تو کیمپ فور سے آگے بوٹل نیک کے قریب پہنچنے پر انھیں پہلے ایک لاش ملی اور گھنٹے بعد تقریباً سو میٹر اوپر جا کر دوسری لاش ملی۔

محمد علی سدپارہ کی لاش کی شناخت کیسے کی گئی ہے؟

محمد علی سدپارہ اور ان کے ساتھیوں کو پیش آنے والے حادثے کو تقریباً پانچ ماہ گزر چکے ہیں۔

اس سوال کے جواب میں کہ اتنا عرصے گزر جانے کے بعد ان شرپاؤں نے محمد علی سدپارہ کی لاش کیسے شناخت کی؟

محمد علی کے مطابق جس وقت ان کی ٹیم بیس کیمپ سے نکل رہی تھی اس وقت محمد علی سد پارہ کے بیٹے ساجد سد پارہ نے انھیں کچھ تصاویر اور نشانیاں بتائیں تھیں جن کی بنا پر علی سد پارہ کی لاش کی شناخت کی گئی ہے۔

محمد علی نے بتایا تھا کہ ان کی ٹیم نے ساجد سدپارہ تک یہ خبر پہنچا دی ہے اور لاشوں کو نیچے لانے کے متعلق فیصلہ ساجد ہی کریں گے۔

یہ بھی پڑھیے

کے ٹو: لاپتہ کوہ پیماؤں کو کیا حادثہ پیش آیا ہو گا، سرچ مشن میں کیا ہو رہا ہے؟

کے ٹو کا ’ڈیتھ زون‘ کیا ہے اور کوہ پیما وہاں کتنے گھنٹے زندہ رہ سکتے ہیں؟

کوہ پیماؤں کے چوٹی سر کرنے کے دعوے کی تصدیق کیسے ہوتی ہے؟

لاشوں کی تصدیق سے متعلق سوال پر پاکستان میں ہیڈ آف ریسکیو مشن فار پاٹو (پاکستان ٹور آپریڑ ایسوسی ایشن) علی اصغر پورک کا کہنا تھا کہ ’اور کوئی ہو ہی نہیں سکتا، ہمیں سب ہسٹری معلوم ہوتی ہے کہ کون کب گیا، کون کوہ پیمائی کر رہا ہے کون نہیں کر رہا اور کون ہلاک ہوا ہے۔۔۔ ہم ہر سال مہمات کرتے ہیں اور ہمیں ساری معلومات ہوتی ہیں۔‘

اصغر علی پورک نے یہ بھی بتایا کہ ’کل آرمی کے ہیلی کاپٹر جائیں گے اور سٹنگ آپریشن (جس میں رسیوں کی مدد سے لاش اوپر لائی جاتی ہے) کے ذریعے لاشوں کو بیس کیمپ تک لانے کی کوشش کی جائے گی۔

انھوں نے یہ بھی بتایا کہ آج سے قبل پاکستان میں ایسا آپریشن کبھی نہیں کیا گیا کہ اتنی اونچائی سے لاشوں کو نیچے لایا جائے۔ اصغر علی کے مطابق اس آپریشن کے لیے آرمی کو اپنے ہیلی کاپٹر میں سیٹیں، پٹرول کم کر کے ہیلی کاپٹر کا وزن کم کرنا پڑتا ہے اور یہ انتہائی خطرناک آپریشن ہوتا ہے۔

’اگر آرمی کامیاب ہو گئی تو دنیا میں اتنی اونچائی سے لاش نیچے لانے کا یہ ایک ریکارڈ آپریشن ہو گا۔‘

اپنے والد سمیت تینوں کوہ پیماؤں کی موت کا اعلان ساجد سدپارہ نے سکردو میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس میں کیا تھا۔ اس وقت ساجد کا کہنا تھا کہ ‘کے ٹو نے میرے والد کو ہمیشہ کے لیے اپنی آغوش میں لے لیا ہے۔’

اس وقت بیس کیمپ سے سکردو پہنچنے پر علی سدپارہ کے بیٹے ساجد سد پارہ نے بتایا تھا کہ جب انھیں ڈیتھ زون میں 8200 میٹر کی بلندی پر ہیلوسنیسیشن شروع ہوئی اور آکسیجن ماسک کا ریگولیٹر خراب ہو جانے کے باعث انھوں نے واپس لوٹنے کا فیصلہ کیا اس وقت آخری بار انھوں نے اپنے والد علی سدپارہ کی ٹیم کو بوٹل نیک میں 8200-8300 میٹر پر بہت اچھی اور فٹ حالت میں سمٹ کی جانب رواں دواں دیکھا تھا۔

ساجد کا یہ بھی کہنا تھا کہ انھیں لگتا ہے کہ ان کے والد نے سمٹ کیا ہے (یعنی کے ٹو کی چوٹی تک پہنچے ہیں) اور ان کے ساتھ جو بھی حادثہ ہوا وہ سمٹ سے واپسی کے سفر میں بوٹل نیک یا کہیں نیچے ہوا۔

دو ہفتوں کی تلاش کے دوران محمد علی سدپارہ اور ان کے ساتھیوں کی تلاش کے لیے پاکستان فضائیہ کے جدید ٹیکنالوجی سے لیس خصوصی طیارے نے آٹھ ہزار چھ سو گیارہ میٹر سے اوپر پروازیں کی تھیں اور کے ٹو کی چاروں اطراف سے خصوصی فلم بندی اور ہائی ایچ ڈی کیمروں کی مدد سے تصاویر لی گئیں تھیں۔

سرچ آپریشن کے دوران آئس لینڈ اور چلی نے بھی سیٹلائٹ تصاویر جاری کی تھیں جس میں محمد علی سدپارہ اور ٹیم کے اس آخری مقام کی نشاندہی کی گئی تھی جہاں ان سے آخری بار رابطہ ہوا تھا۔

اس سرچ کے دوران زمینی راستوں سے بھی ان تینوں کوہ پیماؤں کی لاشیں تلاش کرنے کی کوشش کی گئی تھی تاہم اس مقصد میں کوئی کامیابی نہیں مل سکی تھی۔

اس وقت بی بی سی سے بات کرتے ہوئے مہم جو عمران حیدر تھہیم نے بھی یہی اندازہ لگایا تھا کہ جون جولائی میں سمٹ کے لیے آنے والوں کو ان تین افراد کی لاشیں ملنے کا امکان ہے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words