برٹش ایئرویز کی پرواز 149: صدام حسین نے جن مسافروں کو بطور ’انسانی ڈھال‘ استعمال کیا وہ آج بھی جواب کے منتظر ہیں

صدام حسین
Getty Images
عراق میں صدام حسین نے جن لوگوں کو انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کیا تھا وہ اب تین دہائیوں کے بعد جواب کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

وہ مسافر جو دو اگست 1990 کو کویت جانے کے لیے برٹش ایئرویز کی پرواز 149 پر سوار ہوئے تھے وہ چاہتے ہیں کہ برطانیہ کی حکومت اس واقعے کی ذمہ داری قبول کرے، معافی مانگے اور اس معاملے پر اپنی خفیہ رپورٹ منظر عام پر لائے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق ایک نئی کتاب ’آپریشن ٹروجن ہارس‘ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ لندن میں حکام نے اس پرواز کو نئے ملٹری انٹیلیجنس افسران کو کویت میں تعینات کرنے کے لیے استعمال کیا تھا۔

کتاب میں کہا گیا ہے کہ حکام یہ بات بخوبی جانتے تھے کہ اس میں شہریوں کے پکڑے جانے کا خطرہ تھا۔

معاملہ کیا ہے؟

اس کتاب کے مصنف سٹیفن ڈیوس نے بتایا ہے کہ برطانیہ کو امریکی انٹیلیجنس ڈیپارٹمنٹ سے تین گھنٹے 45 منٹ پہلے خفیہ اطلاع ملی تھی کہ عراقی ایئرپورٹ پر حملہ کرنے والے ہیں۔ اس کے باوجود طیارے کو وہاں اترنے دیا گیا حالانکہ اس رات کویت کے کنٹرول ٹاورز تمام پروازیں واپس بھیج رہے تھے۔

جہاز کے اترنے کے کچھ ہی دیر بعد بموں سے لیس عراقی جیٹ طیارے رن وے پر پہنچ گئے۔ ٹینکوں اور فوجیوں نے ایئرپورٹ کو گھیر لیا۔ اس وقت تک کویتی افواج نے ہتھیار ڈال دیے تھے۔

ملائیشیا کے شہر کوالالمپور جانے والے طیارے سے اتارے جانے والے 367 مسافروں اور عملے کے ارکان میں سے کچھ نے چار ماہ سے زائد عرصہ قید میں گزارا۔

انھیں پورے عراق میں ان مقامات پر رکھا گیا جہاں مغربی فوجی اتحادیوں کے حملوں کا خطرہ تھا۔

صدام حسین

BBC
صدام حسین فلائیٹ پر سوار ایک یرغمالی بچے کے ہمراہ۔ اس تصویر کو جاری کرنے کا مقصد دنیا کو یہ بتانا تھا کہ عراق مسافروں سے اچھا سلوک کر رہا ہے

خاموش سازش

55 سالہ بیری مینرز اس وقت اپنے ایک دوست کے ساتھ ملائیشیا جا رہے تھے۔

انھوں نے رواں ہفتے لندن میں کہا کہ جو کچھ ہوا اس کے بارے میں ’خاموشی برتنے کی سازش‘ نے حکام پر سے ان کا اعتماد ختم کر دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے

TWA85: تاریخ کی ایک طویل اور سنسنی خیز ہائی جیکنگ

صدام حسین کی بیٹی: ’میرے شوہر کے قتل کا فیصلہ میرے گھر والوں کا تھا‘

جب ہائی جیکروں کو دھوکہ دینے کے لیے پاکستان کا حیدرآباد انڈیا کا بھوج بن گیا

انھوں نے اے ایف پی کو بتایا کہ ’یہ آپ کو سکھائے جانے والے اور مغربی معاشرے کے تمام اقدار کے خلاف ہے۔‘

65 سالہ مارگریٹ ہرن نے کہا کہ ’مجھے برٹش ایئرویز پر بھروسہ تھا لیکن یہ بہت غصے دلانے والی بات ہے۔ خوش قسمتی سے میں اس معاملے سے باہر آ گئی لیکن اس کے لیے ان کا شکریہ نہیں ادا کروں گی۔‘

جان جانے کا خوف

بطور یرغمالی اُس وقت کو یاد کرتے ہوئے مینرز نے کہا کہ انھوں نے ایک دوسرے قیدی، جو کہ شمالی عراق کے دوکن ڈیم میں انجینیئر تھے، سے دوستی کر لی تھی۔

وہ خوراک کی کمی سے مسلسل پریشان رہتے تھے اور انھیں خدشہ تھا کہ محافظوں کو قیدیوں کو گولی مارنے کا حکم دے دیا جائے گا۔

انھوں نے ڈیوس کی کتاب کی ریلیز کے موقع پر کہا کہ ’آپ یہ ماننے سے انکار کرنے لگتے ہیں کہ آپ کو رہا کیا جائے گا۔ یہ جھوٹ آپ کو کمزور کرتا جاتا ہے۔‘

تباہ شدہ جہاز

Getty Images
مسافروں اور عملے کے اتر جانے کے بعد طیارے کو رن وے پر تباہ کر دیا گیا تھا

چار ماہ سے زیادہ عرصے تک قید میں رہنے کے بعد لندن واپس آنے پر مینرز پھوٹ پھوٹ کر رونے لگے تھے۔ سنہ 1992 میں ان کے ساتھی کی موت کے بعد ان کی ذہنی صحت بگڑ گئی تھی۔

انھوں نے کہا کہ ’ایسے حالات میں منفی خیالات اس قدر غالب آنا شروع ہو جاتے ہیں کہ لگتا ہے کہ دنیا میں کوئی خوشی باقی نہیں رہی۔ مجھے نہیں معلوم کہ اس کے جانے کا کتنا دکھ تھا اور کتنا عراق کا دکھ تھا، دونوں زہر کی طرح تھے۔‘

پانچ ہفتوں کی قید کے دوران ہرن کو کویت سے بصرہ، بغداد اور عراقی ریگستان کے دو حراستی مراکز میں لے جایا گیا۔ انھوں نے بتایا کہ وہ اپنے دو چھوٹے بچوں کی تصویر دیکھ کر روتی تھیں۔ بعد میں افسردگی نے اس کی جگہ لے لی۔

وہ یاد کرتے ہوئے کہنے لگيں کہ ’میں بے حس ہو چکی تھی۔ آپ چیزوں کو محسوس کرنا چھوڑ دیتے ہیں۔ آپ خوف اور اضطراب کو برقرار نہیں رکھ سکتے۔‘

ہرن نے کہا کہ ’ہم صدام کے لیے کسی تحفے کی طرح تھے۔ میں نے ان یادوں کو ایک ڈبے میں بند کیا اور کبھی پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔‘

وہ کہتی ہیں کہ ’میں دوبارہ خوف محسوس کرنا نہیں چاہتی۔‘

49 سالہ دل کے ڈاکٹر بالاسبرامنیم کو دو ہفتے تک کویت کے ایک ہوٹل میں قیدی بنا کر رکھا گیا۔

ان کا تعلق ایک ملائیشین خاندان سے تھا۔

میں پہلے جیسا نہیں رہا

بالاسبرامنیم کہتے ہیں کہ ’وہ واقعی خوفناک تھا، ایسا لگتا ہے جیسے آپ وہاں نہیں تھے۔ ہم پیچھے چھوٹ جانے والے لوگوں کے لیے خود کو مجرم سمجھ رہے تھے۔‘

مزید پڑھیے

’صدام کی پھانسی پر امریکی فوجی بھی روئے‘

اسرائیلی طیارے کو اغوا کرنے والی فلسطینی خاتون لیلیٰ خالد کو رہا کیسے کروایا گیا؟

گنگا ہائی جیکنگ: دو کشمیری نوجوان جو کھلونا پستول کی مدد سے انڈین طیارہ اغوا کر کے لاہور لے آئے

انھوں نے کہا کہ ’میں نے کویت میں کہیں اپنی جوانی کھو دی۔ مجھے اس کی فکر ہوتی ہے۔ وہ موج مستی کرنے والا بے فکرا شخص جو میں پہلے تھا، میں نے اسے کہیں کھو دیا۔‘

اس وقت کے وزیر اعظم پر گمراہ کرنے کا الزام

مارگریٹ تھیچر

Getty Images
اس وقت برطانیہ کی وزیر اعظم مارگریٹ تھیچر

ڈیوس کو کویت میں برطانوی سفارت خانے کے ایک سابق سفارتکار کی حمایت حاصل ہے جو یہ بھی دعویٰ کرتے ہیں کہ سینیئر سیاستدانوں نے انٹیلیجنس اہلکار بھیجنے کے لیے غلط منصوبہ بنا کر عام چینلز کو نظرانداز کیا۔

ڈیوس نے کہا کہ لندن کے ہیتھرو ہوائی اڈے پر پرواز میں دو گھنٹے کی تاخیر ہوئی اور اس کے لیے ایئر کنڈیشنگ کے مسائل کا حوالہ دیا جاتا ہے اور اسی کے سبب برطانوی عملے کو طیارے میں سوار ہونے دیا گیا۔

انھوں نے کہا کہ اس وقت کی وزیر اعظم مارگریٹ تھیچر نے پارلیمنٹ سے جھوٹ کہا تھا اور برٹش ایئرویز (بی اے) نے عملے اور مسافروں کو خاموش رہنے کی دھمکی دی تھی۔

اس کے متعلق برٹش ایئرویز نے اے ایف پی کے سوالات کا جواب دینے سے انکار کر دیا ہے۔ ایئر لائن اور برطانیہ کی وزارت دفاع نے ہمیشہ غفلت، سازش اور پردہ پوشی کے الزامات کی تردید کی ہے۔

سنہ 2003 میں ایک فرانسیسی عدالت نے برٹش ایئرویز کو حکم دیا کہ وہ پرواز پر سوار فرانسیسی یرغمالیوں کو 1.67 ملین یورو ادا کرے کیونکہ عدالت کے مطابق وہ طیارے کی لینڈنگ کے بعد ’اپنی ذمہ داریوں کو نبھانے میں سنگین طور پر ناکام‘ رہے تھے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words