افغانستان میں طالبان پر تنقید کرنے والے سوشل میڈیا صارفین اپنے اکاؤنٹس ڈیلیٹ کیوں کر رہے ہیں؟

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

افغانستان سوشل میڈیا
Getty Images
15 اگست 2021 تک افغان دارالحکومت کابل میں سوشل میڈیا پر کئی ایسے بااثر افغان صارفین فعال تھے جو طالبان کے پالیسوں کے سخت ترین ناقد تھے۔

لیکن 15 اگست کے بعد سے اِن اکاؤنٹس پر خاموشی سی چھا گئی ہے۔ سوشل میڈیا پر بیشتر افغان صارفین اپنے ماضی کی تصاویر، سٹیٹس اور ٹویٹس ڈیلیٹ کر رہے ہیں اور اس خوف سے کہ طالبان اُن کو ماضی کی بنیاد پر نشانہ نہ بنائیں اکثر صارفین نے سوشل میڈیا سے کنارہ کشی اختیار کر لی۔

اگرچہ کابل پر قبضے کے بعد طالبان نے ان تمام افغانوں کے لیے عام معافی کا اعلان کیا تھا جو اس سے پہلے طالبان کے خلاف لڑ رہے تھے یا جو گذشتہ حکومت کا حصہ تھے تاہم گذشتہ 36 روز میں افغانستان کے مختلف شہروں سے ایسے واقعات رپورٹ ہوئے ہیں جن میں طالبان جنگجوؤں نے سابق حکومت کے ساتھ کام کرنے والے کئی افراد کو نشانہ بنایا ہے۔

گذشتہ ہفتے طالبان کے وزیر دفاع ملا محمد یعقوب نے تسلیم کیا تھا کہ عام معافی کے اعلان کے باوجود طالبان جنگجوؤں کی جانب سے شہریوں کے ’انتقامی قتل‘ کے واقعات پیش آئے ہیں

افغانستان میں اپنے صارفین کے تحفظ کے لیے فیس بک نے 19 اگست کو چند نئے فیچرز متعارف کروائے تھے جن کے تحت افغان صارفین اپنے پروفائلز کو لاک کر سکتے ہیں۔

بی بی سی نے کابل اور افغانستان کے ایک اور بڑے شہر میں موجود دو ایسے سوشل میڈیا صارفین سے بات کی ہے جو طالبان کے اقتدار میں آنے سے قبل انتہائی بااثر صارفین مانے جاتے تھے اور سوشل میڈیا پر ان کے فالوورز کی تعداد لاکھوں میں تھی۔

تاہم اب ان دونوں صارفین نے طالبان کے خوف سے اپنے اکاؤنٹس ڈیلیٹ کر دیے ہیں۔ افغانستان کے حالات کے پیش نظر ہم ان صارفین کی شناخت ظاہر نہیں کر رہے اور ان کے نام تبدیل کر دیے گئے ہیں۔

’وہ جہاں ملے گا، سر پر گولیاں کھائے گا‘

فدا (فرضی نام) کابل میں موجود ایک سرگرم افغان سوشل میڈیا صارف تھے۔ 15 اگست سے پہلے تک وہ سوشل میڈیا پر طالبان کے سخت ترین مخالف تھے اور ان کی پالیسیوں پر کڑی تنقید کرتے تھے، لیکن اب نہ تو وہ طالبان کی مخالفت کرتے ہیں اور نہ ہی سوشل میڈیا دیکھتے ہیں۔

فدا نے کابل پر طالبان کے قبضے کے بعد اپنا فیس بک اکاؤنٹ ڈیلیٹ کر دیا تھا اور اب ان کا نام اُن افراد کی فہرست میں ہے جنھیں مغربی ممالک کی جانب سے بیرونِ ملک پناہ دی جائے گی۔

طالبان

Getty Images

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے فدا نے دعویٰ کیا کہ طالبان کے کابل پر کنٹرول کے بعد انھیں اُن کے رشتہ داروں کے ذریعے یہ اطلاع پہنچائی گئی تھی کہ انھیں کسی بھی قیمت پر زندہ نہیں چھوڑا جائے گا۔

’میرے رشتہ داروں کو اُنھوں نے بتایا تھا کہ جن افراد کو ہم عام معافی کے اعلان کے باوجود بھی معاف نہیں کریں گے، اُن میں فدا کا نام بھی شامل ہے، وہ جہاں ملے گا، سر پر گولیاں کھائے گا۔‘

فدا کے مطابق کابل پر طالبان کے قبضے کے دوسرے دن انھوں نے اپنے تمام سوشل میڈیا اکاؤنٹس ڈیلیٹ کر دیے تھے۔ وہ بتاتے ہیں کہ ان کے فیس بک کی آخری پوسٹ بھی طالبان مخالف تھی۔ انھوں نے کہا کہ وہ کسی صورت طالبان کے افغانستان میں جینا نہیں چاہتے۔ ’میں اب یہاں رہنے پر موت کو ترجیح دوں گا۔‘

’ابھی تو آغاز ہے تھوڑا انتظار کیجیے‘

حارث خان (فرضی نام) افغانستان کے ایک بڑے شہر میں طالبان کے نافذ کردہ نظام کے تحت زندگی گزارنے پر مجبور ہیں، لیکن طالبان کنٹرول سے پہلے وہ اکثر جمہوریت کے حق میں اور ’طالبانائزیشن‘ کے خلاف سوشل میڈیا پر فعال رہتے تھے۔

وہ کہتے ہیں کہ اُنھوں نے اپنا اکاؤنٹ سقوط کابل سے دو دن قبل اس لیے ڈیلیٹ کیا کیونکہ ان کے مطابق ’مجھے لگ رہا تھا کہ اب جمہوریت نہیں طالبان کا دور آ رہا ہے۔‘

کابل پر طالبان کنٹرول سے پہلے کئی سال تک افغان حکومت پر یہ الزام لگتا رہا کہ کئی سوشل میڈیا اکاؤنٹس حکومتی سرپرستی میں چل رہے ہیں اور سوشل میڈیا صارفین کو حکومت کے حق اور طالبان کے خلاف پوسٹ کرنے کے عوض صدارتی محل سے ’باقاعدہ تنخواہیں‘ ملتی ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

’طالبان گلوکاروں کو برداشت نہیں کرتے، لیکن میں موسیقی نہیں چھوڑ سکتی‘

افغانستان کوریج کے لیے گئے پاکستانی صحافی جنھیں طالبان نے جاسوس سمجھا

داڑھی، برقعہ، موسیقی۔۔۔ کیا طالبان دوبارہ نوے کی دہائی کے سخت گیر قوانین کا نفاذ کریں گے؟

لیکن حارث کہتے ہیں کہ ’انھوں نے پوری زندگی کسی کے کہنے پر کچھ پوسٹ نہیں کیا اور نہ ہی کبھی کسی سے پیسے لیے ہیں۔‘

’میں جمہوریت کے حق میں تھا، صدر اشرف غنی کے حق میں نہیں۔۔۔ کیونکہ انھوں نے گذشتہ تین، چار سالوں میں کچھ ایسے کام کیے، جس کی وجہ سے میں ان کے خلاف لکھتا رہا تھا۔‘

نوجوان

Getty Images

حارث خان بھی ان سینکڑوں افغان نوجوانوں کی فہرست میں ہیں جو جلد ہی اپنا ملک چھوڑ کر دوسرے ملک میں پناہ لے لیں گے۔

ان سے جب پوچھا گیا کہ طالبان نے تمام افغانوں کے لیے عام معافی کا اعلان کیا ہے، تو وہ کیوں ملک سے باہر جانا چاہتے ہیں؟

اس پر ان کا کہنا تھا کہ ’اب بھی وہ لوگوں کو ٹارگٹ کر رہے ہیں، کہیں لوگوں کو مار رہے ہیں تو کہیں سرچ کر رہے ہیں۔ لیکن ابھی تو آغاز ہے۔‘

انھوں نے کہا کہ ان کے خیال میں ’جس طرف یہ ملک جانے والا ہے، میرا نہیں خیال کہ کوئی پڑھا لکھا افغان اب یہاں رہ پائے گا۔‘

طالبان کی جانب سے بارہا افغان نوجوانوں کو پیغام دیا گیا ہے کہ وہ ملک چھوڑ کر نہ جائیں اور اُن کے ساتھ ملکی اداروں میں کام کریں تاکہ ملک کا پڑھا لکھا اور تجربہ کار طبقہ دوسرے ملک کی خدمت کی بجائے اپنے ہی ملک کی خدمت کرے۔

تاہم ملک چھوڑنے والے اکثر افغان نوجوانوں کا خیال ہے کہ وہ طالبان اور ان کے وعدوں پر بھروسہ نہیں کر سکتے اور جیسے ہی موقع ملا وہ اپنا ملک چھوڑ کر باہر چلے جائیں گے۔


  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 21116 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments