عراق کا بیرون ملک آپریشن میں دولت اسلامیہ کے فنانشل چیف کو حراست میں لینے کا دعویٰ

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

عراق نے کہا ہے کہ اس نے اپنی سرحدوں سے باہر ایک آپریشن میں نام نہاد دولت اسلامیہ کے فنانشل چیف کو گرفتار کر لیا ہے۔

وزیر اعظم مصطفی الکاظمی نے ایک ٹویٹ میں کہا ہے کہ عراقی نیشنل انٹیلیجنس سروس نے ایک ’پیچیدہ بیرونی آپریشن‘ میں سمیع جاسم الجبوری کو گرفتار کر لیا ہے۔ تاہم انھوں نے بیرون ملک اس مقام کی نشاندہی نہیں کی جہاں سے انھیں پکڑا گیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ جاسم، جنھیں حاجی حامد کے نام سے بھی جانا جاتا ہے، دولت اسلامیہ کے ہلاک ہونے والے سربراہ ابوبکر البغدادی کے دور میں دولت اسلامیہ کے نائب سربراہ تھے۔

امریکہ نے ان کی گرفتاری کے لیے معلومات دینے پر 50 لاکھ ڈالر کا انعام رکھا ہوا تھا۔

ایف بی آئی کی ویب سائٹ کے مطابق ان پر دولت اسلامیہ کی دہشتگردی کی کارروائیوں کی مالی ذمہ داری سنبھالنے کا الزام ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ جب دولت اسلامیہ نے 2014 میں عراق اور شام کے کئی علاقوں پر قبضہ کر لیا تو انھوں نے اس گروہ کے لیے آمدن بڑھانے کے آپریشنز کی نگرانی کی جس میں غیر قانونی طور پر تیل، گیس، نوادرات اور معدنیات کی فروخت کی جاتی تھی۔

عراق کے خصوصی سکیورٹی سیل کا کہنا ہے کہ زیر حراست شخص دولت اسلامیہ کے نئے سربراہ امیر محمد سید عبدالرحمان کے، جو بغدادی کے جانشین ہیں، بھی قریبی ساتھی ہیں۔ 2019 میں امریکی سپیشل فورسز نے بغدادی کے خفیہ ٹھکانے پر کارروائی کی تھی جس دوران انھوں نے خود کو مار لیا تھا۔

یہ بھی پڑھیے

پاکستان نام نہاد دولت اسلامیہ کے اثر سے کیسے بچا رہا

دولت اسلامیہ میں شامل ہونے والے نوجوان کے سمارٹ فون سے کیا کچھ ملا؟

دولتِ اسلامیہ خراسان کیا ہے اور کابل میں اتنا بڑا حملہ کرنے میں کیسے کامیاب ہوئی

دولت اسلامیہ کی سابق ’دلہن‘ دہشت گردی کا مقابلہ کرنے میں کیسے مددگار ثابت ہوں گی؟

عراقی وزیر اعظم نے یہ نہیں بتایا کہ جاسم کو کہاں سے گرفتار کیا گیا ہے۔ تاہم سینیئر عراقی فوجی ذرائع نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا ہے کہ یہ آپریشن ترکی میں کیا گیا۔ ان اطلاعات کے بعد ترک حکام کی جانب سے کوئی ردعمل نہیں آیا ہے۔

رواں سال کے اوائل میں عراقی حکومت نے دولت اسلامیہ کے مبینہ نائب جابر سلمان صالح العيساوی اور جنوبی عراقی میں داعش کے کمانڈر جابر علی فياض کو ہلاک کرنے کا اعلان کیا تھا۔

ایک وقت میں دولت اسلامیہ نے مشرقی عراق سے مغربی شام تک 88 ہزار مربع کلو میٹر کا کنٹرول سنبھال لیا تھا۔ اس دوران ان کے زیر انتظام قریب 80 لاکھ کی آبادی پر ظالمانہ حکمرانی کی گئی تھی۔

عراق میں سنہ 2017 کے دوران دولت اسلامیہ کو شکست ہوئی جبکہ شام میں یہ 2018 میں ممکن ہوسکا۔ اس کے باوجود دونوں ملکوں میں اب بھی دولت اسلامیہ کے ہزاروں جنگجو موجود ہیں۔

عراق کو اب بھی ایسے سیلز سے خطرہ ہے جنھوں نے حکومت کے خلاف اعلان جنگ کر رکھا ہے۔ وہ اکثر دیہی علاقوں میں کارروائیاں کرتے ہیں اور سکیورٹی فورسز یا عمارتوں پر حملے کر کے روپوش ہو جاتے ہیں۔

اقوام متحدہ کی حالیہ رپورٹ میں متنبہ کیا گیا تھا کہ دولت اسلامیہ کا مرکزی گروہ اپنے امیر کے حکم پر دوبارہ عراق اور شام میں فعال ہونے کی کوششیں کر رہا ہے جس سے عالمی امن و سلامتی کو خطرہ ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ افریقہ، افغانستان اور جنوبی ایشیا میں دولت اسلامیہ کے مقامی گروہوں کے پھیلنے کا بھی خطرہ ہے۔


  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 21233 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments