خاتون انجینیئر جو 32 سال تک امریکی آبدوزوں میں استعمال ہونے والے سٹیل کے معیار کے جعلی ٹیسٹ دیتی رہیں

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

دھات
Getty Images
امریکی ریاست واشنگٹن میں ایک میٹالرجسٹ (وہ انجینیئر جو دھاتوں کو جانچنے کا ماہر ہو) نے کئی دہائیوں تک امریکی بحریہ کی آبدوزیں بنانے کے لیے استعمال ہونے والے سٹیل کی مضبوطی کے جعلی نتائج جاری کرنے کا جرم قبول کر لیا ہے۔

پراسیکیوٹرز کا کہنا ہے کہ ایلین میری تھامس نے، جن کی عمر 67 برس ہے، سنہ 1985 سے سنہ 2017 کے دوران کم از کم 240 کیسز میں سٹیل کی مضبوطی سے متعلق ایسی مثبت رپورٹس دیں جو کہ جھوٹی تھیں۔

حکام نے فی الحال یہ واضح نہیں کیا کہ ان جعلی ٹیسٹوں کے نتائج سے کون سی آبدوزیں متاثر ہوئیں۔

واشنگٹن میں اٹارنی کے دفتر کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا ہے کہ میری تھامس کا تعلق اوبرن، واشگنٹن سے ہے اور وہ ٹیکومہ میں دھاتوں کے کارخانے میں ڈائریکٹر تھیں۔

اس کارخانے سے امریکی بحریہ کے کانٹریکٹرز کو آبدوز کے مختلف حصوں میں استعمال ہونے والا سٹیل سپلائی کیا جاتا تھا۔

عدالتی دستاویزات کے مطابق سنہ 2008 میں براڈکین نامی کمپنی نے یہ کارخانہ حاصل کیا تھا۔ ایسا کوئی بھی ثبوت سامنے نہیں آیا جس سے پتہ چلے کہ مئی سنہ 2017 تک کمپنی کی انتظامیہ اس نوعیت کے کسی بھی فراڈ سے آگاہ تھی۔

استغاثہ کے مطابق سنہ 2017 میں پہلی مرتبہ لیبارٹری میں کام کرنے والے ایک اہلکار کو پتہ چلا کہ سٹیل کی جانچ کے لیے کیے جانے والے ٹیسٹ سے متعلق کارڈز اور دستیاب ریکارڈ میں ردوبدل کیا گیا تھا۔

استغاثہ کا کہنا ہے کہ جعلی ٹیسٹوں کے ذریعے منظور ہونے والی سٹیل میں زیادہ تر نیوی کو فراہم کی گئی تھی۔ سنہ 2020 میں بریڈکن کمپنی نے اس تصفیے کے حل کے لیے 10.9 ملین ڈالر امریکی بحریہ کو ادا کرنے پر رضامندی کا اظہار کیا تھا۔

اس تصفیے کے بعد جاری ہونے والے اعلامیے میں کہا گیا تھا کہ بحریہ نے متاثرہ آبدوزوں میں محفوظ آپریشنز کو یقینی بنایا، جس پر اخراجات آئے ہیں۔

مزید پڑھیے

پہلی بار ایک خاتون امریکی بحریہ کے اعلیٰ تربیتی پروگرام میں کامیاب

امریکہ: جوہری آبدوزوں کی معلومات بیچنے پر بحریہ کا اہلکار اہلیہ سمیت گرفتار

’کرپٹو کوئین‘ کے لندن میں بیش قیمت گھر اور غائب ہونے والے قیمتی سامان کا معمہ

ایسوسی ایٹڈ پریس کی رپورٹ کے مطابق جب میری تھامس سے غلط نتائج کے حوالے سے سوالات کیے گئے تو ان کی رائے تھی کہ کچھ کیسز میں انھوں نے دھات کے مثبت نتائج اس لیے دیے کیونکہ ان کا خیال میں نیوی کی یہ ضرورت کہ دھات کی اس جانچ کو منفی ستر ڈگری سینٹی گریڈ پر کیا جائے ’بیوقوفانہ‘ تھا۔

میری تھامس کے وکیل جان کارپینٹر نے وفاقی عدالت میں بیان جمع کروایا جس کے مطابق خاتون نے ’شارٹ کٹ‘ کا استعمال کیا اور بنائے گئے میٹریل کے بارے میں غلط بیانی کی۔

ان کے وکیل کی جانب سے دائر بیان میں کہا گیا کہ یہ جرم غیر معمولی ہے کیوں کہ یہ کسی لالچ یا ذاتی فائدے کے لیے نہیں کیا گیا۔

بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ خاتون کو پچھتاوا ہے کہ وہ غلط اور درست اقدام میں فرق نہیں کر پائیں۔

میری تھامس کو دس سال قید کی سزا کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے اور 10 لاکھ ڈالر جرمانہ ہو سکتا ہے۔ انھیں سزا اگلے برس فروری میں سنائی جائے گی۔


  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 21829 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments