اسرائیلی جوڑا استنبول میں جاسوسی کے شبے میں گرفتار، اسرائیل کا ترکی سے رہائی کا مطالبہ

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

People walk near the a gate of Dolmabahce Palace, in Istanbul, Turkey, on 10 November 2021 (Altan Gocher/GocherImagery/Universal Images Group via Getty Images)
Getty Images
اسرائیلی جوڑے کے وکیل نے کہا ہے کہ نٹالی اور موردی اوکنن سیر کی غرض سے کشتی میں سوار تھے جہاں سے انھوں نے دولماباچے محل کی تصاویر لی تھیں
اسرائیل نے ترکی پر زور دیا ہے کہ وہ اسرائیلی جوڑے کو فوری رہا کرے جن پر جاسوسسی کرنے کا الزام عائد کیا گیا ہے کہ وہ ترکی میں صدارتی محل کی تصاویر لے رہے تھے۔

نٹالی اور موردی اوکنن نامی جوڑے کے بارے میں اسرائیل کی جانب سے بتایا گیا ہے وہ دونوں بس ڈرائیور ہیں اور گذشتہ ہفتے استنبول میں واقع کملیکا ٹاور کے ریستوران میں موجود عملے نے ان کے بارے میں حکام کو مطلع کیا جس کے بعد انھیں حراست میں لے لیا گیا۔

مقامی عدالت کے جج نے کہا کہ ٹرائل شروع ہونے تک انھیں حراست میں رکھا جائے۔

جوڑے کے اسرائیلی وکیل کا کہنا ہے کہ ان پر لگائے گئے الزامات ‘بے بنیاد’ ہیں اور اسرائیل نے اس بات پر اصرار کیا ہے کہ ان دونوں کا کسی بھی اسرائیلی ایجنسی سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

اسرائیلی وزیر اعظم نفٹالی بینیٹ نے بھی ان دونوں کے حق میں آواز اٹھائی اور کہا کہ ‘دو معصوم شہری غلطی سے ایک پیچیدہ صورتحال میں پھنس گئے ہیں۔’

‘میں نے ان کے خاندان والوں سے بات کی ہے اور ہم ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں کہ اس معاملے کو حل کیا جائے۔’

سنہ 2010 میں غزہ پر اسرائیلی پابندیوں کو توڑنے کے لیے جانے والی ترکش کشتی پر اسرائیل کی جانب سے حملہ کیے جانے کے بعد سے دونوں ممالک کے تعلقات میں سردمہری رہی ہے۔

ترکی کے سرکاری خبر رساں ادارے نے جمعے کو خبر دی تھی کہ ریستوران کے عملے نے اسرائیلی جوڑا اور ایک ترک شہری کے بارے میں پولیس کو اطلاع دی کہ وہ ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان کے رہائشی محل کی تصاویر لے رہے ہیں۔

حکام نے اسرائیلی جوڑے سے سوالات کیے جس کے بعد انھیں عدالت بھیجا گیا جہاں ان پر ‘سیاستی اور عسکری جاسوسی’ کرنے کے الزامات عائد کیے گئے اور مزید 20 دن تک انھیں حراست میں رکھنے کا حکم دیا۔

A drone photo shows the Camlica Tower in Istanbul, Turkey on 23 September 2021

Anadolu Agency
ترک حکام نے الزام عائد کیا ہے کہ جوڑے نے کملیکا ٹاور کے ایک ریستوران سے صدارتی محل کی تصاویر لیں

جوڑے کے اسرائیلی وکیل نر یاسلووٹز نے ان الزامات کی تردید کی ہے اور اسرائیل کے ہارٹز اخبار کو بتایا ہے کہ ‘ان کا گناہ صرف یہ تھا کہ انھوں نے کشتی پر کیے جانے والے ایک سفر کے دوران اردوغان کے محل کی تصاویر لی تھیں۔’

جوڑے کے وکیل نے جس عمارت کی شناخت کی ہے وہ استنبول کا تاریخی دولماباچے محل ہے جو کہ ماضی میں صدارتی رہائش گاہ تھا لیکن کئی دہائیوں سے اس مقصد کے لیے استعمال نہیں کیا گیا ہے۔ البتہ کہا جاتا ہے کہ عمارت کے چند حصوں کو صدارتی دفتر کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔

موجودہ صدارتی رہائش گاہ ہوبر مینشن ہے جو کہ شہر میں دوسرے مقام پر واقع ہے۔

اسرائیل کے صدر آئیزک ہرزوگ نے کہا کہ انھیں ‘یقین’ ہے کہ جوڑا معصوم ہے اور انھوں نے اس بات پر زور دیا کہ وہ ‘کسی اسرائیلی ایجنسی کے لیے کام نہیں کرتے۔’

پیر کو اسرائیل کے وزیر خارجہ ئیر لیپڈ نے ٹویٹ میں کہا کہ اسرائیلی حکام ‘مسلسل’ کام کر رہے ہیں تاکہ ان دونوں کو رہائی دلوائی جا سکے۔

گذشتہ ماہ ترکی کے میڈیا نے خبر دی تھی کہ ترک حکام نے کم از کم 15 افراد کو اسرائیلی جاسوس ایجنسی موساد کے لیے جاسوسی کرنے کے شبہ میں گرفتار کر لیا ہے تاہم دوسری جانب موساد کے سابق ڈپٹی ڈائریکٹر نے ان الزامات کی تردید کی تھی۔


  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 21829 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments