طیارے کے پہیوں میں چھپا مسافر ’11 گھنٹے طویل‘ پرواز کے بعد ایمسٹرڈیم پہنچ گیا


Plane landing gear
مفت سفر کرنے والے مسافر نے ایک کارگو یعنی مال بردار ہوائی جہاز کے اگلے پہیے کے خانے میں چھپ کر سفر کیا (یہ وہ جہاز نہیں ہے)
ڈچ پولیس کا کہنا ہے کہ انھیں ایک ہوائی جہاز کے پہیے والے حصے سے ایک ’سٹو اوے‘ یعنی چھپ کر مفت سفر کرنے والا شخص صحیح سلامت حالت میں ملا ہے۔ یہ جہاز جنوبی افریقہ سے ایمسٹرڈیم کے سکیِپال ایئرپورٹ پہنچا تھا۔

یہ کارگو یا مال بردار پرواز جوہانسبرگ سے ایمسٹرڈیم کے لیے روانہ ہوئی تھی، اور 11 گھنٹے طویل یہ پرواز کچھ دیر کے لیے کینیا کے دارالحکومت نیروبی میں رکی تھی۔

اتنی لمبی پرواز پر اس طرح سے چھپ کر سفر کرنے والے مسافروں (سٹو اویز) کا زندہ بچ جانا ایک غیر معمولی واقعہ ہے کیونکہ بلندی پر سخت ٹھنڈ ہوتی ہے اور ہوا میں آکسیجن بھی کم ہوتی ہے۔

پولیس کے مطابق مذکورہ شخص کی عمر اور شہریت کا تعین نہیں کیا گیا ہے۔

ڈچ پولیس کی ایک ترجمان نے خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو بتایا کہ ’یہ شخص جہاز کے اگلے پہیے کے خانے میں چھپا ہوا تھا جہاں سے اسے اچھی حالت میں ہسپتال لے جایا گیا۔‘

ترجمان کا کا کہنا تھا کہ ان حالات میں ’زندہ بچ جانا انتہائی غیر معمولی بات ہے۔‘

ڈچ براڈکاسٹر ایس او ایس کے مطابق مذکورہ شخص کے جسم کا درجۂ حرارت ایئرپورٹ پر ہی بڑھایا گیا اور ایمبولنس کے پہنچنے تک اس کے حواس اس قدر بحال ہو چکے تھے کہ وہ بنیادی سوالوں کے جواب دے سکے۔

جہاز راں کمپنی کارگولکس نے رؤٹرز کو بھیجی گئی ایک ای میل میں تصدیق کی ہے کہ مذکورہ شخص اسی کی ایک پرواز سے برآمد ہوا ہے۔

فلائٹ ڈیٹا کے مطابق اتوار کے روز کارگولکس کی صرف ایک پرواز نیروبی رکتے ہوئے جوہانسبرگ سے سکیِپال پہنچی تھی۔ یہ معلوم نہیں ہو سکا ہے کہ یہ شخص جنوبی افریقہ سے وہیل چیمبر میں سوار ہوا تھا یا کینیا سے۔


Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 24778 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments