سرکاری ملازمین ہفتے میں ایک دن کاشتکاری کریں: سری لنکا کا منفرد فیصلہ


سری لنکا میں عوام پٹرول پمپ پر (فائل فوٹو)
ویب ڈیسک — سری لنکا نے سرکاری شعبے کے کارکنوں کے لیے فی ہفتہ چاردن کےکام کی منظوری دی ہے تاکہ وہ ایندھن کی شدید قلت سے نمٹنے اورخوراک اگانے کے لیے ان کی حوصلہ افزائی کر سکیں۔ حکومت نے منگل کو کہا کہ اس وقت ملک بدترین مالی بحران سے نبرد آزما ہے۔سری لنکا میں سرکاری ملازمین کی تعداد تقریباً 10 لاکھ ہے۔ ان دنوں یہ ملک غیر ملکی زرمبادلہ کی شدید قلت کا شکار ہے، جس کی وجہ سے اسے ایندھن، خوراک اورادویات کی اہم درآمدات کی ادائیگی کے لیے جدوجہد کرنا پڑ رہی ہے۔

سری لنکا کی کابینہ نے پیرکوسرکاری ملازمین کو اگلے تین ماہ کے لیے ہر جمعہ کو چھٹی دینے کی تجویز کی منظوری دی، اس کی ایک وجہ یہ ہے کہ ایندھن کی قلت نے سفر کرنا مشکل بنا دیا ہے اورساتھ ہی کھیتی باڑی کی حوصلہ افزائی بھی مقصود ہے۔

سرکاری محکمہ اطلاعات نے ایک بیان میں کہا، "یہ مناسب معلوم ہوتا ہے کہ حکومتی اہل کاروں کو کام کے ایک دن کی چھٹی دی جائے اوراس دن وہ اپنے گھرکے صحن یا دوسری جگہوں پر زرعی سرگرمیوں میں حصّہ لیں۔”

اقوام متحدہ نے گزشتہ ہفتے سری لنکا میں بڑھتے ہوئے انسانی بحران کے بارے میں خبردار کیا تھا اور اعلان کیا تھا وہ دس لاکھ سے زیادہ ضرورت مند لوگوں کی مدد کے لیے چار کروڑ ستّرلاکھ ڈالر فراہم کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔

حکومت بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کے ساتھ بیل آؤٹ پیکج کے لیے بات چیت کر رہی ہے اور 20 جون کو ایک وفد کولمبو میں متوقع ہے۔

امریکی وزیرخارجہ انٹنی بلنکن نے پیر کو دیر گئے وزیر اعظم رانیل وکرما سنگھے کے ساتھ فون کال کے بعد کہا کہ امریکہ بھی مدد کے لیے تیار ہے۔

 

سری لنکا کے وزیر اعظم وزیر اعظم رانیل وکرما سنگھے، فائل فوٹو
سری لنکا کے وزیر اعظم وزیر اعظم رانیل وکرما سنگھے، فائل فوٹو

بلنکن نے ٹوئٹر پر کہا، "اس معاشی اور سیاسی طور پر مشکل وقتوں کے دوران، امریکہ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ اور بین الاقوامی برادری کے قریبی اشتراک سے، سری لنکا کے ساتھ کام کرنے کے لیے تیار ہے۔”

وکرما سنگھے نے کہا کہ اس ماہ سری لنکا کو باقی سال کے لیے ضروری درآمدات کو پورا کرنے کے لیے کم از کم 5 ارب ڈالر کی ضرورت ہے۔

(خبر کا مواد رائٹرز سے لیا گیا ہے)


Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

وائس آف امریکہ

”ہم سب“ اور ”وائس آف امریکہ“ کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے مطابق ”وائس آف امریکہ“ کی خبریں اور مضامین ”ہم سب“ پر شائع کیے جاتے ہیں۔

voa has 3303 posts and counting.See all posts by voa

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments