خواجہ اظہار الحسن پر حملہ کرنے والا پی ایچ ڈی اور انجینئرنگ یونیورسٹی کا پروفیسر نکلا

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

 

ایم کیو ایم پاکستان کے رہنما خواجہ اظہارالحسن پر حملے کے کیس کی تحقیقات میں پیش رفت سامنے آگئی ہے، مارا گیا مبینہ دہشت گرد حسان اسرار پی ایچ ڈی ڈاکٹر تھا جبکہ انجینئرنگ یونیورسٹی میں پروفیسر بھی تھا۔ ذرائع کے مطابق حسان کے قبضے سے ملنے والے نائن ایم ایم پستول کی فرانزک رپورٹ آ گئی ہے، یہ پستول عزیز آباد میں ڈی ایس پی ٹریفک کے قتل میں استعمال ہوا تھا۔

 

اسی پستول سے رمضان المبارک میں سائٹ میں چار پولیس اہلکاروں کا قتل کیا گیا تھا، گزشتہ روز فائرنگ میں دو نائن ایم ایم پستول استعمال ہوئے،جن کے 34 خول ملے تھے۔ مذکورہ پستول حالیہ دنوں میں پولیس اہلکاروں سمیت دیگر کے قتل میں استعمال ہوا ہے، دوسرا پستول دیگر دو دہشت گرد لے کر فرار ہوگئے تھے۔ واقعہ کی حساس اداروں سمیت قانون نافذ کرنےوالے ادارے مشترکہ تحقیقات کررہے ہیں، تاحال تفتیش کار فائرنگ کے محرکات پر کسی حتمی نتیجے پر نہیں پہنچ سکے ہیں۔

 

مذکورہ دہشت گرد اگر زندہ پکڑا جاتا تو تحقیقات میں نہایت ٹھوس پیش رفت ہو سکتی تھی۔ ایم کیو ایم پاکستان کے رہنما خواجہ اظہار الحسن پر حملے کی نئی اور انتہائی صاف ویڈیو سامنے آگئی ہے۔ویڈیو میں دو حملہ آوروں کو فائرنگ کرتے دیکھا جا سکتا ہے، ایک حملہ آور سادہ لباس میں جبکہ دوسرا پولیس کی وردی میں ہے، یہ ویڈیو بہت واضح ہےجس سے پولیس کو اپنی تحقیقات میں مدد ملنے کی امید ہے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •