صرف بالغوں کے لئے تحریر کی گئی “سچی کہانی”

  دور قدیم کی بات ہے، فتح محمد نام کا ایک گورکن مکلی کے قبرستان میں رہتا تھا۔ تب سمّا حکمرانوں کی سندھ میں سلطنت قائم تھی۔ آس پڑوس کے حکمرانوں کے دل سمّا حکمرانوں کے جلال سے کانپتے تھے۔ قبرستان میں بڑے بڑے مقابر تعمیر ہوتے اور فتح محمد (جسے سب برفی کہتے تھے)…

Read more

چنگیز خان، عمران خان اور شیشے کا ورلڈ کپ

انیس سو بانوے میں گڈو چوتھی جماعت کا طالب علم تھا یوں تو وہ محض نو سال کا ہی تھا لیکن وہ اپنے آپ کو بہت بڑا اور عقلمند سمجھنے لگا تھا۔ پڑہائی میں بھی میں بھی مناسب تھا اس لیے اس کے کرکٹ کے شوق پہ کوئی پابندی عائد نہیں تھی ۔ دادا اور…

Read more

ببل سے ببل گم تک

ببل کی پیدائش ایک عام سے متوسط طبقے کے گھر ہوئ۔ ببل کی ماں نے ببل کا نام ایک فلمی کردار پہ" ببل" رکھا۔ حقیقت میں اسکا نام جمیل آ را تھا۔ اسکول میں وہ اپنی ہم جماعت بچیوں سے اکثر اس با ت پہ ناراضگی کا اظہار کرتی پائی جاتی کہ کوئی اسےببل کے نام…

Read more

رینجرز، اسٹیل کے چمچے اور بابا رحمت کے نام ایک اور خط۔

بخدمت جناب عالی شان محترم چیف جسٹس آف پاکستان، السلام علیکم، امید ہے آپ خیریت سے ہوں گے۔ خداوند سے آپ کی خیریت نیک مطلوب ہے۔ سرکار عالی شان ہر بار طرح اس مرتبہ بھی آپ کو مخاطب کرنے کی جسارت کر رہی ہوں، اور حسب روایت اس دفعہ بھی کچھ قصے عرض کررہی ہوں۔…

Read more

زرداری، بنگالی، بہاری اور بھکاری

یوں تو میری پیدائش بھی کراچی کی ہی ہے، ابھی تک رہائش بھی کراچی کے مختلف علاقوں میں ہی رہی۔ تعلیم اور کام کی نوعیت بھی کچھ ایسی ہے کہ ایک عام گھریلو خاتون کے مقابلے میں شہر کے کونے کونے میں جانے کا اتفاق ہوتا ہے، لیکن ابھی یہ کہنا مشکل ہے کہ میں نے پورا کراچی دیکھ لیا ہے۔ میرے دفتر کا راستہ ملیر سٹی کورٹ کے پیچھے کی جانب ہے۔ ریل کی پٹڑی کے نتیجے سے جب میری سواری گزر رہی ہوتی ہے تو وہاں بیٹھے غریب بھکاریوں کو نزدیک سے دیکھنے کا موقع ملتا ہے۔

Read more

بیوٹی پارلر ، کتھک ناچ ، پبلسٹی اور ہیش ٹیگ می ٹو

مشاطہ اور رقاصہ ہر دربار کی ضرورت ہوا کرتی تھیں۔ بالکل ویسے ہی جیسے بھانڈ میراثی ، بونے، نائی اور خواجہ سرا۔ سب کی اپنی ذمہ داری اور اپنے خاص نوعیت کے کام ہوتے ہیں ۔ اسی طرح قدیم زمانے کے میلے میں ایک دیہاتی سرکس بھی ہوا کرتا تھا۔ اس سرکس کی خاص بات…

Read more

قرض اتارو ملک سنوارو: آئیے ڈیم بناتے ہیں

جمرات کی رات ہمارے بچپن میں سب سے بد مزا رات ہوتی۔ ایک تو ٹی چینل صرف دو اوپر سے جب تک جمعرات ویک اینڈ رہا ہم نیلام گھر دیکھنے پہ مجبور پھر ابھی ہم اسکول میں ہی تھے کہ نواز شریف دوسری بار بھی وزیر اعظم بنے اور جمعرات کی جگہ ہفتہ (سنیچر ) ویک اینڈ بنا لیکن ٹی وی چینل وہی دو۔ ایک رات ہم نہایت بیزاری کے عالم میں ٹی وی دیکھ رہے تھے تو جیسے ہی پروگرام کا آغاز ہوا طارق عزیز نے اپنے مخصوص انداز میں وہی رائن ادا کیں جو آج بھی کرتے ہیں۔

”دیکھتی آنکھوں سنتے کانوں کو طارق عزیز کا سلام پہنچے، اس نے ووٹ مانگے آپ نے ووٹ دیے، اس نے نوٹ مانگے آپ نے نوٹ دیے“، یہ کچھ عجیب سا تھا بالکل نیا۔ آج تک ہم نے ایسا دیکھا نہ تھا کہ پرائم ٹائم پہ بھی حکومت کا اشتہار آ سکتا ہے۔ یوں تو صبح شام ہم اشتہار دیکھنے کے عادی تھے۔ ”قرض اتارو ملک سنوارو پاک وطن کے پیارو سینا چیرو دل نکالو“۔

Read more

بینا کی نابینا لاٹھی

بینا ایک چھوٹے سے قصبے میں انیس سو پچاس میں پیدا ہوا۔ بینا کا نام بینا نہ تھا یہ نام تو معاشرے نے اسے عطا کیا۔ اس کا اصلی نام جو اس کے والد نے اس کی پیدائش پہ رکھا وہ فقیر محمد رکھا تھا۔ بچپن سے اسے اپنے نام سے شدید نفرت تھی۔ اس…

Read more

آسیہ بی بی اور شاہ رخ جتوئی کے لیے بابا رحمت کے نام ایک اور خط

بنام جناب عالی مرتبہ چیف جسٹس محترم ثاقب نثار صاحب۔ سرکار بعد از سلام ایک بار دوبارہ عرض ہے، دراصل آپ سے جیسے ہی مخاطب ہوتی ہوں آپ کی پرسنلٹی کے حساب سے کوئی کہانی گھومنے لگتی ہے۔ آپ بھی ماشاءاللہ فنون لطیفہ کے شائق اور میں بھی آپ کو کہانی میں ٹوئسٹ پسند اور…

Read more

آسیہ بی بی اور شاہ رخ جتوئی کے لیے بابا رحمت کے نام ایک اور خط

بنام جناب عالی مرتبہ چیف جسٹس محترم ثاقب نثار صاحب۔ سرکار بعد از سلام دوبارہ عرض ہے، دراصل آپ سے جیسے ہی مخاطب ہوتی ہوں آپ کی پرسنلٹی کے حساب سے کوئی کہانی گھومنے لگتی ہے۔ آپ بھی ماشاءاللہ فنون لطیفہ کے شائق اور میں بھی۔ آپ کو کہانی میں ٹوئسٹ پسند ہے اور مجھے…

Read more