اردو میں مستعمل فارسی ضرب الامثال

یہ ایک ناقابل انکار حقیقت ہے کہ اچھی شعری تخلیق پیش کرنے یا بہترین اردو ادب کو منصۂ شہود پر لانے کے لئے فارسی زبان کا علم ضروری ہے۔ کسی بھی نامور ادیب یا شاعر کی تخلیقات کا مطالعہ کیجئے تو اس نظریے کی صداقت سامنے آجائے گی اور اندازہ ہوجائے گا کہ شاعر یا تخلیق کار فارسی زبان کا علم ضرور رکھتا ہے۔ روایتی غزل گوئی ہو یا عوامی شاعری، ترقی پسند شاعری ہو یا جدید ادب، فارسی سے چشم پوشی کا سوال ہی نہیں پیدا ہوتا ہے۔

جدید غزل کے پرستار جو روایتی اردو غزل گوئی سے کلی طور پر منحرف ہیں اور اپنی شاعرانہ کاوشوں کو عوامی بنانے کی کوشش میں سرگرم ہیں، وہ بھی فارسی کے بغیر اپنے ضمیر کی بات بہتر طور پر نہیں ادا کرسکتے ہیں۔ عربی اور فارسی کے ہزاروں الفاظ، محاورے، فقرے، جملے، ضرب الامثال اردو روزمرہ کے جزو لاینفک بن چکے ہیں اور اب کیفیت یہ ہے کہ ان کو اردو زبان سے خارج ہی نہیں کیا جاسکتا ہے، بلکہ کچھ فقرے اور محاورے تو اس طرح سے زبان زد خاص و عام ہوچکے ہیں کہ انھیں ان کی روزمرہ کی گفتگو سے بھی الگ نہیں کیا جاسکتا ہے۔

Read more
––>