اہرام مصر کے بارے میں وہ دس اہم نکات جو ہمیں مصر کی تاریخ کے بارے میں بتاتے ہیں

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اہرام مصر
Getty Images
آئیے پہلے یہ واضح کر دیں کہ اہرام مصر خلائی مخلوق نے نہیں بنائے تھے۔ مصر میں پہلے اہرام کی تعمیر کو ساڑھے چار ہزار سے زائد سال گزر چکے ہیں اور مصر میں 100 سے زائد اہرام موجود ہیں۔

ہر اہرام ایک تعمیراتی معجزہ ہے۔ جس میں سے سب سے بڑا اہرام جیزہ کا ہے، جو فرعون خوفو یا خئوپس کے لیے بنایا گیا۔ یہ اہرام 139 میٹر اونچا ہے اور اس کی تعمیر میں پتھر کے 20 لاکھ 300 ہزار سے زائد ٹکڑے استعمال کیے گئے ہیں جن میں سے ہر ایک کا وزن کئی ٹن ہے۔

شاندار عمارتیں۔۔۔ یہ یقین کرنا آسان نہیں کہ اس وقت تکنیکی آلات کے بغیر لوگ ایسی پائیدار عمارتیں بنا سکتے تھے لیکن وہ کامیاب ہو گئے۔

برطانوی مورخ گریگ جینر نے تاریخ کے دلچسپ پہلوؤں کو بیان کیا ہے اور انھوں نے قدیم مصری تاریخ اور ’خلائی آثار قدیم‘ کے ماہر پروفیسر سارہ پارکک اور امریکی مصری مزاح نگار ماریہ شہاتا کے ساتھ دنیا کے اس عجوبے کے بارے میں بات کی۔

ہم یہاں ان کی گفتگو کا نتیجہ دے رہے ہیں۔

1۔ وہ ذہین ریاضی دان تھے

اہرام کی تعمیر صرف بھاری پتھروں کا بوجھ نہیں تھی۔ قدیم مصر میں مارکر تھے (جو لوگ کٹ کے مقام کا تعین کرنے کے لیے لکڑی یا پتھر پر نشان لگاتے تھے) جنھوں نے پتھر کے ٹکڑوں کی تعداد کا حساب لگایا تاکہ اہرام کی جگہ پر لے جایا جا سکے اور یہ بھی تعین کیا گیا کہ زمین میں کوئی ڈھال تو نہیں۔

مثال کے طور پر عظیم خوفو اہرام کے ہر طرف 52 ڈگری کی ایک مقررہ ڈھلوان ہے۔ اہرام بنانے کے لیے استعمال ہونے والے حساب کی درستگی سے پتہ چلتا ہے کہ یہ لوگ ذہین اور ہنر مند ریاضی دان تھے۔

اہرام مصر

Getty Images

2۔ اہرام کی تعمیر ایک بڑا کام رہا

اگر کسی کو اہرام بنا کر ابدی زندگی مل گئی ہے تو وہ سقرہ میں پہلے اہرام کے ڈیزائنر ایمهوتِپ ہیں۔ ایک ہنر مند معمار ہونے کے علاوہ وہ فرعون کے دربار میں ایک اعلیٰ عہدے پر فائز تھے اور ایک پادری اور معالج بھی تھے۔ قدیم مصریوں نے انھیں اتنی عزت دی کہ بعد میں انھیں دیوتا کا درجہ دے دیا۔

1960 کے آس پاس فلم بینوں نے ان کے کردار کو اپنے طریقے سے دوبارہ تخلیق کیا اور انھیں فلم ’دی ممی‘ میں ولن کے طور پر پیش کیا، جو جیمز فریزر اور ریچل ویز کو خوفزدہ کرتا ہے۔

3۔ کارکن توانا اور مضبوط جسم کے مالک تھے

اہرام بنانے والوں نے توانا اور مضبوط جسم بنانے کے لیے ان پتھروں کو اٹھایا لیکن یہ مرد مشروبات اور پروٹین شیک نہیں پیتے تھے۔

ہرام بنانے والے مزدوروں کے دیہات میں بطخوں، بھیڑوں، خنزیروں اور گائے کی باقیات سے پتہ چلتا ہے کہ اہرام بنانے والے گوشت، روٹی اور بیئر کا بھرپور انداز میں استعمال کرتے تھے۔

ان ملازمین کا قبرستان بھی ایک ہی چیز ظاہر کرتا ہے کیونکہ اس کام کے دوران حادثات بھی پیش آئے لیکن حیرت انگیز طبی دیکھ بھال کی بدولت بہت سے زخم مہلک نہیں تھے اور لوگوں کی ٹوٹی ہوئی ہڈیوں کا بھی علاج کیا گیا۔

اہرام مصر

Getty Images

4۔ کارکن ٹیم ورکر تھے

قدیم گاؤں میں آثار قدیمہ کی کھدائی اہرام کے ہنر مند مزدور کرتے تھے، اس سے پتہ چلتا ہے کہ غلاموں کو مبینہ طور پر اہرام بنانے کے لیے استعمال نہیں کیا گیا تھا بلکہ یہ کہ وہ ہنر مند مزدور تھے جنھوں نے اپنے کام سے اچھی کمائی بھی کی۔

جب اہرام کے ورکروں کے گروپ نے اپنے آپ کو ’فرینڈز آف خوفو‘ کہا تو ایسا لگتا ہے کہ انھیں اپنے کام کے ماحول سے کوئی مسئلہ نہیں تھا اور نہ ہی استحصال کی کوئی خبر تھی۔

ان گروہوں کی جانب سے چھوڑے گئے پتھروں پر بنی تصاویر اور لیتھوگرافس سے پتہ چلتا ہے کہ ان میں اہرام بنانے والے دوسرے گروپوں کے ساتھ فخر، یکجہتی اور صحت مند مقابلے کا احساس تھا۔

یہ بھی پڑھیے

مصر: ‘اہرام مصر خلائی مخلوق نے تعمیر نہیں کیے تھے’

ٹوٹی ہوئی ناک والے مصری مجسموں کا معمہ جس نے بہت سے مفروضوں کو جنم دیا

اہرام مصر کی تعمیر کی پیچیدہ ترین گتھی حل؟

5۔ اہرام پانی کے پاس تھے

آج جیزا کے اہرام ریت کے ٹیلوں کے درمیان واقع ہیں لیکن جب وہ بنائے گئے تھے تو انھیں اس طرح رکھا گیا تھا کہ ان کی تصویر کا عکس دریائے نیل کے پانی پر پڑا، جو اس وقت قریب تھا۔

قدیم مصریوں نے دریائے نیل میں نہریں بنائی تھیں جس کی وجہ سے اہرام کے مقام کے قریب پتھر کے بڑے ٹکڑے تھے۔

6۔ قدیم مصر کے فرعونوں کے لیے بعض اوقات ایک اہرام کافی نہیں ہوتا تھا

اہرام مختلف اہراموں کا ایک مجموعہ تھا، بشمول چھوٹے اہرام نیز فرعون کے پجاریوں کی طرف سے پیش کیے جانے والے راستے اور مندر۔

اہرام مصر

Getty Images

7۔ قدیم مصری فانی تھے

ہزاروں لوگوں کو کئی دہائیوں سے صرف ایک شخص کے لیے قبریں بنانے پر مجبور کرنا وقت اور توانائی کے ضیاع کی طرح لگتا ہے لیکن یہ صرف بادشاہ اور فرعون ہی نہیں تھے جنھوں نے موت کے بعد بھی اپنی زندگی گزاری۔

جیزا کے اہرام سینکڑوں دیگر اہراموں کے مجموعے میں گھرا ہے جو قدیم مصر کے اہم لوگوں سے تعلق رکھتے ہیں۔

اس کے ساتھ ساتھ مزدوروں کو ایسی شاہانہ اور تکلیف دہ تدفین کی تقریب پسند نہیں تھی۔ وہ صرف یہ امید کرتے تھے کہ وہ فرعون کے لیے مقدس قبرستان کے اہرام کی تعمیر کے فوراً بعد اپنے دنیاوی انعامات وصول کریں گے۔

8۔ وہ خزانے اور خزانوں سے متوجہ تھے

قدیم مصر کے فرعون بعد کی زندگی کا سفر خالی ہاتھ نہیں کرنا چاہتے تھے لیکن اہرام خزانے کو دفن کرنے کے لیے کوئی محفوظ جگہ نہ تھی۔

جیسا کہ بعض صورتوں میں مقبروں کو اس وقت تک لوٹا گیا جب تک کہ وہ تقریباً ختم نہ ہو گئے۔ جب جدید دور کے آثار قدیمہ کے ماہرین اہرام تک پہنچے تو اکثر اہرام کے پویلین خالی تھے۔

خوش قسمتی سے قدیم مصر کے کچھ لوٹ مار کرنے والوں نے جائیداد اور خزانے کی ایک فہرست اور تفصیل لکھی جو انھوں نے چوری کی۔ اب ایکشن لینے کی باری لارا کرافٹ کی ہے! (ویڈیو گیمز پر حملہ کرنے والے مقبرے کا مرکزی کردار)

اہرام مصر

Getty Images

9۔ اہرام اپنی پیچیدہ اور پراسرار سلامتی اور تحفظ کے لیے بدنام

ماہرین آثار قدیمہ کو مصر کے اہراموں میں کوئی کلہاڑی، سانپ کے گڑھے یا یہاں تک کہ عام جال نہیں ملے۔

مقبروں کی چوری کے خلاف تمام احتیاطی تدابیر جیسے اہراموں کے داخلی دروازوں کے سامنے بڑے پتھر رکھنا (جبکہ انڈیانا جونز ایک گہری سانس لیتے ہیں) بیکار تھے۔

اور جہاں تک مصری اہراموں کی بات ہے تو ایسی چیزوں کا بہت زیادہ امکان نہیں کہ راستے میں انتباہ جیسا کچھ ہو: جیسے کہ ’نو انٹری (آپ داخل نہیں ہو سکتے) یا اگر آپ کی جگہ میں ہوتا تو میں ایسا نہ کرتا۔‘

10۔ اہرام مصر اب بھی ماہرین آثار قدیمہ کو پریشان کرتا ہے

ابھی بھی اہرام مصر اور اس کے تعمیر کرنے والوں کے بارے میں بہت کچھ ایسا ہے، جن کے بارے میں ماہرین آثار قدیمہ نہیں جانتے۔

مثال کے طور پر ان بڑے مقبروں میں خالی جگہیں ہیں جن کے بارے میں آثار قدیمہ کے ماہرین اب بھی بحث کر رہے ہیں کہ وہ کس طرح تعمیر کیے گئے تھے۔


  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 21156 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments