ٹائیفون ننماڈول: غیر معمولی سمندری بگولہ جاپان سے ٹکرا گیا، 40 لاکھ افراد کو نقل مکانی کی ہدایت


جاپان
جاپان کی تاریخ کے سب سے بڑے سمندری بگولوں میں سے ایک کیوشو نامی جنوبی جزیرے سے ٹکرا گیا ہے۔

اس بگولے کی وجہ سے یہاں کم از کم 180 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے ہوائیں چل رہی ہیں جبکہ کچھ علاقوں میں آج دن اور رات میں 500 ملی میٹر (20 انچ) تک بارش متوقع ہے۔

حکام نے کم از کم 40 لاکھ افراد سے اپنے گھر خالی کر دینے کے لیے کہا ہے۔

اس دوران زبردست سیلابی صورتحال اور لینڈ سلائیڈنگ کی توقع ہے جبکہ بلٹ ٹرینیں، فیری سروس اور سینکڑوں پروازیں منسوخ کر دی گئی ہیں۔

ننماڈول نامی یہ ٹائیفون کیوشو کے جنوب میں واقع شہر کاگوشیما سے آج صبح ٹکرایا ہے۔

کیوشو جاپان کا مرکزی حصہ تشکیل دینے والے چار جزیروں میں سے سب سے جنوب میں واقع ہے اور یہاں کی آبادی ایک کروڑ 30 لاکھ سے زیادہ ہے۔

حکام نے اس جزیرے کے لیے ‘خصوصی الرٹ’ جاری کر دیا ہے جو جاپان ٹائمز کے مطابق بحیرہ مشرقی چین میں موجود دور دراز جاپانی جزیروں پر مشتمل علاقے اوکیناوا پرفیکچر سے باہر پہلی مرتبہ جاری کیا گیا ہے۔

جاپان کے محکمہ موسمیات نے کہا ہے کہ ننماڈول کے باعث طوفانی برساتیں ہوں گی، ساحلوں کے ساتھ تیز لہریں اٹھیں گی جبکہ اتنی تیز ہوائیں چلیں گی کہ گھر گرنے کا خدشہ ہے۔

یہ ٹائیفون اب کیوشو کو پار کرتے ہوئے شمال کی جانب بڑھ رہا ہے اور جزیرے کے پہاڑوں پر مشتمل مرکزی حصے پر زبردست بارشیں برسا رہا ہے۔

توقع ہے کہ یہ مرکزی جاپان سے گزرتے ہوئے آنے والے چند دنوں میں ٹوکیو پر سے گزرے گا اور اپنی شدت اور قوت بھی برقرار رکھے گا۔

یہ بھی پڑھیے

ماحولیاتی تبدیلی کیا ہے؟ ایک آسان گائیڈ

وہ جنگلات جو صرف ’کاغذوں‘ میں ہی بنائے گئے ہیں!

پاکستان میں تیزی سے پگھلتے گلیشیئرز خطرناک سیلابی ریلوں میں کیوں بدل رہے ہیں؟

موسمیاتی تبدیلی: آج کو سمجھنے کے لیے تقریباً 40 سال پیچھے جانا پڑے گا

انسانی جانوں اور املاک کو سب سے زیادہ خطرہ برسات سے ہے جس کی وجہ سے پہلے ہی دریاؤں میں طغیانی ہے اور اس کی وجہ سے مٹی کے تودے گرنے کا خدشہ ہے۔

حکام نے کیوشو کے لوگوں سے کہا ہے کہ وہ شیلٹرز میں پناہ حاصل کریں۔

ننماڈول بحرالکاہل سے اٹھنے والا رواں برس کا 14واں ٹائیفون ہے جو جاپان سے ٹکرانے والا اب تک کا سب سے بڑا سمندری بگولہ ہے۔

سنیچر کو جاپانی محکمہ موسمیات کے ایک عہدیدار نے کہا تھا کہ یہ سنہ 2018 میں 14 لوگوں کی جانیں لینے والے ٹائیفون جیبی اور سنہ 2019 میں بڑے پیمانے پر بجلی کی فراہمی متاثر کرنے والے ٹائیفون ہیگیبس سے بھی زیادہ خطرناک ہو سکتا ہے۔

جاپان اس طرح کے طوفانوں سے نمٹنے کے لیے بہترین تیاری رکھتا ہے مگر سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ موسمیاتی تبدیلی کی وجہ سے یہ زیادہ بڑے اور خطرناک ہوتے جاتے ہیں۔


Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 26020 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments