نیند کی چھوٹی ’جھپکیوں‘ یا مائیکرو نیپس کے انسانی صحت پر کیا اثرات ہوتے ہیں؟

کلاڈیا ہیمنڈ - بی بی سی نیوز


علامتی تصویر

ایک نیپ یا کم دورانیے کی نیند سے بھی کم بس کُچھ ہی سیکنڈز کے لیے آنے والی نیند کی جھپکی۔ جس کے بارے میں اب یہ کہا جانے لگا ہے کہ یہ گہری اور اچھی نیند میں کمی کے مسائل میں اضافہ کر رہی ہے۔

ہم یہاں آج اُس نیند کے بارے میں بات نہیں کرنے جا رہے کہ جو آپ کو چند منٹ کے لیے ٹی وی پر کوئی اچھی فلم یا ڈرامہ دیکھنے کے دوران آتی ہے۔ ہم تو بات کرنے جا رہے ہیں اُس ’مائیکرو سلیپینگ‘ کی بات کرنے لگے ہیں کہ جس کا دورانیہ بس چند ہی سیکنڈ ہوتا ہے۔

سائنسدانوں کی جانب سے اس ’مائیکرو سلیپنگ‘ کے لیے کوئی مستند یا اس کی وضاحت کر دینے والی تعریف تو سامنے نہیں آئی ہے، تاہم ایک سیکنڈ سے 15 سیکنڈ تک لگنے والے اس نیند کے جھٹکے یا ’شٹ آئی‘ کے بارے میں اب یہ ضرور کہا جانے لگا ہے کہ اس کے انسانی صحت پر گہرے اور دور رس نتائج سامنے آرہے ہیں۔ اس بات کی وضاحت یوں کی جا رہی ہے کہ نیند کی ان جھپکیوں سے ہمیں اپنے روز مرّہ کے معمولات کو سر انجام دینے میں متعدد مُشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے جیسے کہ دورانِ ڈرائیونگ آنے والی یہ نیند کی جھپکی ہماری جان کو خطرے میں ڈال سکتی ہے۔ مگر سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ اب اس آئی شٹ یا نیند کی جھپکی کے محرکات کا پتا لگانے کے بہت قریب ہیں۔

حالیہ تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ ان چھوٹی چھوٹی نیند کی جھپکیوں کے اصل ماہرین چنسٹریپ پینگوئن ہیں۔ ان پینگوئنز کے ساتھی جب خوراک کی تلاش میں سمندر میں غوطہ لگاتے ہیں، تو انھیں برف کی سطح پر بنے اپنے گھونسلوں کی رکھوالی کے لیے چھوڑ جاتے ہیں تاکہ ان میں موجود انڈوں کو براؤن اسکوا جیسے شکاریوں کے ساتھ ساتھ دوسرے پینگوئن کے غصے سے بھا بچا سکیں۔

فرانس کے شہر لیون کے نیورو سائنس ریسرچ سینٹر میں نیند کے ایکوفزیولوجسٹ پال انٹونی لیبورل نے انٹارکٹیکا کے کنگ جارج جزیرے پر 14 پینگوئنز کے دماغ کی سرگرمی اور نیند کے نمونوں کی پیمائش کی۔ 10 دن کے دوران، پینگوئن کبھی بھی ایک وقت میں 34 سیکنڈ سے زیادہ نہیں سوتے تھے۔ اس کے بجائے ان کے پاس 10,000 سے زیادہ مائکرو سلیپ تھے جو چار سیکنڈ سے بھی کم عرصے تک چلتے تھے یعنی دس ہزار نیند کی جھپکیاں۔

چار سیکنڈ کی یہ جھپکی ان پینگوئنز کے لیے یوں تو کم لگ رہی تھی کہ جس میں اُن کی تھکان اُتر جائے مگر ہر پینگوئن کو ہر 24 گھنٹے میں 11 گھنٹے کی متاثر کن نیند مل رہی تھی۔

ایسا لگتا ہے کہ یہ جھپکیاں ان کے لیے تو کام کرتی ہیں، لیکن اس جدید دور کے انسان کے لیے، مائکرو سلیپ کو اتنا اچھا نہیں مانا جا رہا۔ زندگی یا موت کی صورتحال میں جہاں ہمیں محتاط رہنے کی ضرورت ہوتی ہے، جیسا کہ انسانوں کے لیے سڑک پر تیز رفتار میں گاڑی چلاتے ہوئے محتاط رہنا پڑتا ہے، تو ایسے میں انسانوں کے لیے یہ کام مُشکلات پیدا کر سکتا ہے۔

sleeping

یہ صرف اس قسم کی صورتحال ہے (لیکن خطرات کے بغیر) جسے تجربہ کاروں نے مائیکرو سلیپ کی نوعیت کی تحقیقات کے لیے لیبارٹری میں نقل کرنے کی کوشش کی ہے۔

سنہ 2014 میں دماغی سکینرز، لوگوں کی آنکھوں کی ویڈیو ریکارڈنگ اور دماغی لہروں کی پیمائش کے لیے الیکٹرو اینسفیلوگرام (ای ای جی) آلات کا بیک وقت استعمال کرتے ہوئے مائیکرو سلیپس کی کھوج لگانے والی پہلی تحقیق شائع ہوئی تھی۔ ٹیم نے اپنے شرکا کے لیے ایک بہت ہی مضحکہ خیز ٹاسک تیار کیا۔ سکینر میں لیٹے ہوئے ان کے سامنے ایک سکرین تھی اور ایک ہاتھ میں جوئے سٹک تھی۔ ان کا کام جوئے سٹک کا استعمال کرنا تھا تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ سکرین پر موجود ڈسک مسلسل چلتے ہوئے ہدف کے ساتھ برقرار رہے۔

یہ اتنا بورنگ تھا کہ لوگوں کو جاگنے کے لیے جدوجہد کرنا پڑی 50 منٹ کے سیشن کے دوران 70 فیصد کے پاس کم از کم 36 مائیکرو سلیپ تھے۔ نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ سے تعلق رکھنے والے سائنسدانوں کو توقع تھی کہ وہ تھوڑا سا نیند لیں گے، لیکن اتنا زیادہ نہیں۔ جی ہاں، لوگوں نے ابھی دوپہر کا کھانا کھایا تھا اور لیٹے ہوئے تھے، لیکن پھر بھی، وہ نیند سے محروم نہیں تھے اور جو کوئی بھی میگنیٹک ریزوننس امیجنگ (ایم آر آئی) سکینر کے اندر تھا اسے معلوم ہوگا کہ کیا ہو رہا تھا۔

تعجب کی بات نہیں ہے، نارکولیپسی والے لوگوں میں مائکرو سلیپس اور بھی زیادہ عام ہیں، لیکن تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ ہم میں سے زیادہ تر ان کے قریب ہیں۔

کرائسٹ چرچ کی کینٹربری یونیورسٹی کے دیگر محققین نے لوگوں کو ایک جعلی سٹیئرنگ وہیل اور ٹریک دے کر انھیں بوریت سے غنودگی کا شکار ہوتے ہوئے دیکھا اور یہ ظاہر کیا کہ گرم کمرے میں لیکچر کے دوران جاگنے کی کوشش کرنے سے آپ کو یہ معلوم ہوسکتا ہے کہ آپ کی پلکیں ایک لمحے کے لیے بند ہوجاتی ہیں۔ آپ کا سر تھوڑا سا ہلاتا ہے اور پھر جب آپ دوبارہ اٹھتے ہیں تو اچانک جھٹکے لگتے ہیں۔

ہم جتنے زیادہ تھکے ہوئے ہیں، اتنا ہی زیادہ امکان ہے کہ ہم مائیکرو سلیپ کریں۔ برطانیہ کی یونیورسٹی آف لافبورو میں نیند کے محقق یوون ہیریسن نے دریافت کیا کہ یہ جھپکیاں دوپہر اور شام کے وقت زیادہ عام ہوتی ہیں اور اکثر نیند کی طویل مدت سے پہلے ہوتی ہیں۔

یونیورسٹی آف پنسلوانیا میں نفسیات کے پروفیسر ڈیوڈ ڈنگز لوگوں کو رات بھر جاگائے رکھتے ہیں تاکہ یہ دیکھ سکیں کہ وہ اگلے دن کتنی بار کام کرتے ہیں۔ پوری رات کھینچنے کے بعد، جیسا کہ آپ توقع کرسکتے ہیں، ان کی توجہ میں کوتاہیاں (بہت سے سائنسدان مائکرو سلیپ سمجھے جاتے ہیں) زیادہ کثرت سے ہوتی ہیں۔ لیکن روڈ سیفٹی کے حوالے سے خطرناک حد تک انھوں نے پایا کہ جب لوگوں کو لگاتار 14 دن رات میں چھ گھنٹے کی نیند آتی ہے تو ان کے پاس اتنی ہی مائیکرو سلیپ ہوتی ہے جتنی کہ پوری رات کی نیند سے محروم رہنے والے لوگ۔

k

لیکن ان کے برعکس، رات میں چھ گھنٹے کی نیند لینے والے لوگوں کو احساس نہیں تھا کہ وہ اتنے تھکے ہوئے ہیں۔ وہ بس اس کے ساتھ آگے بڑھ گئے۔

اور ہم ہمیشہ یہ بھی نہیں جانتے کہ ہم نے مائیکرو سلیپ کیا ہے۔ ایک مطالعے میں لوگوں کو لیبارٹری میں جان بوجھ کر دن کی نیند لینے کی دعوت دی گئی تھی اور پھر محققین نے انھیں ایک منٹ، پانچ منٹ، 10 منٹ یا 20 منٹ کے بعد بیدار کیا اور پوچھا کہ آیا وہ سو رہے ہیں یا نہیں۔ اگر انھیں صرف 60 سیکنڈ کے لیے سونے کی اجازت دی گئی تھی، تو صرف 15 فیصد نے محسوس کیا کہ انھوں نے بالکل بھی نیند نہیں لی ہے۔ یہاں تک کہ 10 منٹ کی نیند کے بعد بھی، صرف آدھے لوگوں نے اس بات کا اعتراف کیا کہ وہ سو گئے تھے۔

یہ ان اوقات کا مطلب ہوسکتا ہے جب لوگ آپ کو سختی سے انکار کرتے ہیں کہ انھوں نے ٹی وی کے سامنے سر ہلایا، حالانکہ آپ دیکھ سکتے ہیں کہ وہ واضح طور پر گہری نیند میں تھے۔

دماغ میں جو کچھ ہو رہا ہے اس کے لحاظ سے، مائکرو سلیپس بڑی حد تک الفا سے تھیٹا لہروں کی طرف منتقلی کی علامت ہیں، جس طرح کی لہریں آپ نیند کے پہلے مرحلے میں دیکھتے ہیں۔

نیوزی لینڈ کے تجربے میں جہاں لوگوں نے جوئے سٹک کے ذریعے ہدف کا تعاقب کیا وہاں ایک دلچسپ دریافت سامنے آئی جس نے محققین کو حیران کردیا۔ دماغ میں سرگرمی کو مسلسل بند کرنے کے بجائے جب لوگوں نے سر ہلایا، جبکہ کچھ علاقے توقع کے مطابق کم فعال ہوگئے، انھوں نے کچھ اور دیکھا فرنٹل اور پیریٹل کارٹیکس میں سرگرمی میں اضافہ، ہمارے ماتھے کے پیچھے پیچھے پھیلے ہوئے علاقے۔

ٹیم کا اندازہ ہے کہ یہ بہنے کا لاشعوری ردعمل ہوسکتا ہے، سونے کی کوشش نہیں، بلکہ جاگنے کی کوشش۔ یہ طویل نیند یا نیپ میں نہیں دیکھا جاتا ہے، جس سے پتہ چلتا ہے کہ مائیکرو سلیپ عام نیند سے مختلف ہیں اور صرف مختصر نہیں ہیں۔

نو سال بعد اس تجربے کے اعداد و شمار کا مزید تفصیل سے تجزیہ کرتے ہوئے، ٹیم نے مائیکرو سلیپ کے دوران ڈیلٹا، بیٹا اور گاما لہروں میں کمی نہیں بلکہ اضافہ پایا، اس خیال کی حمایت کرتے ہوئے کہ جب ہم سو جاتے ہیں، لیکن توجہ مرکوز کرنی چاہیے، تو ہمارے دماغ اس سے آگاہ ہوتے ہیں اور ہمیں دوبارہ جگانے کا عمل شروع کرنے کے لیے کام کرتے ہیں۔

جب آپ گاڑی نہیں چلا رہے ہوتے ہیں تو ان چھوٹی چھوٹی جھپکیوں سے زیادہ فرق نہیں پڑتا ہے، شاید کسی فلم یا ڈرامے کے چند سیکنڈ ضائع ہونے کا خطرہ ہوسکتا ہے۔

مسئلہ یہ ہے کہ جدید، تیز رفتار گاڑیوں کے ساتھ، دو سیکنڈ کی نیند ایک کار یا لاری کو اگلی لین میں گھسنے کے لیے کافی ہے، جو یقینا مہلک ثابت ہوسکتی ہے۔ لہٰذا، جب ہم گاڑی چلا رہے ہوتے ہیں تو ہم کسی بھی غیر منصوبہ بند نیند کا خطرہ مول نہیں لے سکتے ہیں، چاہے وہ کتنے ہی وقتی کیوں نہ ہوں۔

جاپان میں ایک ٹرک کمپنی کے اندر کی گئی حالیہ تحقیق، جس میں تقریبا 15،000 ڈرائیور کام کرتے ہیں، سبق آموز ہے۔ سائنسدانوں نے اپنے 52 پیشہ ور ڈرائیوروں سے ڈیش کیم فوٹیج کا تجزیہ کیا جو سونے کے بعد تصادم میں ملوث تھے۔

sleep

ویڈیوز سے پتہ چلتا ہے کہ ان میں سے تین چوتھائی نے تصادم سے پہلے مائیکرو سلیپ کے آثار دکھائے تھے۔ ایک ڈرائیور کے لیے واقعات کا سلسلہ اس طرح چلتا تھا۔ حادثے سے ایک منٹ قبل انھوں نے تیزی سے پلکیں جھپکنا شروع کیں، حادثے سے 38 سیکنڈ قبل ان کے جسم نے حرکت کرنا بند کر دیا، اس کے بعد آہستہ آہستہ پلکیں جھپکنے لگیں اور پھر حادثے سے چار سیکنڈ قبل ان کی آنکھیں صرف دو سیکنڈ کے لیے بند رہیں۔ حادثے سے ایک سیکنڈ پہلے انھوں نے دوبارہ دروازہ کھولا، لیکن اس کے لئے کچھ کرنے کے لئے بہت دیر ہو چکی تھی اور ٹرک سڑک سے اُتر چکا تھا۔

ان ویڈیوز سے محققین نے یہ پیش گوئی کرنے کے طریقوں کی نشاندہی کی ہے کہ جلد ہی کوئی حادثہ پیش آئے گا، جسے ڈرائیور کو خبردار کرنے کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ جب وہ تھکاوٹ محسوس کرتے ہیں تو ڈرائیور ان کے چہرے یا جسم کو چھو کر جاگنے کی کوشش کرتے ہیں۔ مائیکرو سلیپ ہونے سے پہلے وہ پھیل سکتے ہیں یا پریشان ہوسکتے ہیں۔ محققین کا کہنا ہے کہ ڈرائیور کے سر جھکانے والے کسی بھی خودکار نظام میں صرف آنکھیں بند کرنے سے کہیں زیادہ کچھ شامل ہے، بلکہ جسم میں وسیع تر حرکات و سکنات کو دیکھتا ہے۔

اس دوران ڈرائیورز کے طور پر، ہمیں اس بات سے آگاہ رہنے کی ضرورت ہے کہ ہم نیند محسوس کر رہے ہیں، جو اس سے کہیں زیادہ مشکل ہے کیونکہ ہم ہمیشہ یہ پتہ نہیں لگاتے کہ ہم نے ایک سیکنڈ کے لیے سر ہلایا ہے۔ اور اگر ہم جانتے ہیں کہ ہم تھک چکے ہیں، تو صرف توجہ مرکوز کرنے کی سخت کوشش کرنا ہمیشہ کافی نہیں ہوتا ہے۔

نیند کے بارے میں تحقیق کرنے والے جم ہورن نے اپنی کتاب ’سلیپ فارنگ: اے جرنی تھرو دی سائنس آف سلیپ‘ میں لکھا ہے کہ اس کا ثبوت دوسری عالمی جنگ کے دوران بمباری کے بعد انگلینڈ لوٹنے والے ہوا بازوں کی ہلاکتوں سے ملتا ہے۔ فضا میں دشمن سے ہونے والی لڑائی کا خوف، توجہ، جیتنے کی کوششیں، اور ایڈرینالین نے انھیں بیدار رکھا، چاہے وہ کتنے ہی تھکے ہوئے کیوں نہ ہوں۔ لیکن جب گھر جاتے ہوئے کوئی خلل نہیں پڑا تو کچھ پائلٹ ایسے بھی تھے جو سونے کی ضرورت پر قابو پا گئے اور اس کے نتیجے میں ان کے طیارے گر کر تباہ ہو گئے۔

قوتِ ارادی اس وقت بھی کافی نہیں ہے جب آپ جانتے ہیں کہ یہ آپ کو زندہ رکھے گا، طویل ڈرائیو پر ہمیں اس مشورے پر دھیان دینے کی ضرورت ہے کہ جیسے ہی آپ تھکاوٹ محسوس کریں، کافی پیئیں، نیند لیں، اور پھر ڈرائیونگ جاری رکھنے سے پہلے مکمل طور پر بیدار ہونے تک کچھ وقت انتظار کریں۔

انسانوں کے لیے، چنسٹریپ پینگوئن کے برعکس، مائیکروسلیپس رات کی مناسب نیند کا متبادل نہیں ہیں۔ اگر وہ بہت کثرت سے ہوتے ہیں، تو اس کا مطلب یہ ہوسکتا ہے کہ ہمیں کافی نیند نہیں مل رہی۔ لیکن جب ہم ڈرائیونگ نہیں کر رہے ہیں یا کچھ اور نہیں کر رہے ہیں جہاں توجہ بہت ضروری ہے، تو شاید ہمیں یہاں اور وہاں چند سیکنڈ کی اضافی شٹ آئی کے بارے میں فکر مند نہیں ہونا چاہیے۔


Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 31961 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments