مستونگ میں 200 افراد کو شہید کرنے والے خودکش بمبار کا نام حافظ نواز اور تعلق داعش سے تھا

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

سینٹ کی قائمہ کمیٹی داخلہ میں سانحہ مستونگ کے حوالے سے بریفنگ دیتے ہوئے آئی جی بلوچستان نے مستونگ میں بلوچستان عوامی پارٹی کی کارنر میٹنگ میں خودکش حملہ کرنے والے شخص کی شناخت کا انکشاف کیا ہے۔ آئی جی بلوچستان نے سینٹ کی قائمہ کمیٹی داخلہ کو بتایا کہ مستونگ میں بلوچستان عوامی پارٹی کی کارنر میٹنگ میں خودکش حملہ کرنے والے بمبار کا نام حافظ نواز تھا اور وہ ایبٹ آباد سے سندھ گیا۔ جہاں اس کا کالعدم تنظیموں سے تعلق رہا۔ وہ لشکر جھنگوی کے بعد داعش میں شامل ہو گیا تھا۔

آئی جی بلوچستان نے بتایا کہ خودکش حملے کے پیچھے داعش تھی اور خودکش بمبار کے سہولت کاروں کو بھی گرفتار کر لیا گیا ہے جنہوں نے خودکش بمبار کو نہ صرف پناہ دی بلکہ خودکش حملے کیلئے بھی بھیجا۔ خودکش بمبار حافظ نواز کے سہولت کار حافظ نعیم اور مفتی حیدر تھے جو کہ داعش کے مقامی کمانڈر بھی ہیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •