کبھی ہم بھی خُوبصورت تھے

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

پاکستان اور ہم سب ہمیشہ سے ایسے نہیں تھے ، کبھی یہاں پر بھی پرندے ( سیاح ) موسموں کے حساب سے آتے تھے ، رہتے تھے انجوائے کرتے تھے اور پھر چلے جاتے ۔ پھر کبھی ہمارا کراچی ایسا بھی تھا جیسا آج دُبئی ہے ، دُنیا کی ہر پرواز وہاں آتی ہے ، رُکتی ہے اور اگلا پُڑاؤ کہاں ہوگا یہ دُبئی سے طے ہوتا ہے ۔

کبھی ہمارے ساحل بھی نیلگُوں پانیوں کے لئے مشہور تھے اور ہمارے کراچی کا معتدل موسم دُنیا بھر میں اپنی مِثال آپ تھا ۔ یہاں کی دُھوپ میں نرمی اور گرمی تو تھی ہی لیکن ایک مہمان نوازی اور جذبہ دوستی ایسا بھی تھا جِس کی نظیر کہیں اور نہیں مِلتی تھی وُہ جذبہ تو کہیں نہ کہیں اب بھی موجُود ہے لیکن وُہ نیلگوں پانی ہم نے برباد کردیئے ہیں ۔

افغان رُوس جنگ کیا ہماری تھی ؟ نہیں بالکل نہیں لیکن اُس نے افغانستان کا تو جو حشر کیا سو کیا ہم مُفت ( مُفت کا لفظ محاورتاً ہے ) میں مارے گئے ، ہمارے شہر اُجڑ گئے ، ہمارے ساحل ، پہاڑ اور وادیاں وحشت کی نظر ہو گئیں ۔

آج میری عُمر کے لوگ ، مُجھ سے پانچ سات بڑے اور دو چار سال چھوٹے شاید میری سمجھ سکیں ، ہمارے بڑوں نے تو وُہ پاکستان دیکھا ہُوا ہے ۔ لیکن ہماری نوجوان نسل جو پچیس سال سے آس پاس ہے اُس کو یہ بات بالکل نہیں سمجھ آنے والی کہ ہم نے کیا کھویا ہے ؟

زیادہ تر لوگ اِس کو ضیا الحق کا کارنامہ گردانتے ہیں لیکن یہ آدھا سچ ہے ، ضیا الحق سے بھی پہلے جب بُھٹو کو اِسلامی اتحادی تحاریک نے گُھٹنے ٹیکنے پر مجبُور کیا تو بُھٹو جیسا شخص بھی یہ دباؤ برداشت نہ کرسکا اور یُوں سیاست میں مُلا کا عمل دخل ہوا یا یُوں کہئیے طاقت نے مضبُوط جڑیں پکڑ لیں ۔

بات یہاں تک بھی رہتی تو شاید ٹھیک تھا ، ضیاالحق نے جِس شِدت پسندی اور مذہبی عدم برداشت کی بُنیادیں رکھیں ، جو نظامِ تعلیم ہمیں غیر مُسلموں سے نفرت کا سبق پڑھاتا رہا اُس میں واضح تبدیلی نہ مُحترمہ بے نظیر بُھٹو کے دو ادوار کرسکے نہ جناب میاں نواز شریف کے دو دو ادوار کرسکے ۔

آخری فوجی آمر جنرل مُشرف نے چند ایک اقدامات کئے ، پاکستان کا روشن چہرہ جِس پر دُھول اور مٹی پڑ چُکی تھی صاف کرنے کی کوشش کی ۔ لال مسجد کے شِدت پسندوں کا آپریشن ہو یا آزاد میڈیا کا قیام یہ سب دُرست سمت کی طرف پہلا قدم تھا لیکن مُشرف بھی اپنے اقتدار کو طُول دینے کے چکر میں غلطیوں پر غلطی کرتا گیا اور نتیجہ سب کے سامنے ہے ۔

دوبارہ تھوڑا سا ماضی کا سفر ، میں جب لڑکپن سے نوجوانی کی طرف بڑھ رہا تھا ، تب نازیہ حسن اور زوہیب حسن گانے بُہت بھاتے تھے ، کرکٹ ، ہاکی ، سُنو کر ، سکواش جیسی کھیلوں میں ہمارا شاندار نام تھا ۔ ہر شے اچھی لگتی تھی اور ابھی بربادی کہیں دُور تھی لیکن اب ۔۔۔۔۔

یہ کیسا سفر ہے ، کیسا آسیب ہے کہ حرکت تو ہورہی ہے لیکن سفر معکُوس ہے ۔ ہم کہاں سے چلے تھے اور کہاں آگئے ہیں ؟ دُنیا میں ترقی ہورہی ہے اور ہم دِن بدن پیچھے جارہے ہیں ( کم از کم ذہنی طور پر ) ۔

آج ہمارا تعلیم یافتہ ( ڈگری والا بندہ تعلیم یافتہ سمجھا جاتا ہے ) جوان جب یورپ پر تنقید کرتا ہے اگر اُسے کہا جائے کہ آپ تو کبھی وہاں نہیں گئے یا نہیں رہے تو وُہ کہتا ہے کہ انٹرنیٹ پر سب دستیاب ہے ۔ ہائے خُدا یہ سمجھ اور یہ عقل ۔

یعنی جِس مُعاشرے میں آپ رہے ہی نہیں جہاں آپ کبھی گئے ہی نہیں اُس کی اقدار اور معاشرتی تانے بانے آپ گُوگل سے سمجھیں گے ! کمال ہوگیا یہ تو ۔ آج کل ہمارے ہاں یورپ کی اقدار ، خاندانی نظام ، مذہبی اور چند دیگر پہلوؤں کا تقابل چل رہا ہے ۔ یہ ایک لمبی تفصیل ہے ، کوشش کروں گا کہ سٹیپ بائی سٹیپ اِن کو ڈسکس کیا جائے ۔ لیکن اُس سے پہلے چند ماضی کی باتیں اور یادیں تصاویر میں ، کہ کبھی ہم بھی خُوبصورت تھے ، کتابوں میں بسی خُوشبُو کی مانند ۔۔۔۔

کبھی ہم بھی خُوبصورت تھے ۔۔۔

A glance into Pakistan’s forgotten history and revisiting the contrary years …..

پاکستان کا جب معرضِ وُجود میں آنا واضح ہوگیا تو قائدِ اعظم مُحّمد علی جِناح نے تقسیمِ برِصغیر کے سرکاری اعلان پندرہ اگست 1947 سے چند دِن قبل یعنی گیارہ اگست 1947 کو پاکستان کے بارے میں اپنا وژن کُچھ یُوں بتایا تھا ،

“You are free. You are free to go to your temples, you are free to go to your mosques, or to any other place of worship in the State of Pakistan.”

“You may belong to any religion or caste or creed. That has nothing to do with the business of the state. We are starting with this fundamental principle that we are all citizens of one state… You will find that in due course of time, Hindus will cease to be Hindus and Muslims will cease to be Muslims, not in the religious sense … but in the political sense as citizens of the state.”

آپ کِسی بھی عقیدے ،مذہب یا فرقے سے تعلق رکھتے ہوں ریاست کا اِس سے کُچھ لینا دینا نہیں ۔ ہم اِسی بُنیادی اُصول کہ ہم سب ایک ہی ریاست کے شہری ہیں اپنا آغاز کررہے ہیں۔

ہندو محض ہندو یا مُسلمان محض مُسلمان نہیں رہیں گے میں مذہبی طور پر نہیں کہہ رہا کیونکہ کسی بھی شخص مذہبی عقیدہ ذاتی عقیدہ ہوتا ہے ، میں سیاسی ( ریاستی ) طور پر بات کررہا ہُوں ۔

اور یہ بات میں نہیں کررہا بلکہ بانی پاکستان کی بات ہے کہ وُہ کیسا پاکستان دیکھنا چاہتے تھے اور اُن کے ذہن میں پاکستان کے بارے میں کیسا خیال تھا ۔ لیکن بدقسمتی سے زندگی نے وفا نہ کی اور اُن کے انتقال کے بعد لیاقت علی خان اور پاکستان مُسلم لیگ کے چند دیگر رہنماؤں نے قرارداد مقاصد کے ذریعے مذہبی طبقے کو سیاست میں آنے کا ایک راستہ دے دیا ۔

( آگے چلنے سے پہلے یہ بھی جاننا ضروری ہے کہ قائد اعظم لیاقت علی خان کو ناپسند کرتے تھے اور اُنھیں اورچند دیگر کو کھوٹے سِکوں میں شُمار کرتے تھے ۔ ایک جگہ سٹینلے وولپرٹ اپنی کتاب جناح آف پاکستان میں لکھتا ہے کہ جب زیارت میں قائد شدید بیمار تھے تو لیاقت علی خان کابینہ کے چند دیگر ارکان کے ہمراہ اِن کی طبیعت پُوچھنے آئے تو اُن کے جانے کے بعد قائد نے فاطمہ جناح سے کہا کہ یہ دیکھنے آئے تھے کہ میں مزید کتنا زندہ رہ سکتا ہُوں ۔)

قرارداد مقاصد کا پہلا بُنیادی پہلو یا مقصد غالباً یہی تھا کہ آنیوالے وقت میں پاکستان بننے کا مقصد کیسے بیان کیا جائے ۔ جلد بازی کہہ لیں یا سُستی کہ اِس قراردادِ مقاصد نے سیاست اور طاقت کے ایوانوں میں مذہبی طبقے کا راستہ بنادیا ۔

لیاقت علی خان ، سردار عبدالرب نشتر وغیرہ کا اِسلام کو سمجھنا اور دیکھنا ، مولانا اُبوالاعلیٰ مُودودی اور جناب شبیر احمد عُثمانی اور ڈاکٹر اشتیاق حُسین قُریشی سے ظاہر ہے مُختلف تھا ۔لیاقت علی خان اور دیگر زُعماء کا خیال تھا کہ یہ ماڈرن انٹرپریٹیشن اِس مُلک میں ہمارے ہاتھ میں ہی رہے گی اور عام مُلا کی دست برد سے محفوظ ۔ لیکن ایسا نہ ہوسکا اور جلد ہی مذہبی طبقہ اپنا زور پکڑتا گیا ۔

لیاقت علی خان کے بارے میں حُسین حقانی اپنی کتاب میں واشنگٹن ہیرالڈ کو کوٹ کرتے ہُوئے لکھتے ہیں کہ امریکا کے اسسٹنٹ سیکریٹری آف سٹیٹ جارج میگھی پاکستان کے پہلے وزیرِ اعظم کی اِس بات سے بُہت مُتاثر تھے کہ وُہ ہارڈ ڈرنکس کو بغیر ہوش کھوئے پی سکتے تھے ۔

(اِس کے اثرات ابھی تک واضح نہیں ہُوئے تھے 1956 کا آئین معمولی اثر لئے ہُوئے تھااور 1962 کے آئین میں ایوب خان جیسا ڈکٹیٹر جو ایک سیکولر خیالات کا حامی تھا اُس کو بھی مذہبی طبقے کے آگے گُھٹنے ٹیکنے پڑے اور جمہوریہ پاکستان سے نام اِسلامی جمہوریہ رکھنا / تبدیل کرنا پڑا ۔اِس بعد بالاخر 1973 کا آئین ، موجودہ ایک واضح مذہبی رنگ اور چھاپ لیکر پاس ہُوا ۔ ایوب خان 1956 کے آئین کی منسُوخی کے بعد نئے آئین 1962 میں اِسلامی جمہوریہ پاکستان کا نام واپس جمہوریہ پاکستان رکھنا چاہتا تھا ۔)

اپریل 1953 میں مُنیر کمیشن رپورٹ کی فائنڈنگ میں بھی قرادادِ مقاصد کو تمام فساد کی جڑ اور آنیوالے وقت میں مزید خرابیوں کا قرار دیا گیا تھا لیکن کِسی نے پرواہ نہیں کی ۔

قرادادِ مقاصد ، مذہبی گروہ کا بڑھتا ہُوا اثر رُسوخ تقریباً دو عشروں تک واضح نہ ہوسکا ۔ یقیناً اِس کی ایک وجہ مشرقی پاکستان میں غیر مُسلم ( ہندوؤں ) اقلیت کی ایک بڑی تعداد بھی تھی کہ مذہبی اجارہ داری ابھی تک کہیں کُھل کر سامنے نہیں آسکی تھی ۔

اِس سب عرصے کے دوران بار بار سیاسی رہنماؤں اور بیوروکریسی کی اقتدار کی بندر بانٹ اور چھینا چھپٹی اور بعدازاں جنرل ایوب خان اور جنرل یحییٰ کی براہِ راست مُداخلت نے پاکستان کی نسبتاً نوزائیدہ ریاست کو ،ریاستی اداروں کو اور بالخُصوص جمہوریت کو کافی زیادہ کمزور اور بیک فُٹ پر لاکھڑا کیا تھا ۔

مُلک میں جب مسائل دِن بدن بڑھ رہے ہوں اور مُلک کی اکثریتی آبادی والا ونِگ یعنی مشرقی پاکستان میں آزادی کی تحاریک بھی سر اُٹھا رہی ہوں تو ایسے میں جو بھی غلط ہو جائے اُس کی اُمید کی جاسکتی تھی اور شومئی قسمت ایسا ہی کُچھ پاکستان کے ساتھ بھی ہُوا ۔

مشرقی پاکستان ( موجودہ بنگلہ دیش ) میں یہ نعرہ بُہت مشہور تھا کہ مغربی پاکستان بالخُصوص پنجاب میں اُن کی محنت ، خُون پسینہ اور پٹ سن کی کمائی سے عیاشیاں ہورہی ہیں ، ترقی ہورہی ہے نئی نئی سڑکیں بن رہی ہیں اور جانے کیا کیا ۔۔۔۔۔ یہ سب باتیں کتنی سچی اور کتنی غلط تھیں یہ الگ بحث ہے لیکن مشرقی پاکستان کے عوام میں نفرت دِن بدن بڑھ رہی تھی ۔اِس کو ابھی رہنے دیتے ہیں اور اِس بات تک محدُود رہتے ہیں کہ ہم ایک معتدل اور نسبتاً لبرل مُلک سے اِتنے شِدت پسند کیسے بنے ؟

پاکستان کی بھارت کے ساتھ کشیدگی پہلے دِن سے ہی تھی ، پھر مسلۂ کشمیر اور سرحدوں پر مسائل بھی اِسی پریشانی کا حصہ تھے ۔ 1965 میں ہونیوالی جنگ نے بھی پاکستان کی معشیت پر کاری ضرب ڈالی تھی اور یہ تب پہلا موقع تھا جب پُورے پاکستان میں اِس جنگ کی شِدت نہ صرف محسُوس کی گئی بلکہ اِس کا اثر سیاحت پر بھی نظر آنا شُروع ہوگیا تھا ۔

ابھی ہم بُھٹو کے دور تک نہیں پُہنچے جہاں سے اصل قصہ شُروع ہوتا ہے جِس کو ضیاالحق نے تباہی کی آخری نُکر تک کمال کامیابی اور مُنافقت سے ہمیں پُہنچا دیا ۔

اِس موضوع کو کنٹریری ائیرز آف پاکستان کے موضوع کے تحت بھی ڈسکس کیا گیا ہے ۔ خیر ، پاکستان کی تاریخ میں بڑے بڑے موڑ آئے جنہوں نے اِس مُلک کی تاریخ کا رُخ ہی موڑ دیا ۔ سُقوطِ ڈھاکہ کے بعد ہماری فوج کافی مایُوس اور بددِل تھی ، ایسے میں ذُولفقار علی بُھٹو شہید نے پاکستان کو سنبھالا ، قریباً نوے ہزار قیدی واپس لائے گئے ، نئی جمہوری حُکومت تشکیل دی ، 1973 کا نیا آئین دیا ۔

ظاہر ہے بُھٹو صاحب سے چند ایک سیاسی غلطیاں بھی ہُوئیں تھیں ، 1977 کے ضیاالحق مارشل سے پہلے ، مذہبی اور سیاسی جماعتوں کا گرینڈ الائینس بُھٹو صاحب کو بُہت کمزور کرچُکا تھا ۔ اپنے اقتدار کو بچانے کے لئے اُنہوں نے بُہت سارے مُطالبے بھی مانے لیکن سب بیکار گیا اور بالآخر پھانسی گھاٹ تک جاپُہنچے ۔

جب 1979 میں رُوس نے افغانستان پر چڑھائی کی تو امریکا کے لئے یہ ایک بہترین موقع تھا کہ ایک ملٹری ڈکٹیٹر جو پہلے ہی اپنے اقتدار کو ایک لمبی سیاہ رات کی طرح کھینچنا چاہتا کو ساتھ مِلا کر امریکن اسلحے ، ڈالر،سُعودی ریال ، ضیا کی چالاکیوں اور سادہ لوح پاکستانی نوجوانوں کو مذہبی جذباتیت کے ذریعے ایک جہاد پر تیار کرنے کے لئے جابجا جہادی تربیتی کیمپ بنائے گئے ۔ پُورے مُلک کو جہاد کی سبز یا لال بتی کے پیچھے لگا کر ایک جُنون کا شِکار بنادیا گیا ۔

اپنے مضامین کے مجموعہ کلچر اینڈ امپیرئلزم میں ایڈورڈ ودیع سعید ایک جگہ لکھتے ہیں کہ القائدہ اور اُسامہ بِن لادن کو امریکا یعنی سی آئی اے نے خُود تیار کیا تاکہ کمیونسٹ رُوس کو نیچا دِکھایا جاسکے ۔ یہ کمیونزم اور کیپٹلزم کی جنگ تھی جو پاکستان میں جہاد کے نام پر لوگوں کے بچے مروا دئے گئے کہ وُہ شہید ہورہے ہیں ۔

امریکا نے اپنے مفادات کی جنگ لڑی اور سعودیہ نے بھی اربوں ڈالرز اُن مدرسوں میں جھونکے جو کہ سُنی فرقے سے تعلق رکھتے تھے یُوں سعودیہ نے پاکستان کی مذہبی سیاست میں اپنا اثر و رسُوخ بُہت گہرا بنا لِیا ۔ جب تک 1988 میں ضیا الحق ایک ہوائی حادثے میں فوت ہُوئے ،اگلے سال رُوس نے اپنے فوجی دستے افغانستان سے واپس بُلا لئے اور امریکا نے فتح کا نعرہ لگاتے ہُوئے اپنا ہاتھ واپس کھینچ لِیا ۔

اب جو مہاجرین افغانستان سے پاکستان آئے تھے ، جو جہادی پاکستان سے افغانستان گئے ، خُود افغان طالبان ، مُلا عُمر ، اُسامہ بِن لادن وغیرہ اِن سب سے عملی طور اور غیر اعلانیہ طور پر امریکا نے اپنا دامن چُھڑا لِیا ۔

اب ہم تھے ، افغانستان کے مہاجرین ، اُن کی منشیات ، کلاشنکوف کلچر اور سب سے بڑھ کر اُن کا قبائلی رنگ میں رنگا ہُوا اِسلام ۔ جب یہ سب ہمارے معاشرے کے ساتھ مِکس ہُوا تو پہلے سے کمزور سوشل فیبرک اِس کا بوجھ سہہ نہ پائے اور پُورا معاشرتی ڈھانچہ جیسے ٹُوٹ کر رہ گیا ۔

ضیا الحق نے اپنے اقتدار کو طُول دینے کے لئے جو بیج بوئے تھے وُہ ہمارے معاشرے کی مذہبی رواداری اور معتدل مزا جی کے تابُوت میں آخری کیل تھے ۔ جو سلیبس میں تبدیلیاں اور مَن چاہا سبق اُس نے پڑھایا تھا آج دو نسلوں تک اُس کی شِدت محسُوس ہوتی ہے اور جانے کب تک ہوتی رہے گی ۔ ضیاالحق کے بعد آنیوالی لگاتار چار جمہوری حُکومتوں کی آپس میں باہمی چپقلش اور آرمی کی مُداخلت ہمیں سیدھے راستے پر نہ ڈال سکی اور نہ ہی اُن حُکومتوں میں ایسا کُچھ کرنے کی خواہش بھی تھی یا شاید اُن کے مدِ نظر کئی دیگر ‘ مسائل ‘ اہم رہے ہوں۔

جنرل پرویز کے دور میں تھوڑی توجہ دی گئی لیکن 9/11 کے بعد دُنیا کا رنگ ہی بدل گیا اور مُشرف بھی اپنے آمرانہ اقتدار کو طُول دینے کے چکر میں پڑ گیا ۔لہٰذا کُچھ بھی نہ ہوسکا اور آج مذہبی عُناصر ہمارے مُلک میں اب اِس قدر طاقتور ہوچُکے ہیں کہ واپسی کا سفر نامُمکن لگتا ہے ۔ تفصیل بُہت زیادہ ہے لیکن اب بس مزید اِس پر کیا لکھا جائے ۔

یہ سب غیر مُلکی اور غیر جانبدار مُلکی مُصنف اور مورخ یہی کہتے ہیں اگر آپ کا سچ اِس سے مُختلف ہے تو اِن سب حقائق کو جُھوٹ سمجھ کر اگنور کردیں ۔

نوٹ : یہ پوسٹ لکھنے کے لئے جو ریفرینسز استعمال کئے گئے ہیں وُہ یہ ہیں ، بحث برائے بحث کی بجائے ذرا خُود تحقیق کرنے کی زحمت کرلیں ۔ مقصد صرف قراردادِ مقاصد کو ڈسکس کرنا نہیں تھا بلکہ اِس سارے معاملے کا بیک گراؤنڈ ڈسکس کرنا ضروری تھا ۔

شُکریہ ۔

1 : Jinnah of Pakistan by Stanley Wolpert ,

2 : Constitutional and Political History of Pakistan by Hamid Khan , ( recommended by Jameel Jaami)

3 : Pakistan A Hard Country by Anatol Lieven , ( recommended by Jago Bhi )

4 : Murder of History by K.K. Aziz ( Help sought from Rana Hakim for some dates, like 15 August as an Independence Day etc . )

5 : Article from The Friday Times 14/03/2014 ( Historic Blunder by Shahzad Raza )

06 : Objective Resolution , the root of religious orthodoxy ( Dawn , 20/06/2010 )

07 : The Objective Resolution Lives on , Uzair Younus’s article in The Express Tribune dated 10/07/2014

08 : A History of Pakistan and its Origins by Christofe Jafferlot ( With thanks to Ali Jibran who gave me this book back ten years back )

9: Magnificent Delusions by Husain Haqqani ,

10 : Islam’s Fault Line Pakistan ( article in National Geographic September 2007 Issue )

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •