کرونا دنیا کو پھر جکڑنے لگا!

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے خبردار کیا ہے کہ امریکہ میں کورونا وائرس وبا کی صورتحال بہتر ہونے سے پہلے مزید خراب ہو سکتی ہے۔ امریکی صدر نے تمام امریکی شہریوں کو ماسک پہننے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ ’اس سے اثر پڑے گا۔‘ کہا جا رہا ہے کہ امریکی صدر کے معاونین نے ملک میں کورونا کے بڑھتے کیسز کے پیش نظر ڈونلڈ ٹرمپ کو اس بارے میں ایک نیا لہجہ اپنانے کا مشورہ دیا ہے۔ اگر تصور کیا جائے کہ کوویڈ 19 کی نئی لہر دنیا پرغالب آنے کے لئے بھرپور قوت کے ساتھ دوبارہ حملہ آور ہوگئی تو اس کا اجمالی تصور ہی کتنا خوفناک ہے۔

غیر ملکی تجارت اور سفر کم بلکہ ختم بھی ہو سکتا ہے۔ مقامی طور پر نقل و حمل میں بھی نمایاں کمی آ جائے گی۔ دنیا میں مصنوعات کی تیز تر تقسیم پر انحصار بڑھ جائے گا، جیسے کھانے کی اشیاء اور سامان کے متبادل کے حصے۔ عالمی، علاقائی اور قومی معیشت منجمد ہو جائے گی۔ وباکے ممکنہ عالمی رد عمل کے بارے میں انسانوں کے لئے ایک اہم سبق ہے۔ متعدی بیماریوں کے مقابلے میں نسبتاً کم اموات کے باعث بہت سارے ممالک کی آبادی پر وباکا زبردست منفی نفسیاتی اثر ہوگا۔

وباکے عالمی معیشت پر پڑنے والے اثرات سے چھٹکارا حاصل کرنے سے قبل کرونا کی نئی شکل کا حملہ سب کچھ دوبارہ برباد کر سکتا ہے، اس وبا کو چاہیں کوئی بھی نام دیں لیں لیکن اس کی تباہ کاری ہولناک ہوگی۔ کوریا یونیورسٹی کے جونگ واہ لی، اور آسٹریلیائی نیشنل یونیورسٹی کے واروک میککبن نے، ایشیا بحر الکاہل کے خطے پر چھ ماہ کی وبا کے معاشی اثرات کے بارے میں بھیانک تخمینہ لگایا کہ بڑے پیمانے پر انفیکشن اور معاشی تباہی حکومتوں کو غیر مستحکم کررہی ہے۔

وباسے موثر طریقے سے نمٹنے میں ناکامی کا الزام حکومتوں کو معذور کر سکتا ہے۔ بحران کے دوران دیکھا جانے والا خوف و ہراس کی سطح قابو سے باہر ہو سکتی ہے کیونکہ کئی مہینوں یہاں تک کہ برسوں تک بیماریاں اور اموات بڑھ سکتی ہیں۔ بدقسمتی سے، لوگ اکثر متعدی بیماریوں کے بحران کے بارے میں ابتدائی انتباہات سے لاتعلق رہتے ہیں۔ اگلی وبا سے مقابلے کی تیاری کے لئے دنیا کو کیا کرنا چاہیے؟ آسان جواب تو یہ دے دیا جاتا ہے کہ ”کہیں زیادہ کام کرنے کی ضرورت ہے“ ، لیکن عملی طور پر دنیا شاید ایک بڑے سانحے کا انتظار میں ہے۔

سائنس دان ابھی تک اس وبا کو کلی طور پر سمجھ ہی نہیں سکے کہ اس وبائی امراض کا مقابلہ کس طرح کریں کیونکہ دیکھا گیا ہے کہ جب بھی وبائی مراض آتے ہیں سائنس دان اس کی ویکسین بنانے میں جت تو جاتے ہیں، لیکن کامیابی فوری نہیں مل پاتی، کیونکہ اب بھی کئی ایسی لاعلاج بیماریاں ہیں جو دنیا کو وبائی امراض سے نجات دلانے میں ناکام ہیں۔ شاید کچھ ادویہ اثرات کو کم تو کردیتی ہیں لیکن معاشرے کے بہت ساری سطحوں کے اداروں کو ابھی بہت کچھ کرنے کی ضرورت ہے۔

اس امر کو کامل طور پر سمجھا جاچکا ہے کہ انسانی جسم کو متاثر کرنے والاوائرس جب ایک شخص سے دوسرے شخص میں منتقل ہونا شروع ہوتا ہے تو اس کا یہ سلسلہ تھمتا نہیں بلکہ ہر گزرتے برس کے ساتھ ایک نئے خطرے کو لے کر سامنے آتا ہے۔ یہ سلسلہ اس وقت تک جاری رہتا ہے جب تک وائرس نکلنے کا عمل دوبارہ شروع نہ ہو۔ ایک اندازے کے مطابق دنیا بھر میں 12 سے 36 ماہ تک جاری وبائی بیماری میں، معاملات اور اموات کی تعداد میں ڈرامائی اضافہ ہوجاتا ہے۔

وبائی امراض سے ایسا ردعمل پیدا ہوجاتا ہے جو راتوں رات دنیا کو بدل دیتا ہے۔ وبائی بیماری شروع ہونے کے بعد کئی مہینوں تک ویکسین دستیاب نہیں ہوتی جبکہ اینٹی ویرل دوائیوں کا بہت محدود ذخیرے کی موجود گی ہمیشہ کے لئے ناگزیر ہے۔ اس کے علاوہ، دنیا کے صرف چند مراعات یافتہ علاقوں میں ویکسین تیار کرنے کی سہولیات تک رسائی حاصل ہوتی ہے اس وبا کے تجزیے میں، نیشنل اکیڈمی آف سائنس کے انسٹی ٹیوٹ آف میڈیسن نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ ”نسبتاً علیٰ اموات کی شرح اموات وبا کے پھیلاؤ کی نشاندہی، بیماری کا نیا پن، اس کے عالمی پھیلاؤ کی رفتار، اور عوامی غیر یقینی صورتحال پر قابو پانے کی قابلیت کے بارے میں عوام کے لئے خطرے کا الارم ہے۔ اس خطرے کی گھنٹی بدلے میں، منفی طرز عمل کی وجہ بن سکتی ہے جس نے سب سے زیادہ ممالک کے سفری اور سیاحت کی صنعتوں کو معاشی دھچکا پہنچایا۔“

موجودہ صورتحال عالمی معیشت کی بحالی کے لئے کوئی ماڈل نہیں ہے اگر یہ تباہ ہو جاتی تو اصل میں عالمی انفرا اسٹرکچر کو نقصان پہنچے گا۔ صحت کی دیکھ بھال فراہم کرنے والے اور منظم نگہداشت کی تنظیمیں بھی کسی نئے وبائی امراض کے پھیلنے کے لئے تیار نہیں۔ ہنر مند صحت پیشہ ور افراد کی ضرورت بڑھ جائے گی۔ صحت کی دیکھ بھال کرنے والے اور عام لوگوں بھی وبا سے متاثر ہوتے رہیں گے۔ شاید اس سے بھی زیادہ شرح پر، خاص کر اگر ان کے پاس حفاظتی سامان تک رسائی نہ ہو۔ اگر ان کے پاس اس طرح کی بنیادی فراہمی کی کمی ہے تو یہ واضح نہیں ہے کہ کتنے پیشہ ور طبی عملہ خود کو زیادہ خطرے میں ڈالتے رہیں گے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ طبی رضاکاروں کو استعمال کرنے کے لئے سخت مزاحمت، کا سامنا ہوگا جسے و دور کرنے کی ضرورت ہوگی۔

کیا تباہی سے بچا جاسکتا ہے؟ جواب ”ہاں“ ہے۔ اگرچہ آنے والے وبائی امراض سے بچا نہیں جاسکتا، لیکن اس کے اثرات کو کافی حد تک کم کیا جاسکتا ہے۔ یہ اس بات پر منحصر ہے کہ جی۔ 8 کے سربراہوں سے لے کر مقامی عہدیداروں تک، دنیا کے قائدین اس کا جواب دینے کا فیصلہ کس طرح کرتے ہیں۔ انہیں معاشی، سلامتی اور صحت کے خطرے کو تسلیم کرنا چاہیے دنیا بھر میں وبا سے معاشی اثر ہر ایک کو کافی تکلیف پہنچاچکا ہے۔ مناسب طریقے سے تیار کرنے کے لئے درکار وسائل وسیع ہوں گے۔ لیکن انھیں سرمایہ کاری میں ناکامی کی لاگت کی روشنی میں غور کرنا چاہیے۔ یہ تاریخ کا ایک اہم نکتہ ہے۔ خدشہ ہے کہ کرونا دنیا کو ایک پھر جکڑسکتا ہے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply