G-7 ممالک میں گوگل، فیس بک اور ایمیزون سمیت ملٹی نیشنل کمپنیوں پر ٹیکس لگانے پر اتفاق

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  


UK chancellor Rishi Sunak (left)) talking to Canadian Finance Minister Chrystia Freeland (right) at the G7 meeting in London, 4 June 2021

Getty Images
برطانوی وزیرِ خزانہ رشی سونک نے کہا ہے کہ یہ معاہدہ ‘برطانوی ٹیکس دہندگان کے لیے ایک بہت بڑا تحفہ ہے’۔

برطانوی وزیرِ خزانہ رشی سثونک نے اعلان کیا ہے کہ ترقی یافتہ معیشتوں پر مشتمل جی سیون کہلانے والا گروپ ملٹی نیشنل کمپنیوں پر ٹیکس عائد کرنے کے ایک ‘تاریخی’ معاہدے پر متفق ہو گیا ہے۔

G-7 ممالک کے وزرائے خزانہ کے لندن میں ہونے والے اجلاس میں شرکا کم سے کم کارپوریٹ ٹیکس 15 فیصد کرنے کے اصول پر متفق ہو گئے ہیں۔

ایمیزون اور گُوگل جیسی بڑی ٹیکنالوجی کمپنیاں اس ٹیکس سے متاثر ہونے والوں میں شامل ہو سکتی ہیں۔

اس معاہدے کے نتیجے میں جو ٹیکس عائد ہو گا اُس کے نتیجے میں ان ممالک کی حکومتوں کو اربوں ڈالرز کی آمدنی ہو سکتی ہے جس سے وہ کووڈ-19 کی وبا کی وجہ سے اقتصادی بحران کے دوران لیے گئے حکومتی قرضوں کو واپس ادا کر سکتی ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

کیا ایپل کروڑوں کا ٹیکس کھاتا رہا؟

’ٹویوٹا امریکہ میں کاریں بنائے ورنہ بھاری ٹیکس دے‘

انگریزوں نے ہندوستان کو کل کتنا مالی نقصان پہنچایا؟

امریکہ، برطانیہ، فرانس، جرمنی، کینیڈا، اٹلی اور جاپان کے کے درمیان یہ طے پانے والا معاہدہ 20 دیگر امیر ممالک میں شمار کیے جانے والی معیشتوں کے اگلے ماہ کے اجلاس پر بھی ایک دباؤ پیدا کر دے گا کہ وہ بھی کثیرالاقوامی یا ملٹی نیشنل کمپنیوں ہر اسی قسم کا ٹیکس لگائیں۔

رشی سونک نے کہا کہ اس کارپوریٹ ٹیکس کے نظام کو اس طرح ترتیب دیا گیا ہے کہ عالمی کمپنیوں کو دنیا بھر میں ایک ہی انداز کا ٹیکس دینا پڑے۔

انھوں نے کہا کہ ‘کئی برسوں سے جاری بحث و مباحثے کے بعد G-7 کے وزرائے خزانہ عالمی سطح کے ٹیکس کے نظام کی اصلاح کرنے کے تاریخی معاہدے پر متفق ہوئے ہیں تا کہ اسے آج کے ڈیجیٹل دور کے مطابق از سرِ نو وضع کیا جا سکے۔’

عالمی ٹیکس میں تبدیلی کی کیوں ضرورت ہے؟

عالمی سطح پر کام کرنے والی ملٹی نیشنل کمپنیوں پر کارپوریٹ ٹیکس عائد کرنے کے معاملے پر حکومتیں کافی عرصے سے غور کرتی رہی ہیں کہ یہ ٹیکس کس طرح لگایا جائے اور کس طرح جمع کیا جائے۔

تاہم ایمیزون اور فیس بُک جیسی بڑی کمپنیوں کے فروغ پانے کے بعد یہ معاملہ اب بہت زیادہ اہمیت اختیار کر چکا ہے۔

اب تک ایسا ہو رہا ہے کہ یہ ملٹی نیشنل کمپنیاں اپنے مرکزی دفتر ایسے ممالک میں قائم کر لیتی ہیں جہاں کارپوریٹ ٹیکس کی شرح قدرے کم ہوتی ہے اور یہ اپنے منافعوں کا اعلان انہیں ممالک میں کرتے ہیں۔

کیونکہ ان ممالک میں ٹیکس کی شرح کم ہوتی ہے اس لیے یہ کمپنیاں کم ٹیکس ادا کرتی ہیں جبکہ ان کمپنیوں کا منافع کسی اور ملک میں بزنس کرنے سے حاصل ہوتا ہے۔ اس طرح کم ٹیکس ادا کرنا قانونی طور پر تو جائز ہے اور ایسی کمپنیاں عام طور پر ایسا ہی کر رہی ہیں۔

برطانوی وزیرِ خزانہ رشی سونک

BBC
برطانوی وزیرِ خزانہ رشی سونک نے کہا کہ اس کارپوریٹ ٹیکس کے نظام کو اس طرح ترتیب دیا گیا ہے کہ عالمی کمپنیوں کو دنیا بھر میں ایک ہی انداز کا ٹیکس دینا پڑے

اس معاہدے میں کیا طے پایا ہے؟

G-7 ممالک کے وزرائے خزانہ کے درمیان طے پانے والے معاہدے کا مقصد اسی کام کو دو طریقوں سے روکنا ہے۔

اول یہ کہ G-7 ممالک عالمی سطح پر ایک کم سے کم ٹیکس کی شرح قائم کرنا چاہتے ہیں تا کہ کہیں ایسا نہ ہو کہ ان کمپنیوں کو اپنے اپنے ملک میں لانے کے لیے کم سے کم ٹیکس کرنے کی دوڑ شروع ہو جائے۔

دوسرا یہ کہ اس معاہدے کے مطابق طے پانے والے اصول و ضوابط میں یہ طے ہو گا کہ یہ کمپنیاں بجائے اس کے ان ممالک میں ٹیکس ادا کریں جہاں یہ رجسٹرڈ ہیں، یہ ان ممالک میں ٹیکس ادا کریں گی جہاں یہ اپنی خدمات سرانجام دے رہی ہیں یا یہ اپنی مصنوعات فروخت کر رہی ہیں۔

اس معاہدے میں یہ بھی طے پایا ہے کہ جس ملک میں یہ کمپنیااں کاروبار کر رہی ہیں وہاں ان کے دس فیصد منافع پر ٹیکس عائد کیا جائے گا۔ اسے ’فرسٹ پلر‘ کا اصول کہا گیا ہے۔

G-7 کے اعلامیے کے مطابق اس کمپنی کے پہلے دس فیصد سے زیادہ بیس فیصد منافع کو جس ملک میں یہ کاروبار کر رہی ہے وہاں سے اُس ملک میں شمار کیا جائے گا جہاں پر یہ رجسٹرڈ ہے۔

اس معاہدے کی وجہ سے اگر کوئی کمپنی برطانیہ میں کاروبار کر ہی ہے تو یہ یہاں زیادہ ٹیکس ادا کرے گی جس سے سرکاری قرضوں کی واپس ادائیگی میں مدد ملے گی۔

معاہدے کے ’سیکنڈ پلر‘ کے مطابق، تمام ممالک 15 فیصد سے کم شرح کا ٹیکس عائد نہیں کریں گے۔

اب اس معاہدے پر G-20 ممالک کے وزرائے خزانہ اور ان کے مرکزی بینکوں کے سربراہوں کے اجلاس میں زیرِ بحث لایا جائے گا جو جولائی میں ہو رہا ہے۔

ری پبلک آف آئرلینڈ کے وزیرِ خزانہ، پاسچل ڈونوہو نے، جن کا ملک اس وقت ان کمپنیوں پر ساڑھے بارہ فیصد کارپوریٹ ٹیکس عائد کرتا ہے، کہا ہے کہ ’یہ سب کے مفاد میں ہے کہ ٹیکس کی پائیدار، زبردست اور برابر شرح پر اتفاق کیا جائے‘ لیکن اس میں چھوٹے اور بڑے ممالک اور ترقی پذیر اور ترقی یافتہ ممالک کے مفادات کا بھی برابر کی سطح پر خیال رکھا جائے۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

بی بی سی

بی بی سی اور 'ہم سب' کے درمیان باہمی اشتراک کے معاہدے کے تحت بی بی سی کے مضامین 'ہم سب' پر شائع کیے جاتے ہیں۔

british-broadcasting-corp has 19457 posts and counting.See all posts by british-broadcasting-corp