طالبان نے سیلون کے باہر خواتین ماڈلز کی تصاویر پر اسپرے کر دیا

طالبان نے سلون کے باہر خواتین ماڈلز کی تصاویر پر اسپرے کر دیا

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں طالبان جنگجوؤں کی جانب سے بیوٹی پارلرز کے باہر خواتین ماڈلز کے لگے پوسٹرز پر اسپرے کے ذریعے چہرے مٹا دیئے گئے ہیں۔

طالبان کے جنگجوؤں نے دِنوں میں تقریباً پورے افغانستان پر قبضہ کر لیا ہے، کابل شہر پر قبضے کے بعد افغانی طالبان کی جانب سے اپنے اقتدار کا اعلان بھی کیا جا چکا ہے جبکہ اب طالبان کی یہ مہم حکومت بنانے کے مراحل میں داخل ہو چکی ہے۔

ایسے میں افغانستان کے طالبان کی جانب سے نئی پالیسیز کا اعلان بھی کیا جا رہا ہے جبکہ آئے دن افغانستان میں صورتحال بدلتی نظر آ رہی ہے۔

آج سوشل میڈیا پر افغان طالبان کی نئی ویڈیوز وائرل ہو رہی ہیں جس میں انہیں متعدد سلون اور بیوٹی پارلرز کے باہر لگے پوسٹر پر خواتین ماڈلز کے چہروں پر اسپرے کرتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔ مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ پر زیر گردش ٹوئٹس میں دیکھا جا سکتا ہے کہ افغانی طالبان خواتین ماڈلز کی تصویریں اسپرے کے ذریعے مٹا رہے ہیں اور پوسٹر پر بنے خواتین کے چہروں کو مسخ کر رہے ہیں۔

ان ٹوئٹس میں ایک ٹوئٹ کابل شہر کی شاہراہِ نو سے لی گئی ہے جس میں طالبان کو ماڈلز کے پوسٹر کو سفید رنگ سے رنگتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔

واضح رہے کہ افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللّٰہ مجاہد کی جانب سے خواتین کے حقوق اور میڈیا کی آزادی سے متعلق اپنی پالیسی کا اعلان کیا گیا تھا۔

افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللّٰہ مجاہد کا خواتین سے متعلق گفتگو میں کہنا تھا کہ خواتین کے حقوق ایک سنجیدہ مسئلہ ہیں، ہم یقین دلاتے ہیں کہ اسلام کے دائرے کے اندر خواتین کو تمام حقوق فراہم کیے جائیں گے، خواتین اسلامی روایات کا خیال رکھتے ہوئے اپنی سرگرمیاں جاری رکھ سکتی ہیں۔

طالبان ترجمان کا یہ بھی کہنا تھا کہ خواتین کو شرعی حدود میں کام کی اجازت ہے، خواتین ہمارے معاشرے کا معزز حصہ ہیں۔

Comments - User is solely responsible for his/her words