مولانا فضل الرحمان کا کردار اتنا بھی جمہوریت پسند نہیں

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

فضل الرحمان بھی دوسروں کی طرح اسٹیبلشمنٹ کے کٹھ پتلی تھے۔ آج وہ صرف اپنی سیاسی بقا کی جنگ لڑ رہے ہیں کیونکہ پاکستان کے حقیقی طاقت ور بادشاہوں کی طرف سے ان سے کنارہ کشی کی جا رہی ہے۔

دنیا کی جیو سٹریٹیجک حرکیات بدل رہی ہیں۔

اسٹیبلشمنٹ اب ملاؤں کو گلے لگانے کی متحمل نہیں ہو سکتی، پاکستانی اسٹیبلشمنٹ طاقتور بین الاقوامی کھلاڑیوں کی جانچ پڑتال کی زد میں ہے اس کے علاوہ چین کے ساتھ ہماری نئی بلند ہوئی محبت بھی امریکہ کو پریشان کر رہی ہے۔

ہم اب بلف نہیں کھیل سکتے، لہذا ہم اس کبھی نہ ختم ہونے والی گرے فیٹف سزا کی فہرست میں شامل ہیں۔ امریکی امداد میں کٹوتی کے پاکستان کی فوجی معیشت پر سنگین اثرات مرتب ہوئے۔

اسٹریٹجک گہرائی میں انقلابی تبدیلیاں آ رہی ہیں، پاکستانی اسٹیبلشمنٹ انتہا پسند اسلامی جماعتوں کے ساتھ اتحاد نہیں کرنا چاہتی، اس لیے انہوں نے ملا فضل الرحمان کو چلتی بس کے نیچے پھینک دیا ہے

اب اسٹیبلشمنٹ کے پی کے میں جے یو آئی ایف سے زیادہ معتدل اور نفیس پی ٹی آئی کی حمایت اور انتخاب کر رہی ہے، کھیل وہی ہے اور سیاسی گھوڑوں کی تبدیلی ہے۔

منظور پشتین کے خلاف پی ٹی آئی بہتر مقابلہ کر سکتی ہے، کیونکہ اس میں پڑھے لکھے پشتون متوسط طبقے کو راغب کرنے کی صلاحیت ہے جو کہ منظور پشتین کے دیوانے پرستار ہیں۔ مدرسہ کے طلباء اور فضل الرحمان کے لیے یہ ناممکن کام ہے۔ منظور پشتین اس مرحلے پر پاکستانی اسٹیبلشمنٹ کی بالادستی کے لیے سب سے بڑا خطرہ ہے۔

یاد رہے کہ ملا فضل الرحمان گزشتہ 20 سال سے اقتدار میں تھے کیونکہ اسٹیبلشمنٹ انہیں اقتدار میں رکھنا چاہتی تھی۔ اسٹیبلشمنٹ اسے پشتون قوم پرست (اے این پی) کے خلاف سہارا دینا چاہتی تھی۔ نیز انہیں افغان جنگ میں حصہ لینے کے لیے مدرسہ سے فارغ التحصیل افراد کی ضرورت تھی۔

وہ عظیم موقع پرست ملا اور سیاست دان ہیں، انہوں نے کبھی بھی پشیمانی کا اظہار نہیں کیا، جب 9 / 11 کے بعد ان کے مذہبی پیروکار نان نیٹو فرنٹ اتحادی مشرف کے غصے میں پیس رہے تھے۔ احتجاج کرنے کے بجائے

وہ پاکستان کے سب سے ہنگامہ خیز صوبے میں ڈکٹیٹر مشرف کا بہترین سہولت کار تھا۔ تب اسٹیبلشمنٹ قوم پرستوں کے خلاف مذہب کا کارڈ کھیل رہی تھی۔

ملا فضل الرحمان ایک ذہین آدمی ہے، وہ جانتا ہے کہ اس کے لیے کھیل ختم ہو گیا ہے، وہ اپنے لیے کچھ مواقع پیدا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں، اس لیے وہ واپس لڑ رہے ہیں، انھوں نے ماضی میں کبھی جمہوریت کے لیے نہیں لڑا۔

اب بھی اسٹیبلشمنٹ ان کی پارٹی کو بلوچستان میں طاقت اور کیک کا ایک چھوٹا سا حصہ دے سکتی ہے، جہاں انہیں بلوچ علیحدگی پسند تحریک کو کمزور کرنے کے لیے مذہبی شناخت اور پالیسی کو بین النسلی اتحاد کی دوا سمجھا جاتا ہے۔ جے یو آئی (ف) کے لیے بلوچستان میں موقع کی صرف ایک چھوٹی سی کھڑکی اب بھی کھلی ہے۔

کیا آپ واقعی سمجھتے ہیں کہ ملا فضل الرحمان اسٹیبلشمنٹ کی حمایت کے بغیر پچھلے 20 سالوں سے اقتدار کے مزے لوٹ رہے تھے؟


  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Facebook Comments - Accept Cookies to Enable FB Comments (See Footer).

ڈاکٹر محمد سرفراز، آسٹریلیا کی دیگر تحریریں
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments (Email address is not required)
Inline Feedbacks
View all comments