کاغذی تصویر حرام ہے، ڈیجیٹل تصویر حلال اور مولوی کنفیوز

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  • 135
  •  

بے شمار ٹی وی چینل آنے سے پہلے ٹی وی اور تصویر بالاتفاق حرام قرار دیے جاتے تھے۔ جب ویڈیو کے فوائد دکھائی دیے تو بعض گوشوں سے یہ رائے آنے لگی کہ تصویر تو حرام ہے لیکن ویڈیو جائز ہے۔ پھر جب موبائل کیمرے والے فون ہر ایک کے ہاتھ میں پہنچ گئے تو اب بہت بڑی تعداد میں یہ رائے دی جانے لگی کہ کاغذ پر چھپی ہوئی تصویر حرام ہے لیکن ڈیجیٹل تصویر جائز۔ گو کاغذ پر چھپی تصویر کی حرمت کے بارے میں بھی بعضے اختلاف کرتے ہیں کہ فوٹوگراف تو عکس ہے اس لئے جائز ہے، صرف پینسل یا برش وغیرہ سے کھینچا ہوا سکیچ حرام ہے۔

دارالعلوم دیوبند کا دار الافتا تو واشگاف الفاظ میں کہتا ہے کہ ”جاندار کی تصویر کشی اور اس کی ویڈیوگرافی چاہے کسی بھی طریقے سے اور کتنے ہی ترقی یافتہ آلے سے ہو حرام ہے، اس کا پرنٹ بھی اسی حکم میں ہے“۔

جامعۃ العلوم الاسلامیہ، بنوری ٹاؤن والوں کا فتوی ہے کہ ”کسی بھی جاندار کی تصویر کھینچنا یا بنانا، چاہے اس کھینچنے یا بنانے کے لیے کوئی سا آلہ استعمال کیا جائے، ناجائز اور حرام ہے۔ اہل علم و اہل فتوی کی ایک بڑی تعداد کی تحقیق کے مطابق تصویر کے جواز وعدم جواز کے بارےمیں ڈیجیٹل اور غیر ڈیجیٹل کی تقسیم شرعی نقطہ نظر سے ناقابل اعتبار ہے۔ الیکٹرنک آلہ بند کرنے سے تصویر تحلیل ہوجاتی ہے مگر مواد موجود رہتا ہے اور کمانڈ دینے سے پھر آ موجود ہوتا ہے، پس جب اصل غلط ہے تو اس کا مواد محفوظ رکھنا بھی غلط ہے۔ “

چلیں ان کا موقف تو واضح ہو گیا کہ چاہے تصویر کاغذی ہو یا ڈیجیٹل، یکساں حرام ہے۔ لیکن ان کا معاملہ دلچسپ ہے جو کہتے ہیں کہ چھپی ہوئی تصویر حرام ہے لیکن ڈیجیٹل حلال۔ یعنی اگر آپ اپنے موبائل سے تصویر کھینچ لیں اور اس کو موبائل یا کمپیوٹر پر دیکھتے رہیں یا اس کا وال پیپر بنا لیں تو خیر ہے۔ لیکن اسے پرنٹ کر لیں تو وہ حرام ہو جاتی ہے۔

اس معاملے پر ایک موقف کچھ یوں ہے کہ یہ سکرین پر پائیدار نہیں ہوتی۔ جب تک کرنٹ برقرار ہے دکھائی دے گی۔ اور وہ بھی کیتھوڈ رے کی صورت میں 50 ہرٹز کی رفتار سے بار بار پینٹ کی جاتی ہے اور ایل ای ڈی کی سکرین 300 ہرٹز کی سپیڈ سے۔ اس لئے ڈیجیٹل تصویر پائیدار نقش نہیں ہوتی اور جائز ہے۔ ایک وضاحت یہ بھی کی جاتی ہے کہ اول ڈیجیٹل تصویر کا کوئی وجود نہیں ہوتا بلکہ یہ روشنیوں کے اجتماع سے آنکھوں کا دھوکہ ہوتی ہے۔ اگر کسی چیز کا وجود ہی نہ ہو تو اس پر کوئی تعریف بھی صادق نہیں آ سکتی۔

یہاں اب ناپائیداری والی دلیل ٹیکنالوجی سے ٹکرانے کو تیار ہے۔ اگر ہم کہیں کہ ڈیجیٹل تصویر مستقل نہیں ہوتی بلکہ بار بار ریفریش کر کے دکھائی دیتی ہے، تو سوال پیدا ہوتا ہے کہ وہ کیا ریفریش ریٹ ہو گا جس کے بعد تصویر پائیدار قرار پائے گی؟ ایک سیکنڈ میں 50 ہرٹز کا ریفریش ریٹ تو چلو ناپائیدار قرار پا گیا کہ اس سے کم میں تصویر مٹنے لگتی ہے۔ اگر ایک سکرین ایسی ہو کہ جس پر ایک مرتبہ ریفریش کرنے کے ایک گھنٹے بعد وہ مٹنے لگے تو کیا وہ پائیدار کہلائے گی یا ناپائیدار؟ اسی طرح اگر ایک سکرین ایسی ہو جو ایک مرتبہ پینٹ ہونے کے ایک ہفتے یا مہینے بعد ختم ہو تو کیا وہ ناپائیدار ہو گی یا پائیدار؟ یا پھر ایک ایل سی ڈی پر ہم مستقل ایک ہی تصویر سال بھر دکھاتے رہیں تو اس کا کیا حکم ہے؟

ٹیکنالوجی اب ہمیں ڈیجیٹل کاغذ کی طرف لے جا رہی ہے۔ یہ ایک عام کاغذ جیسی موٹائی والی پلاسٹک کی شیٹ ہوتی ہے جس پر ویسے ہی سکرین ڈسپلے آتا ہے جیسے ہمارے کمپیوٹر یا ٹی وی یا موبائل کی سکرین پر آتا ہے۔ یہ ٹیکنالوجی تقریباً پندرہ برس پرانی ہے اور اب اتنی سستی اور ایڈوانس ہو چکی ہے کہ کمرشل پیمانے پر اسے بنایا جا سکے۔ سنہ 2016 میں کمپنی ایل جی نے ایک 18 انچ کی سکرین والا ایسا ٹی وی کا نمونہ پیش کیا تھا جو اخبار کی طرح رول کیا جا سکتا تھا۔

سیمنگ کا کاغذی سکرین والا فون

سیمسنگ ایسا موبائل کا نمونہ بنا کر پیش کر چکا ہے ہے جو ماچس کی ایک ڈبیہ جتنا ہے۔ اس کے اندر کاغذ جتنی موٹائل والی سکرین رول کی ہوئی پڑی ہوتی ہے۔ اسے کھینچے اور پھیلا کر دیکھ لیں۔ ان سب کو تصویر برقرار رکھنے کے لئے مسلسل برقی توانائی کی ضرورت ہوتی ہے۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ عام کاغذ ختم ہو جائیں گے۔ اگلے دس بیس برس بعد سب کے ہاتھوں میں ایک ایسی ہی ماچس کی ڈبیا ہو گی جس پر وہ کسی وقت بھی اپنی لاکھوں کتابوں کی لائبریری میں سے کوئی کتاب بھی کھول کر پڑھ سکیں گے، یا کوئی تصویر بھی دیکھ سکیں گے۔ یا پھر ایک ایسی کاپی سب کے ہاتھ میں ہو گی جس میں صرف ایک ورق ہو گا۔ ایک بٹن دبانے پر اس ایک ورق پر ہماری مطلوبہ کتاب کا صفحہ ویسے ہی نمودار ہو جائے گا جیسے طلسم ہوشربا میں کتاب سامری کے سادہ ورق پر ہوا کرتا تھا۔

ای-انک سکرین والا امیزون کنڈل ای بک ریڈر

لیکن ان سے سے زیادہ دلچسپ وہ ٹیکنالوجی ہے جسے ای۔ انک کہا جاتا ہے۔ اس قسم کی سکرین کو ای بک ریڈرز میں کئی برس سے استعمال کیا جا رہا ہے۔ اس میں سکرین کے نیچے مقناطیسی اجزا موجود ہوتے ہیں۔ سکرین پر تصویر یا تحریر بنانے کے لئے ایک مخصوص چارج اس میں سے گزارا جاتا ہے۔ مقناطیسی اجزا مخصوص ترتیب میں اچھل کر سکرین پر چسپاں ہو جاتے ہیں۔ اس کے بعد تصویر کرنٹ کی ضرورت سے بے نیاز ہو کر برقرار رہتی ہے اور اسے ریفریش کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی۔ جب پیج بدلنے کا بٹن دبایا جاتا ہے، یا آپریٹنگ سافٹ وئیر مختلف تصویر پینٹ کرنا چاہتا ہو، تو کرنٹ کی ایک نئی لہر دوڑا کر تصویر بدل دی جاتی ہے۔ میرے ایک ای بک ریڈر پر ایسی ایک تصویر ایک سال بعد بھی موجود تھی حالانکہ بیٹری کب کی ختم ہو چکی تھی۔ اب یہ ای۔ انک والی سکرین پائیدار نقش کہلائے گی یا ناپائیدار؟ ممکن ہے کہ سال دو سال بعد اس کی تصویر ختم ہو جائے۔ ممکن ہے کہ سو برس بعد ہو۔

نہایت باریک ای-پیپر۔ اسے موڑیں فولڈ کریں یہ ایک صفحہ آپ کی لاکھوں کتابوں کی لائبریری میں سے کچھ بھی دکھا سکتا ہے۔

پھر ایک نئی ٹیکنالوجی اور بھی ہے۔ وہ ہے ہولوگرام کی۔ بغیر سکرین کے ہوا میں ہی تصویر بنا دی جاتی ہے۔ اب کیا وہ حلال قرار پائے گی یا حرام؟ اگر کاغذ پر بنی تصویر حرام ہے اور سکرین پر بنی جائز، تو پھر یہی معاملہ سمجھ آتا ہے کہ اعتراض تصویر پر نہیں ہے، اسے بنانے کی ٹیکنالوجی پر ہے۔ جب سکرین ہی کاغذ بن جائے گی تو پھر کیا حکم ہو گا؟

ہم جو بھی کہیں لیکن ڈیجیٹل تصویر سے مفر ممکن نہیں۔ بہت جلد ہماری ہر کتاب اسی سکرین پر ملے گی۔ ہماری ہر تصویر اسی پر آئے گی۔ ہم سفر کرنے اور ایک دوسرے سے بات کرنے کے لئے اس سکرین کے محتاج ہوں گے۔ ہمارے سکولوں میں اس کا استعمال ہو گا۔ ہم اسے حرام کریں گے، تو جدید علم اور ٹیکنالوجی کو خود پر حرام کر بیٹھیں گے۔ سنہ 2010 میں دنیا کے سب سے بڑے کتاب فروش امیزون نے یہ اعلان کیا تھا کہ اس نے ہر سو کاغذی کتابوں کے مقابلے میں 105 ای۔ بکس بیچی ہیں۔

بٹوے میں سما جانے والا ایک کاغذی سکرین والا موبائل فون

اب تصویر کو جائز قرار دینے کے لئے یا تو ویسے ہی ”مجبوری“ والی تاویلات پیش کی جائیں جیسی کرنسی نوٹ اور پاسپورٹ وغیرہ کے معاملے میں پیش کی جاتی ہیں، یا مان لیا جائے کہ تصویر کی حرمت کا مقصد صرف یہ تھا کہ پرانے زمانے میں اسے عبادت کے لئے استعمال کیا جاتا تھا۔ مقصد عبادت نہ ہو تو پھر اسے جائز مان لینا چاہیے۔ دوسری صورت میں مولوی حضرات کو اپنے سمارٹ فونز اور ٹی وی چینلز سے دستبردار ہونا پڑے گا جو ناممکن دکھائی دیتا ہے۔ سائنس اور ٹیکنالوجی نے ہمیشہ خود کو حلال ہی قرار دلوایا ہے۔ خواہ زمین کے گول ہونے کا معاملہ ہو، پرنٹنگ پریس کا، انگریزی تعلیم کا، لاوڈ سپیکر کا، ٹی وی کا یا کمپیوٹر کا۔
ختم شد۔

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  • 135
  •  

اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں

عدنان خان کاکڑ

عدنان خان کاکڑ سنجیدہ طنز لکھنا پسند کرتے ہیں۔ کبھی کبھار مزاح پر بھی ہاتھ صاف کر جاتے ہیں۔ شاذ و نادر کوئی ایسی تحریر بھی لکھ جاتے ہیں جس میں ان کے الفاظ کا وہی مطلب ہوتا ہے جو پہلی نظر میں دکھائی دے رہا ہوتا ہے۔

adnan-khan-kakar has 1108 posts and counting.See all posts by adnan-khan-kakar