بھارتی اداکارہ بدیتا باگ کا کشمیری عورتوں کے بارے میں بے ہودہ ریمارکس کرنے والوں کو زبردست جواب

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اداکارہ بدیتا باگ نے بھارتیوں پر طنز کرتے ہوئے کہا ”جن کی ایک کشمیری سیب خریدنے کی اوقات نہیں، وہ بھی چلے ہیں کشمیری لڑکیوں سے شادی کرنے“ فلم ’بابو ماشی بندوق باز‘ سے شہرت حاصل کرنے والی اداکارہ کو اس طنز بھرے ٹویٹ پر غدار قرار دے دیا گیا

اس وقت مقبوضہ کشمیر میں آرٹیکل 370 کے حوالے سے کشمیری سراپا احتجاج بنے ہوئے ہیں۔ آرٹیکل 370 ختم کرنے ک بعد بھارتی شہریوں کو یہ حق مِل گیا ہے کہ وہ وہاں جائیداد خرید سکتے ہیں اور ملازمت بھی کر سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ وہ مقبوضہ کشمیر کی خواتین سے شادی کے علاوہ وہاں رہائش بھی اختیار کر سکیں گے۔ اس فیصلے کے بعد بھارت میں بہت سے انتہا پسند افراد نے سوشل میڈیا پر دل آزاری پر مبنی ایسی پوسٹس اور ویڈیوز شیئر کی ہیں، جن میں انڈین شہری یہ کہتے نظر آ رہے تھے کہ اب وہ کشمیری خواتین سے شادیاں کریں گے۔

تاہم بھارتی اداکارہ بدیتا باگ نے ایسے بدتہذیب لوگوں کو ایسا جواب دیا ہے کہ ہر طرف شور مچ گیا ہے۔ ’بابو موشی بندوق باز‘ جیسی فلموں میں اداکاری کرنے والی 27 سالہ اداکارہ بدیتا باگ نے کشمیری لڑکیوں سے شادی کی خواہش رکھنے والے افراد کو اپنے ایک ٹویٹ میں طنز کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ” ان کی کشمیری سیب خریدنے کی اوقات نہیں اور چلے ہیں کشمیری لڑکیوں سے شادی کرنے۔“

جب اس ٹویٹ پر تنگ نظر افراد کی جانب سے سخت ردِ عمل آیا تو اداکارہ نے ایک نیا ٹویٹ کردیا۔ جس میں اس نے لکھا ”ایک کشمیری سیب کا ریٹ سُن کر ایک درجن کیلے خریدنے والو! میرے ٹویٹ سے تم لوگوں کو کشمیری مرچی لگ گئی کیا؟ مجھے ٹرول مت کرو۔“

اس ٹویٹ نے جلتی پر تیل کا کام کیا ہے۔ لوگوں کی بڑی تعداد نے اداکارہ کو کشمیریوں کے حق میں بیان دینے پر غدار لا لقب دیا ہے۔ واضح رہے کہ بھارتی شوبز کی چند دیگر شخصیات نے بھی کشمیری خواتین کے بارے میں نامناسب زبان استعمال کرنے پر بھارتی نوجوانوں کو ’اوقات سے گرے ہوئے لوگ‘ قرار دیا تھا۔

Comments - User is solely responsible for his/her words

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •